Essay On Dam In Urdu

ڈیم پر ایک مضمون

ڈیم نہر یا ندی پر پانی کے بہاؤ کو روکنے کے لئے سب سے بہترین ذریعہ ہے۔ اور اسے بہت سے مقاصد کے لئے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ جیسے بجلی بنانے، فصلوں کو پانی دینے، آس پاس کے علاقوں میں پانی پہچانے وغیرہ۔ ڈیم(باندھ) چھوٹے اور بڑے دونوں طرح کے ہو سکتے ہیں۔ بڑے باندھوں کی تعمیر زیادہ پیچیدہ ہوتی ہے جس کے نتیجے میں ضرورت سے زیادہ کام، بجلی، وقت اور پیسہ لگتا ہے۔ باندھ کو کنکریٹ، چٹانوں، لکڑی یا مٹی سے بھی تعمیر کیا جاتا ہے۔

ہندوستان میں کئی طرح کے ڈیم موجود ہیں جیسے بھاکڑا ڈیم، سردار سروور، ٹہری ڈیم وغیرہ یہ بڑے ڈیموں کی مثال ہیں۔ ڈیم میں پانی کا وزن اٹھانے کی قابلیت ہوتی ہے۔ ڈیم پر پانی کی جس مقدار کو دھکیلا جاتا ہے اسے پانی کا دباؤ کہا جاتا ہے۔ پانی کی گہرائی کے ساتھ پانی کا دباؤ بڑھتا ہے اس کے نتیجے میں بہت سارے ڈیموں کا نیچے کا حصہ چوڑا رکھا جاتا ہے تاکہ یہ کثیر حصے میں بہتے پانی کا بوجھ سطح کے نیچے لے جا سکے۔

ڈیم کی ضرورت

باندھوں کو آب پاشی، پینے کے پانی، بجلی کی پیداوار اور نو تخلیق کے لئے پانی کے ذخیرہ کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔ باندھ سیلاب کنٹرول کرنے میں بھی مدد کرتے ہیں۔ آپ باندھ کے ذخائر سے پینے کا پانی حاصل کرسکتے ہیں یا باندھ کے حوض کے آبی ذخائر سے کھانے پینے کی اشیاء تیار کر سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ پن بجلی گھر سے بجلی حاصل کرسکتے ہیں۔ ندی کا پانی باندھوں کے پیچھے طلوع ہوتا ہے اور مصنوعی جھیلوں کی تشکیل کرتا ہے، جسے آبی ذخائر کہتے ہیں۔ کاشت شدہ پانی گھروں اور صنعتوں میں آبپاشی یا شپنگ کے لئے بجلی کی تعمیر یا پانی کی فراہمی کے لئے استعمال کیا جاتا ہے۔ حوض مچھلی پکڑنے اور کھیلنے کے لئے بھی ایک اچھی جگہ ہے۔

باندھوں کی اقسام

ڈیم کی تعمیر اور ڈیزائن اس میں استعمال ہونے والے مادے پر منحصر کرتا ہے، اس میں کئی قسم کے ڈیم شامل ہو سکتے ہیں۔ مشینوں کے ذریعہ انجینئرز اس کے بارے میں اعلیٰ معلومات حاصل کرتے ہیں کہ ڈیم کے ذریعہ کتنا پانی اٹھایا جا سکتا ہے اور یہ کتنا بڑا اور طاقتور ہوسکتا ہے۔ پھر وہ فیصلہ کرتے ہیں کہ کس قسم کا ڈیم ڈیزائن کیا جائے۔ ڈیم کی قسم ڈیم کے مقام، مواد، درجہ حرارت، موسم کی صورتحال، مٹی اور چٹان کی قسم اور جسامت پر منحصر کرتا ہے۔ان سبھی خصوصیات کو مدِنظر رکھتے ہوئے باندھوں کی کچھ اقسام درج ذیل ہیں۔



کشش ثقل ڈیم

کشش ثقل ڈیم بہت بڑے اور بھاری ڈیم ہیں جو کنکریٹ سے بنے ہوتے ہیں۔ اس طرح کے ڈیم ایک بڑی بنیاد پر تعمیر کیے جاتے ہیں اور ان کے وزن کی وجہ سے ان پر پانی کے بہاؤ کا اثر نہیں ہوتا ہے۔ کشش ثقل ڈیم صرف مضبوط چٹانوں پر تعمیر ہوسکتے ہیں۔ کشش ثقل کے زیادہ تر ڈیم بنانے میں مہنگے پڑتے ہیں کیونکہ ان کی تعمیر میں بہت ٹھوس پتھر درکار ہوتے ہیں۔ بھاکڑا ڈیم ایک کنکریٹ کشش ثقل ڈیم ہے۔


آرک ڈیم

آرک ڈیم وادی کی دیواروں کی مدد سے تعمیر کیے جاتے ہیں۔ چیپ ڈیم پانی پر مڑے ہوئے آرک کی طرح تعمیر کیا گیا ہے۔یہ تنگ اور پتھریلی جگہوں کے لئے بہترین ڈیم ہے۔ آرک ڈیم صرف اس تنگ وادی میں تعمیر کیا جاسکتا ہے جہاں پتھریلی دیواریں سخت اور ڈھلوان ہوں۔ ڈیم کے ذریعہ پانی کو دھکا دینے میں مدد ملتی ہے۔ ہندوستان میں صرف ادکّی ڈیم ہی آرک ڈیم ہے۔

پشتے بند ڈیم

پشتے بند ڈیم اکثر مٹی کے ڈیم یا راک فیل ڈیم ہوتے ہیں۔ یہ مٹی اور چٹان سے بنا ایک بڑے سائز کا ڈیم ہے، جس میں پانی کے تیز بہاؤ کو روکا جا سکتا ہے۔ ان میں مٹی یا کنکریٹ کی ایک پرت پتھروں کے درار سے پانی کے اخراج کو روکنے کے لئے استعمال کی جاتی ہے۔ چونکہ مٹی کنکریٹ کی طرح طاقتور نہیں ہے، لہذا مٹی کے ڈیم بہت زیادہ گھنے ہیں۔ تحریری ڈیم راک فیل ڈیم کی ایک مثال ہے۔

Close