ڈاکٹر پر ایک مضمون

ڈاکٹر ہماری صحت کی حفاظت اسی طرح کرتے ہیں جس طرح فوجی ملک کی حفاظت کرتے ہیں۔ پروفیسروں اور انجینئروں کی طرح معاشرے میں ڈاکٹروں کا ایک اہم مقام ہے۔

معاشرے میں ڈاکٹروں کو عزت کی نگاہ سے دیکھا جاتا ہے۔ ہمارے ملک میں طب ، آیور وید اور ایلوپیتھی کے بہت سے مختلف ڈاکٹر موجود ہیں۔ ڈاکٹروں کا کام بیماریوں کی تشخیص کرنا ہے۔ جب بھی ہم بیمار ہوجاتے ہیں تو ہمیں ڈاکٹر کی پناہ لینی پڑتی ہے۔ بخار سے لے کر سنگین بیماریوں تک ڈاکٹر ہمارے درد کو دور کرتا ہے اور ہمیں خوشیاں دیتا ہے۔

عام بیماریوں میں کسی بھی ڈاکٹر سے علاج کرایا جا سکتا ہے۔ لیکن حادثے کی صورت میں گردے خراب ہوجاتے ہیں ، آنکھوں کی روشنی ختم ہوجاتی ہے اور تب ہمیں ایک اچھے ڈاکٹر یا سرجن سے ہی علاج کرانا چاہئے۔ آپریشن کے ذریعے ڈاکٹر ہمیں نئی ​​زندگی بخشتا ہے۔ دل کی بیماریوں ، ٹی بی اور کینسر جیسی خطرناک بیماریوں وغیرہ کا ڈاکٹر بڑی کوششوں سے بیماری کا علاج کرتے ہیں۔

ڈاکٹروں کی زندگی خدمت اور مشقت کی زندگی ہے۔ کبھی کبھی آپریشن کے دوران ڈاکٹر کو کئی گھنٹے تک کام کرنا پڑتا ہے۔ وہ آرام سے سو بھی نہیں سکتا۔ سرکاری اسپتالوں میں ڈاکٹروں کو کئی گھنٹے مریضوں سے ملنا پڑتا ہے۔ اگر مریض کی حالت سنگین ہے تو انھیں رات میں کئی بار جانچنا پڑتا ہے۔ ڈاکٹر مریض کا علاج کرکے اسے اللہ کی مدد سے نئی زندگی عطا کرتا ہے۔

آج کا دور پیسوں کا دور ہے۔ آج ڈاکٹر بھی زیادہ سے زیادہ رقم کمانا چاہتا ہے۔ بہت سارے ڈاکٹر اتنی زیادہ فیس وصول کرتے ہیں کہ یہاں تک کہ متوسط اور اعلیٰ ​​طبقے کے لوگ بھی ان کی خدمات حاصل کرنے سے قاصر ہو جاتے ہیں۔ غریب مریض پیسوں کی کمی کی وجہ سے تڑپ کر رہ جاتے ہے۔

ایک اچھے ڈاکٹر کی اچھی تنخواہ لینا ضروری ہے۔ اس کی فطرت نرم ہونی چاہئے۔ ڈاکٹر اپنے مریض کو سکون اور اعتماد دیتا ہے۔ اپنی مسکراہٹ سے اس کے دکھوں کو دور کرتا ہے۔ ڈاکٹر کے نقطۂ نظر کو صرف پیسہ کمانے کے لئے نہیں ہونا چاہئے۔

جو لوگ ایلوپیتھی ڈاکٹروں کی فیس ادا نہیں کرسکتے اور مہنگی دوائیں نہیں لے سکتے۔ انہیں ہومیوپیتھی یا آیوروید کے ڈاکٹر کے پاس جانا چاہئے۔ ان ڈاکٹروں اور ادویات کی فیسیں کم خرچ ہیں۔ بہت سارے ڈاکٹر خیراتی ڈسپنسریوں میں مریضوں کی خدمت کرتے ہیں۔ وہ بہت کم تنخواہ لیتے ہیں۔ ایسے ڈاکٹر تعریف کے مستحق ہیں۔ وہ حقیقی معنوں میں انسانیت کے خادم ہیں۔

Close