Essay On Four Seasons In Urdu

ہندوستان ان چند ممالک میں سے ایک ہے جس میں موسموں کے لحاظ سے بہت زیادہ تغیر پایا جاتا ہے۔ بنیادی طور پر اس میں چار قسم کے موسم ہوتے ہیں۔ مزید یہ کہ یہاں ہر سیزن کی شدت خطے اور دیگر عوامل جیسے ٹپوگرافی ، عرض البلد ، طول البلد اور اس سے زیادہ مختلف ہوتی ہے۔ چار سیزن عام طور پر ایک مخصوص وقت کے دوران آتے ہیں۔ ماحولیاتی اور انسانیت کے عوامل کی وجہ سے موسموں کا وقت کبھی کبھی مختلف ہو جاتا ہے۔ سفر اور اسکول کی تعطیلات کی متعدد سرگرمیاں مختلف موسموں اور آب و ہوا پر منحصر ہوتی رہتی ہیں جو اس علاقے کا تجربہ کراتی ہیں۔

ہندوستان میں مختلف موسم

جیسا کہ پہلے بتایا گیا ہے کہ ہندوستان چار بڑے موسموں کا تجربہ کرتا ہے۔ وہ موسم گرمی، سردی، مانسون اور بہار کے ہیں۔ ہر موسم میں پورے سال کا احاطہ مختلف اوقات میں ہوتا ہے۔ ہر موسم کا اوسط وقت دو سے تین ماہ تک کا ہوتا ہے۔


گرمیوں کا موسم


گرمیوں کا موسم مارچ کے آخر سے شروع ہوتا ہے اور جون کے مہینے میں ختم ہوتا ہے۔ چونکہ ہندوستان اشنکٹبندیی ملک ہے ، اس کے کچھ خطوں میں موسم گرما قدرے سخت ہے۔ مزید یہ کہ گرمی کے دوران ہندوستان میں آج تک ریکارڈ کیے جانے والا سب سے زیادہ درجہ حرارت ریاست راجستھان میں 51 ڈگری سیلسیس ہے۔ گرمی کے دوران عام طور پر درجہ حرارت 32 سے 40 سینٹی گریڈ تک رہتا ہے۔ مزید برآں، اس موسم میں عام طور پر دن رات سے زیادہ لمبے ہوتے ہیں۔


مانسون کا موسم


اس کے بعد مانسون کا سیزن آتا ہے جو جون یا جولائی میں شروع ہوتا ہے اور ستمبر تک پھیلا ہوا ہے۔ بارش جو زیادہ تر ہوتی ہے وہ جنوب مغرب میں مانسون کی وجہ سے ہوتی ہے۔ یہ مانسون کا آغاز خلیج بنگال اور بحیرہ عرب میں ہوتا ہے۔ ہندوستان میں مانسون میں موسلا دھار بارش کا امکان رہتا ہے جس کے نتیجے میں اکثر علاقوں میں سیلاب آتا ہے۔


بہار کا موسم

مانسون کے بعد موسم بہار کی آمد ہوتی ہے اور یہ اکتوبر اور نومبر کے مہینوں میں آتا ہے۔ یہ موسم بنیادی طور پر گیلے موسم سے خشک موسم میں منتقلی کی نشاندہی کرتا ہے۔ یہ منتقلی گواہ درجہ حرارت میں کمی کرتا ہے اور لوگوں کو سردیوں کے لیے تیار کرتا ہے۔

سردی کا موسم

آخر میں ہمارے یہاں ہندوستان میں سردیوں کے موسم کی آمد ہوتی ہے جو نومبر سے جنوری کے درمیان تک رہتا ہے۔ اس سیزن میں درجہ حرارت 10 سے 15 ڈگری سینٹی گریڈ تک رہتا ہے۔ ملک کے شمالی علاقوں میں بارش کے ساتھ ہی برفباری بھی ہوتی ہے۔ ہندوستان کے سب سے زیادہ سرد مہینے دسمبر اور جنوری ہیں۔ ہندوستان میں سردیوں کے دوران راتیں لمبی اور دن چھوٹے ہوتے ہیں۔

ہر سیزن کی خصوصیت

ہندوستان میں ہر موسم اپنے ساتھ ایک خاصیت رکھتا ہے۔ ہندوستان کا بچہ بچہ ان چاروں موسموں کے قدرتی مناظر سے لطف اندوز ہوتا ہے۔ ہر ایک کے پاس ایک یا دوسری چیزیں ہیں جو وہ ہر موسم میں کرنے میں لطف اندوز ہوتے ہیں۔ کچھ لوگ گرمیوں میں کشمیر کی سیر کے لیے جاتے ہیں اور وہاں خوب مزے کرتے ہیں۔ کچھ سردی کی وجہ سے طرح طرح کے کپڑے پہننے ہیں۔ بہر حال ہر موسم اللہ کی طرف سے عطا کی گئی ایک نعمت ہے۔

گرمیوں کے دوران بچے سب سے زیادہ پرجوش ہوتے ہیں۔ وہ گرمیاں پسند کرتے ہیں کیونکہ انہیں آئس کریم اور کولڈ ڈرنک مل جاتی ہے۔ انہیں ایک ماہ تک تعطیل کا وقفہ ملتا ہے جس کا مطلب ہے کہ نئی جگہوں پر کھیلنے اور دیکھنے کے لئے زیادہ وقت ملےگا۔ بچوں کی حوصلہ افزائی اور ان کی صلاحیتوں کو بڑھانے کے لئے مختلف اسکولوں میں سمر کیمپ لگائے جاتے ہیں۔

سرد موسم کی وجہ سے لوگ سردیوں سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔ پہاڑی علاقوں میں اس موسم میں برف باری ہوتی ہے جس کی وجہ سے وہ مختلف کھیلوں جیسے سنو بورڈنگ ، آئس سکیٹنگ اور دیگر طرح کے کھیلوں سے لطف اندوز ہونے کے لیے ایسے ٹھنڈے علاقوں میں جاتے رہتے ہیں۔ لوگ آگ تاپ کر اپنے کمبل کے آرام دہ احساسات سے بھی لطف اٹھاتے ہیں۔ گرم کافی اور سوپ پینے کا بھی مزا لیتے ہیں۔

مزید برآں مونسون ایک ایسا موسم ہے جس کی آمد کے بہت سے لوگ منتظر رہتے ہیں۔ کسانوں کو اپنی فصلوں کو پانی کی مناسب فراہمی کے لئے مون سون کی بارشوں کا انتظار رہتاہے۔ بچوں کو بارش میں کھیلنا اور کاغذ کی کشتیاں بنانا پسند ہے۔ جب بارش ہوتی ہے تو لوگ گرم چائے اور گہری تلی ہوئی پکوڑیوں سے لطف اٹھاتے ہیں۔

مختصر یہ کہ ہر موسم اپنے اپنے انداز میں خاص ہے۔ ہندوستانی بہت سارے موسموں کا تجربہ کرنے میں خوش قسمت ہیں کیونکہ تمام ممالک کو اس طرح کے مختلف موسموں سے لطف اندوز ہونے کا موقع نہیں ملتا۔

Close