Essay On Anti Corruption In Urdu

بدعنوانی پر ایک مضمون

بدعنوانی کا مطلب

بدعنوانی کا تعلق اخلاقیات سے ہے۔ بدعنوانی کا مطلب برا یا خرابی ہے اور طرز عمل کا مطلب اخلاق ہے۔ یعنی بدعنوانی کا لغوی معنی وہ طرز عمل ہے جو کسی بھی طرح سے غیر اخلاقی اور نامناسب ہو۔ جب کوئی شخص اپنے مفاداتی مفاد کو پورا کرنے کے لئے عدالتی نظام کے منظور شدہ اصولوں کے خلاف جاتا ہے اور غلط طرز عمل کا استعمال کرتا ہے تو اس شخص کو بدعنوان کہا جاتا ہے۔ آج ہندوستان جیسے سونے کی چڑیا کہلانے والے ملک میں بدعنوانی کی جڑیں پھیل رہی ہیں۔

بدعنوانی ایک بیماری کی طرح ہے۔ آج بھارت میں بدعنوانی میں تیزی سے اضافہ ہو رہا ہے۔ اس کی جڑیں تیزی سے پھیل رہی ہیں۔ اگر اس کو بروقت نہ روکا گیا تو یہ پورے ملک کو اپنی لپیٹ میں لے لیگی۔

بدعنوانی کا اثر بہت وسیع ہے۔ زندگی کا کوئی شعبہ اس کے اثرات سے پاک نہیں ہے۔ اگر ہم اس سال کے بارے میں بات کریں تو ایسی بہت سی مثالیں ہیں جو بدعنوانی کے بڑھتے ہوئے اثر کو ظاہر کرتی ہیں۔ آئی-پی-ایل میں کھلاڑیوں کی اسپاٹ فکسنگ جیسے بہت سے لوگ نوکریوں میں اچھی آسامیاں حاصل کرنے کی خواہش میں رشوت دینے سے بھی گریز نہیں کرتے ہیں۔ آج ہندوستان کا ہر طبقہ اس مرض میں مبتلا ہے۔ ہندوستان میں ایسے بہت سے لوگ ہیں جو اس بدعنوانی کے مرض میں گرفتار ہیں۔ بدعنوانی کے معاملے میں آج ہندوستان دنیا میں 94 ویں نمبر پر ہے۔ بدعنوانی کی بہت ساری قسمیں ہیں جیسے رشوت ، بلیک مارکیٹنگ ، جان بوجھ کر قیمتوں میں اضافہ ، رقم سے کام کرنا ، سستا سامان لانا اور مہنگا بیچنا وغیرہ۔

بدعنوانی کی وجوہات

بدعنوانی کی بہت ساری وجوہات ہیں۔ جیسے عدم اطمینان۔ جب کوئی کمی کی وجہ سے تکلیف میں مبتلا ہوتا ہے تو وہ بدعنوانی کرنے پر مجبور ہوتا ہے۔ عدم مساوات، خود غرضی اور ضمیر فروشی کی وجہ سے بھی انسان خود کو کرپٹ کر لیتا ہے۔ کم ظرفی اور حسد کے شکار ہوئے لوگ بھی بدعنوانی کو اپنانے پر مجبور ہو جاتے ہے۔ نیز رشوت، اقربا پروری وغیرہ بدعنوانی کو جنم دیتے ہیں۔


بدعنوانی کی روک تھام کے لئے اقدامات


یہ ایک متعدی بیماری کی طرح ہے۔ معاشرے میں مختلف سطحوں پر پھیلنے والی بدعنوانی کو روکنے کے لئے سخت سزا دی جانی چاہئے۔ آج بدعنوانی کی صورتحال یہ ہے کہ اگر کوئی شخص رشوت کے معاملے میں پھنس گیا ہے تو وہ اُسی معاملے سے رشوت دے کر رہا ہو جاتا ہے۔ بدعنوانی ہمارے اخلاقی اقدار پر سب سے بڑا حملہ ہے۔ کرپشن میں ملوث افراد اپنی خود غرضی میں اندھے ہیں اور قوم کا نام بدنام کرتے ہیں۔

جب تک کہ اس جرم کو کڑی سزا نہ دی جائے، یہ بیماری پورے ملک کو دیمک کی طرح کھائے گی۔ لوگوں کو اپنے آپ میں ایمانداری پیدا کرنی ہوگی۔ نیک سلوک کے فوائد اگلی نسل کو پہنچانا ہونگے۔

لہذا یہ انتہائی ضروری ہے کہ ہم بدعنوانی کے اس زہریلے سانپ کو کچلیں۔ اسی کے ساتھ ہی حکومت کو بدعنوانی کے خاتمے کے لئے بھی موثر اقدامات اٹھانے ہونگے تاکہ ہم بدعنوانی جیسے ناپاک عمل سے ہندوستان کو بچا سکیں اور اپنے ملک ہندوستان کی ترقّی کے خواب کو پورا کر سکیں۔

Close