Essay on My Family In Urdu

میرے خاندان پر ایک مضمون

  • لفظ "کمبہ” مختلف ثقافتوں اور نسلوں کے درمیان انوکھے اور خصوصی ریشتہ کا حامل ہے۔ جیسا کہ ایک خاندان میں کوئی بھی ہو لیکن اپنے خون سے قریبی تعلق رکھتا ہے، بطور والدین، ​​بچے، ماموں، خالہ، چاچا، چاچی، پھوپی اور کزن۔ اگرچہ کچھ لوگوں میں بدنیتی بھی آ جاتی ہے لیکن پھر بھی رشتے باقی رہتے ہیں۔ "خون پانی سے زیادہ گاڑھا ہوتا ہے،” اس وجہ سے ہی کہا جاتا ہے کہ رشتے خون کے ہیں۔ خون کے رشتے سے خاندانی رکاوٹ یا پابندی نہیں ہوتی۔ میرے ذہن میں ایک خاندان محض لوگوں کا ایک ایسا گروہ ہے جو ایک دوسرے سے غیر مشروط اور ہمیشہ بنا کسی امید اور بنا کسی مطلب کے ایک دوسرے کا خیال کرتا ہے، سپورٹ کرتا ہے اور مدد کرتا ہے۔ اس طرح جب لوگ اکٹھے ہوتے ہیں تو ایک خاندان مضبوط رشتوں اور رشتے داروں کے ذریعے اپنے ممبروں کو متحد کرتا ہے۔
  • میرا کنبہ ایک مشترکہ اور بڑا کنبہ ہے۔ شہر میں رہتے ہوئے بھی کنبہ کے تمام افراد ایک ساتھ رہتے ہیں۔ میرا کنبہ دادا دادی، ماں بابا، چاچا اور چاچی اور پھوپی پر مشتمل ہے اور ہم تین بہن بھائی ہیں۔ تو میرے کنبہ میں کل گیارہ ممبر ہیں۔ کنبے کے تمام افراد پیار کے ساتھ رہتے ہیں۔ ہمارا کنبہ ایک مثالی اور خوش کن کنبہ ہے۔
  • دادا دادی کنبے کے بزرگ اور معزز ممبر ہیں۔ گھر کے دوسرے سبھی افراد بھی ان کا بہت احترام کرتے ہیں۔ سب انکے مشوروں پر عمل کرنا اپنا فرض سمجھتے ہیں۔ دادا پہلے استاد تھے اب ریٹائر ہوگئے ہیں۔ وہ ہمیں باقاعدگی سے بہن بھائیوں کے درمیان محبت کی تعلیم دیتے ہیں۔ دادی جی مذہبی جبلت کی ایک خاتون ہیں اور اپنا زیادہ تر وقت عبادت میں صرف کرتی ہیں۔ بہر حال وہ سب کے لئے بھی وقت نکالتی ہیں۔ وہ زیادہ سے زیادہ گھر کے کام میں ماں اور پھوپی کی مدد کرتی ہیں۔ وہ میری ماں کو کنبہ کی بہو نہیں بلکہ اپنی بیٹی سمجھتی ہیں۔
  • میرے والد پیشے سے ہومیوپیتھک ڈاکٹر ہیں۔ شہر میں ان کا اپنا کلینک ہے جس کا وہ باقاعدگی سے دورہ کرتے ہیں۔ ان کی دوا مریضوں کو بہت فائدہ دیتی ہے۔ میرے چاچا جی بجلی کے محکمہ میں انجینئر ہیں۔ اس طرح سے میرے کنبے کو اچھی ماہانہ آمدنی ہوتی ہے اور کنبہ کی ضروریات آسانی سے پوری ہو جاتی ہیں۔ میری والدہ اور پھوپی گھر کے کام کاج کرتی ہیں۔ ہم تین بھائی اور بہنیں ہیں جو دو مختلف اسکولوں میں زیر تعلیم ہیں۔ ہم گھر میں مل کر پڑھتے اور کھیلتے ہیں۔
  • میرے خاندان میں نظم و ضبط اور قانون کو بہت اہمیت دی جاتی ہے۔ بڑوں کا احترام ، چھوٹوں سے پیار کرنا اور شفقت کرنا ہمارے خاندان کی روایت ہے۔ تمام کام عام طور پر وقت پر ہوتے ہیں۔ کھانے، پڑھنے، کھیلنے اور سونے کا وقت متعین ہے۔ اگر کوئی بیمار پڑتا ہے تو دوسرے لوگ اس کی خدمت میں حاضر ہو جاتے ہیں۔ اگر کوئی پریشانی پیش آتی ہے تو ہمارا پورا کنبہ متحد ہوکر اس پریشانی کا سامنا کرتا ہے۔
  • میرا کنبہ پڑوسیوں کے ساتھ رہتا ہے۔ ہم ہمیشہ ہمسایہ کے غم اور تکلیف میں شریک ہوتے ہیں۔ والد پڑوسیوں کا مفت میں ہی علاج کرتے ہیں۔ دادا پڑوس کے بچوں کو جمع کرتے ہیں اور انہیں پڑھاتے ہیں۔ میرا کنبہ معاشرتی کاموں میں بہت زیادہ حصہ لیتا ہے۔ ان خصوصیات کی وجہ سے میرے اہل خانہ کو پڑوس میں بہت احترام اور پیار ملتا ہے۔ پڑوسی یہاں ہماری یکجہتی کی مثال دیتے ہیں جو ہمارے لئے فخر کی بات ہے۔
  • ہمارے کنبہ میں مہمانوں کے ساتھ اچھا سلوک کیا جاتا ہے۔ دوست اور مہمان اکثر ایک بڑے کنبے کی وجہ سے آتے ہیں۔ ان کی راحت اور سہولت کا بھی خیال رکھا جاتا ہے۔ ہم قدیم ہندوستانی تصور "اتتھی دیوو بھوا” کو بہت اہمیت دیتے ہیں۔
  • میرے کنبے میں کوئی جھگڑا نہیں ہوتا ہے۔ اگر پڑوسی آپس میں لڑتے ہیں تو ہم حیرت زدہ ہوتے ہیں۔ یہاں تک کہ اگر میرے اہل خانہ میں باہمی تنازعہ ہوتا ہے تو اس کو پرامن طور پر حل کیا جاتا ہے۔ اگر بچے کسی بات پر جھگڑا کرتے ہیں تو ان کے اختلافات کو دور کیا جاتا ہے۔ اس طرح چھوٹی رکاوٹوں کو باہمی ہم آہنگی اور محبت کے ساتھ ختم کیا جاتا ہے۔
  • اس طرح سے میرا کنبہ خوش کن خاندان ہے۔ اس خوشحالی کا راز نظم و ضبط ، خاندانی پیار اور وقار کی پابندی ہے۔ ایک دوسرے کے ساتھ ہمدردی کا احساس خاندان کو ایک مضبوط بنیاد پر قائم رکھے ہوئے ہے۔ ایسے خاندان میں جہاں ہمیشہ خوشیوں کا احساس ہو وہاں سکون سے رہنا ممکن ہے۔
Close