Essay on Charminar In Urdu

چار مینار پر ایک مضمون

چارمینار 1591 عیسوی میں تعمیر کی گئی تھی۔ ہندوستان کی ریاست تلنگانہ کے شہر حیدرآباد میں بنی یہ عمارت ایک یادگار مسجد ہے۔ اس وقت یہ حیدرآباد کا عالمی ورثہ ہے اور چارمینار بھی ہندوستان کی اہم یادگاروں میں شامل ہے۔

چارمینر دریائے موسیٰ کے مشرقی ساحل پر تعمیر کی گئی تھی۔ چارمینار کے بائیں جانب لاڈ مارکیٹ اور جنوب میں مکہ مسجد ہے۔ آثار قدیمہ اور تعمیراتی خزانے میں اسے "یادگاروں کی فہرست” میں بھی شامل کیا گیا ہے اور اس کا انگریزی نام "فور ٹاور” ہے۔ اس یادگار کی اس تاریخ میں بہت ساری افسانوی داستانیں ہیں۔

آثار قدیمہ کے سروے آف انڈیا (اے ایس آئی) کے مطابق یہ ریکارڈ چارمینار کے نام سے درج کیا گیا ہے۔ "چارمینار کی تعمیر کی وجوہ کے بارے میں بہت ساری کہانیاں ہیں اور یہ خیال کیا جاتا ہے کہ چارمینار وسط میں تعمیر کی گئی ہے۔ شہر طاعون کے انفیکشن سے بچنے کے لئے لوگ اس پر یقین رکھتے تھے۔ اس وقت یہ ایک سنگین بیماری تھی جو موت کا سبب بن رہی تھی اور کہا جاتا ہے کہ محمد قلی قطب شاہ نے یہ مسجد بنائی اور یہاں دعا کی۔

17 ویں صدی کے ایک فرانسیسی مسافر ژان ڈی تھنیوٹ کے مطابق چارمینار 1591 عیسوی میں تعمیر کیا گیا تھا یعنی ایک اور اسلامی صحاح سال میں 1000 اسلامی ممالک میں یہ ایک تہوار کے طور پر منایا جاتا ہے لہذا قطب شاہ نے اس تہوار کو منانے کے لئے حیدرآباد شہر کا انتخاب کیا اور وہاں چارمینار کی تعمیر کرائی۔

مورخ مسعود حسین خان کا کہنا ہے کہ چارمینار کی تعمیر کا کام 1592 میں مکمل ہوا تھا اور حیدرآباد شہر کا پتہ 1591 میں ہوا تھا۔ کتاب "محبوب کے دن” کے مطابق قطب شاہ نے سن 1589 میں چارمینار کی تعمیراتی کام کا آغاز کیا تھا۔ اس جگہ پر تعمیر کیا جہاں اس نے اپنے مستقبل کا قلعہ پہلی بار دیکھا تھا اور ملکہ کے اسلام قبول کرنے کے بعد اس نے اس شہر کا نام حیدرآباد رکھا تھا۔ لیکن یہ کہانی مورخین اور اسکالرز نے کہی تھی لیکن مقامی لوگوں کو اس کہانی پر کافی اعتماد تھا۔

چارمینار کا رقبہ گولکنڈہ مارکیٹ سے منسلک ہے۔ قدیم حیدرآباد کا قصبہ چارمینار کی وجہ سے تعمیر کیا گیا تھا اور تب سے چارمینار شہر حیدرآباد کے مرکز میں واقع ہے۔ یہ شہر چار ٹاورز کے چار میناروں سے متصل تھا۔ چارمینار کے سامنے چار کمانڈ اور چار دروازے ہیں۔ سلطان محمد قلی قطب شاہ نے قطب شاہی سلطنت کے پانچویں حکمران نے سن 1591ء میں چارمینار تعمیر کیا۔

اپنے دارالحکومت گولکنڈہ کو حیدرآباد منتقل کرنے کے بعد اس نے حیدرآباد میں چارمینار تعمیر کیا۔ چارمینار کی وجہ سے آج حیدرآباد کو عالمی سطح پر شناخت ملی ہے۔ بعد میں شہر حیدرآباد کو ترقی دینے کے لئے فارسی معمار کو بھی بلایا گیا۔ اور پھر چارمینار کے آس پاس مسجد اور مدرسہ بھی بنایا گیا تھا۔ چارمینار ہند اسلامی فن کی بنیاد پر تعمیر کیا گیا تھا۔

میر مومن آسٹرآبادی قطب شاہ کے وزیر اعظم نے چارمینار اور شہر حیدرآباد کے ڈیزائن اور ترتیب میں ایک اہم کردار ادا کیا۔ یہ ساخت ہند اسلامی فن تعمیر کا ہے جس میں کچھ فارسی عناصر شامل ہیں۔ حیدرآباد شہر چارمینار کے آس پاس چار حصوں میں برابر تقسیم ہوا تھا۔

Close