Advertisement

فادر ڈے منانا کیسا؟

باپ کا قد اپنی حیثیت میں نہیں بیٹے کی ذات میں ہوتا ہے۔

Advertisement

مجھ کو چھاؤں میں رکھا اور خود بھی وہ جلتا رہا
میں نے دیکھا اک فرشتہ باپ کی پرچھائی میں

Advertisement

ایک باپ اپنی اولاد سے جس قدر اخوت کا برتاؤ رکھتا ہے اس سے لفظوں کی تسبیح میں پرونا الموسٹ مشکل سمجھا جائے تو بھی اس احساس کا ادراک لگ بھگ مشکل ہوگا۔ دنیا کا ہر باپ اپنی اولاد میں تقسیم ہوکر قسطوں میں بٹتا اور ترتیب کے مدارج طے کرتا وحشتوں کے سارے دروازے کھولتا خود جس قدم پر گرتا ہے اولاد کے لئے ان مراحل کو آسانیوں میں دیکھنا کا خواہاں ہوتا ہے۔

Advertisement

ایک باپ اپنی محبت کے لئے اظہار کی دولت سے محروم ہی نہیں بالکل اپاہج ہوتا ہے۔ وہ یہ کوشش کرتا ہے کہ اس کا نرم رویہ کہیں اس کی اولاد کے مستقبل میں ان کی آسائشوں کی راہیں ہموار کرتے کرتے انہیں بگاڑ کے دہانے پر لے جاکر نہ پہنچا دے۔ باپ اس بات سے بھی خائف رہتا ہے بلکہ سنبھل کر چلتا ہے کہ اس کی کوئی سختی اولاد کی تربیت میں ان کی کمزوری نہ بن جائے۔ اپنے کردار میں باپ ایک شخص سمجھا جانا چاہیے جو زندگی بھر سارے مصائب کا بوجھ ڈھوتا سہتا اور اف تک کہنے کی جرأت سے بھی محروم اپنی آخری سانسں کے ساتھ الفاظ کی بالکل اختتامی شکل میں بھی کسی اولاد کا نام پکارتا ہے۔ وہ جس سرمایے کے ساتھ جن حالات میں خود پلا بڑھا وہ سب بھول بھلا کر صرف ایک باپ بننے میں کوشاں میں رہتا ہے۔

ایسے بھلے انسان کے لئے پھر کیا گنجائش رہ جاتی ہے کہ اولاد کے تئیں اس کی محبت کے زاویے طے کیے جائیں۔ وہ کون ہے جو یہ نہیں جانتا کہ ماں کی عظمت اس کی رفعت و سربلندی کے درجات تک کوئی دوسرا نہیں پہنچ پاتا لیکن یہ بھی سچ ہے کہ باپ کے قد اس کے ایثار اور خاموش محبت کا کوئی پیرامیٹر ہو ہی نہیں سکتا۔ جہاں والدین میں ماں کے درجات کی تحدید نہیں وہیں اولاد کے لئے باپ وہ سرمایہ ہے جس کی سانسوں کا قرض ادا کرنے کی گستاخی کا مرتکب ، نہ صرف بے وفا اور نامحروم سمجھا جانا چاہیے بلکہ ایسے ہر ایک فرد پر خود احتسابی کا عمل اس کے حلال ہونے کی صورت میں فرض سمجھا جانا چاہیے۔

Advertisement

زندگی کی خوشیاں اور محرومیاں بڑھانے والے تحرکات میں اولاد اگر والد کا سرمایہ ہوجاتے ہیں تو پھر کیا وجہ ہے کہ اولاد ان کی ایسی زندگی میں صرف محرومیوں کے در واہ کرتے ہیں۔ در اصل یہ ایک پیچیدہ معاملہ ہے جس کی فلسفیانہ گھتیاں نفسیاتی تفصیل کی رہین منت ہیں۔ ایک باپ ہمیشہ اپنی اولاد میں تقسیم ہونا چاہتا ہے۔ وہ اپنی بیٹی بیٹا کو اکیلا کسی بھی مشکل میں دیکھنا ہی نہیں چاہتا۔ شاید وہ سمجھتا ہے کہ زندگی کا بوجھ اٹھانے کی عادت سے نابلد یہ معصوم اگر کسی نا مانوس فضا میں ہلکان ہوگیا تو مجھ میں موجود وہ خیال رکھنے والا، پیرادار، ہمیشہ ٹوکنے والا انسان کہیں مر جائے گا جبکہ لڑکپن پار کر کے جوانی کی طرف قدم رکھنے والی اولاد سمجھتی ہے کہ ان کا باپ ان سے آزادی و خودمختاری کا سودا کر رہا ہے۔ ہر دو جانب ایک نئی کیفیت کا ٹکراؤ والد کو مایوسی اور اولاد کو بغاوت کی ترغیب دلاتا ہے۔

آج کا سماج اس بنیادی ترین مسئلے کا شکار ہے جس میں فرد کی آزادی کے کھوکھلے نعروں نے اجتماعیت کے انتظام کو درہم کر دیا ہے۔ ورنہ جو باپ اپنے بیٹے کو اپنے ہی کندھوں پر اٹھا کر دنیا کو دیکھنے کی جرأت عطا کرتا تھا اور ہزارہا لغو سوالات کا بالترتیب جواب مہیا کرتا تھا وہ کیونکر اپنی اولاد کی آزادی کا سوداگر بننا چاہے گا۔

Advertisement

ہم سال میں ایک بار فادر ڈے اور مدرز ڈے کا ڈھونگ تو رچاتے ہیں ، سوشل میڈیا پر ان کی تصاویر بھی خوب خوب پیش کرتے ہیں لیکن آج کا سچ یہ ہے کہ اولاد والدین کے حقوق ،انہی کے لئے مختص اخلاقی ذمہ داریوں اور احساسِ اخوت سے محروم ہوتی جارہی ہیں۔ ہم والدین کو بلا کسی شرط اور تحدید کے قبول کریں یہ ہماری مجبوری ہے لیکن ہم ان کے سامنے سراپا تسلیم ہوں یہ فرض ہے۔ ہم مجبوریاں تو بخوبی نبھا رہے ہیں لیکن فرائض سے کوسوں دور ہوتے چلے جارہے ہیں۔ یہ مضمون باپ کی سربلندی کے مد نظر پیش کرنا صرف ایک تحریر نہیں بلکہ ہر نئے دور کی ضرورت ہوتا جارہا ہے۔ اس میں کوئی نئی بات نہیں کہ قدر و قیمت اور فضیلت و اہمیت کوئی کتابی چیزیں نہیں بلکہ یہ ایسے احساسات ہیں جن کا فہم و ادراک اللہ نے اپنے بندوں کے دلوں پر ثبت کیا ہوتا ہے۔ لیکن آج کے دور میں جہاں نیم عریاں فاحشہ، بد چلن ، انتظام و انصرام کی زندگی کی مخالفت میں بے شمار شر پسندانہ محاذ ان کی ٹولیاں اور گروہ بڑی ڈھٹائی سے پدرنہ سماج کی مخالفت میں مادرنہ نعرے چھوڑ رہے ہیں یہ جانتے ہوئے بھی کہ تاریخ کے کسی ایک لمحے میں بھی اس طرح کی تقسیم نہ تو قابلِ قدر تھی اور نہ ہی اس کے داد رس موجود تھے ایک فتنے کے سوا کیا ہوسکتا ہے۔

باپ جس کرب سے زندگی کو جیتا ہے اس سے محسوس کرنا اگر اولاد کے لئے بھی کوئی اہمیت نہیں رکھتا تو فادر ڈے کی کیا ضرورت ہے۔ یہ بچہ جو اپنے والد کی تصویر کے ساتھ کیپشن میں ابا کو بس وجہ تخلیق جان کر سال بھر اس کی توہین و تضحیک کا سبب رہتا ہے، جان لیں کہ اپنے ہر نوالے میں باپ کے ماتھے سے گرنے والے پسینے کی بوند بوند کا مقروض ہے۔ ہم ایسے سماج کی لعنت آمیز حرکت کو سراہنے کے در پہ ہیں جس نے انسانیت ،اخلاقیات اور انتظام سے خالی زندگی کو اپنے لئے آزادی خودمختاری اور سالمیت کا نام دے کر نہ جانے تاریخ کے کتنے ہی اوراق کی نافرمانیوں کا خون اپنے سر لیا ہے۔ زندگی جس کی تفصیل ماضی سے ہے اور ماضی کا سرمایہ حال کے مشاہدات سے مستقبل میں منصوبہ بندی کا وسیلہ بنتا ہے، فادر ڈے کو انجوائے کرنا ایک بات ہے۔ فیسبک وٹس ایپ پر کومنٹس اور لائق کی بھوک جس سے خود کو چاہنا یعنی نرگسیت کے شکار اپنا شعار سمجھتے ہیں دوسری بات ہے لیکن فیمنزم اور فحاشی کی رنڈ بازاری کو پرموٹ کرنا کسی صورت جائز نہیں ٹھہرایا جاسکتا۔

ہم جس کا تخم ہیں، اس کی، جس نے اپنی زندگی کے ہر رنگ کو اولاد کی خوشیوں پر نچھاور کردیا اس کی، اس تیاگ کی جو بوند بوند پسینہ بیچ کر تن بدن ڈھانپنے سے پیٹ کی آگ بجھانے تک کا وسیلہ رہا اس داتا یعنی باپ کی قربانیوں کو اگر کسی نظریے ،دو چار اسکولوں میں حاصل کردہ جماعتوں کے اسناد یا سرکاری نوکری کے سٹیٹس کے زعم میں بھول چکے ہوں یا اس کے سامنے آداب و تسلیمات سے گریزاں ہوں توہمیں جان لینا چاہیے کہ اپنے مستقبل قریب میں ہی انسانیت نام کی یہ کانچ کی گڑیا ہمارے ہاتھوں سے پھسل کر چکنا چورہوجائے گی۔ باپ تو چونکہ باپ ہوتا ہے اور بہر حال باپ ہوتا ہے تمام مڈیاریوں اور فیسبوکی فوٹو بازوں کو ان سب کے باپ کا دن مبارک ہو؀

عزیز تر مجھے رکھتا ہے وہ رگ جاں سے
یہ بات سچ ہے مرا باپ کم نہیں ماں سے

مضمون نگارڈاکٹر غلام مصطفےٰ ضیا ، ضلع پونچھ تحصیل سرنکوٹ۔
Advertisement

Advertisement

Advertisement