Dekhna Har Subha Wali Dakni

دیکھنا ہر صبح تجھ رخسار کا
ہے مطالع مطلعِ انور کا

یاد کرنا ہر گھڑی تجھ یار کا
ہے وظیفہ مجھ دلِ بیمار کا

آرزوۓ چشمہ کوثر نہیں
تشنہ دل ہوں شربتِ دیدار کا

بلبل و پروانہ کر دل کے تئیں
کام تھا تجھ چہرہ گلنار کا

کیا کہے تعریف دل ہے بےنظیر
حرف حرف اُس مخزنِ اسرار کا

گر ھوا ہے طالبِ آزادگی
بند مت ہو سجّہ و زُنّار کا

مسندِ گل منزلِ شبنم ہوئی
دیکھ رُتبہ دیدہ بیدار کا

ہے ولیؔ ہونا مریجن پر نِثار
مدّعا ہے چشمِ گوہر بار کا

-ولیؔ دکنی

Close