Essay On Parrot In Urdu

طوطے پر ایک مضمون

میرا پسندیدہ پرندہ طوطا ہے۔ یہ مجھے اس وجہ سے زیادہ پسند ہے کیونکہ یہ انسانی آواز میں بات کر سکتا ہے۔ جس کی وجہ سے ہم اس کی کہی ہوئی بات کو آسانی کے ساتھ سمجھ سکتے ہیں۔اس وجہ سے کئی لوگ اس کو پالتے بھی ہیں۔ یہ سچ میں ایک خوبصورت پرندہ ہے۔

طوطے کا رنگ سبز ہوتا ہے۔ اس کی چونچ سرخ ہوتی ہے جو آگے کی طرف مڑی ہوئی ہوتی ہے۔ اس کا سر اس کے جسم سے چھوٹا ہوتا ہے اور اس کی آنکھیں کالی اور چمکدار ہوتی ہیں۔ اس کی آنکھوں کے ارد گرد بھورے رنگ کی گول لکیر ہوتی ہے۔ طوطے کی گردن پر گول کنٹھی ہوتی ہیں جو کالے رنگ کی ہوتی ہے۔ مجموعی طور پر یہ ایک خوبصورت نظر آنے والا پرندہ ہے۔

طوطے کے پنجے چھوٹے لیکن مساوی طور پر نوکیلے ہوتے ہیں۔ اس کے پنجوں کی بہت مضبوط گرفت ہوتی ہے ، یہی وجہ ہے کہ پرندوں میں یہ واحد پرندہ ہے جو اپنے پنجوں میں کھانا پکڑ کر کھا سکتا ہے۔ اس کے پروں کا سائز چھوٹا ہے لیکن یہ بہت تیز رفتاری سے اڑ سکتا ہے۔

Essay On Parrot In Urdu 1
…A Beautiful Bird

طوطا عام طور پر قافلے میں رہنا پسند کرتا ہے ، جب بھی وہ کھانے کی تلاش میں جاتا ہے تو وہ 10 سے 15 طوطوں کے قافلے میں جاتا ہے۔ طوطا ایک سبزی خور پرندہ ہے اور اس کی غذا پھل، بیج، اناج اور سبزیاں ہیں لیکن اس کو سب سے زیادہ ہری مرچ پسند ہوتی ہے۔

طوطے گرم ممالک میں رہنا زیادہ پسند کرتے ہے۔ یہ عام طور پر درختوں کی کھوکھلی جگہوں میں رہتے ہیں۔ کچھ لوگ اسے ایک چھوٹے سے پنجرے میں رکھتے ہیں جو اچھا نہیں ہے۔ اس کے علاوہ کچھ لوگ طوطے کو حیرت انگیز چیزوں کی تربیت بھی دیتے ہیں۔

طوطے ہندوستان میں زیادہ تر سبز رنگ میں پاۓ جاتے ہیں ، دوسرے ممالک میں یہ سفید ، نیلے ، پیلے اور سرخ رنگ میں بھی پاۓ جاتے ہیں۔ اور ان کی لمبائی 10 سے 12 انچ تک ہوتی ہے۔ اور ان کا وزن 250 گرام سے 400 گرام تک ہو سکتا ہے۔ طوطے کی عمر تقریباً 5 سے 7 سال کی ہوتی ہے۔ اور ان کا وزن، لمبائی، اور عمر ان کی قسم پر منحصر کرتی ہے۔لوگوں کا خیال ہے کہ طوطے پرندوں میں ذہین ترین ذات میں سے ایک ہیں۔


طوطوں کی مختلف اقسام

  • طوطے کی کچھ قسموں کو انسانی آوازوں کی نقل کرنے کے لئے بھی جانا جاتا ہے۔ کچھ طوطے جیسے بونگیگر (بجی) اور کاکاٹیئل پالتو جانوروں کی حیثیت سے مشہور ہیں۔
  • نیوزی لینڈ میں کچھ بہت ہی منفرد طوطے ہیں جن میں کیا ، کاکا اور کاکاپو شامل ہیں۔ چابی بڑے ، ذہین طوطے ہیں جو نیوزی لینڈ کے جنوبی جزیرے کے الپائن علاقوں میں رہتے ہیں۔ بعض اوقات گستاخانہ سلوک کے لئے جانے جاتے ہیں جہاں وہ تھیلے کی تفتیش کرنا ، چھوٹی چھوٹی اشیاء چوری کرنا اور گاڑیوں کو نقصان پہنچانا پسند کرتے ہیں۔

طوطے قدیم زمانے سے ہی انسانوں کی پرورش کرتے آرہے ہیں۔ طوطا نقل کرنے میں بہت بہتر پرندہ ہے۔ وہ آسانی سے انسانی تقریر کرنا سیکھ جاتا ہے۔ بازار میں بہت سارے باتیں کرنے والے طوطے دکھائی دیتے ہیں۔ وہ بہت نیچے اڑتے ہیں لیکن بہت تیزی سے اڑتے ہیں۔ نر اور مادہ طوطے ایک جیسے نظر آتے ہیں۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ایک نر طوطے کی گردن رنگین ہو جاتی ہے اور بہت خوبصورت نظر آتی ہے جبکہ مادہ طوطے میں یہ بدلاؤ نہیں ہوتے۔ موجودہ دور میں درختوں کی کٹائی اور دوسرے بہت سے امور کی وجہ سے طوطوں کی تعداد میں کمی واقع ہو رہی ہے۔ اسلیے قدرت کی اس حسین تخلیق کا نظارہ کرنے کے لئے ہمیں ان کے طبعی مسکن کا خاص خیال رکھنا چاہیے۔

OR

Essay On Parrot In Urdu 2
Close