Advertisement
حاصل علم بشر جہل کا عرفان ہونا
عمر بھر عقل سے سیکھا کیے نادان ہونا

چار زنجیر عناصر پہ ہے زنداں موقوف
وحشت عشق ذرا سلسلۂ جنبان ہونا

دل بس اک لرزش پیہم ہے سراپا یعنی
تیرے آئینہ کو آتا نہیں حیران ہونا

فال افزونی مشکل ہے ہر آسانی کاری
میری مشکل کو مبارک نہیں آساں ہونا

راحت انجام غم اور راحت دنیا معلوم
لکھ دیا دل کے مقدر میں پریشان ہونا

دے ترا حسن تغافل جسے ہے چاہے فریب
ورنہ تو اور جفاؤں پہ پشیماں ہونا

ہائے وہ جلوۂ ایمن وہ نگاہ سر طور
فتنہ ساماں سے ترا فتنۂ ساماں ہونا

خاک فانیؔ کی قسم ہے تجھے اے دشت جنوں
کس سے سیکھا تیرے ذروں نے بیاباں ہونا
Advertisement

Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement