حجاب اگر من و تو کا نہ درمیاں ہوتا
پیام حسن محبت کی داستاں ہوتا

تری تلاش کا افسانہ گریباں ہوتا
راہ مجاز کا ہر ذرہ اک زباں ہوتا

مرا وجود ہے میری نگاہ خود نہ شناس
وہ راز ہوں کہ نہ ہونا جو رازداں ہوتا

کمال ضبط غم عشق اے معاذ اللہ
کہیں کہیں سے جو یہ ماجرہ بیاں ہوتا

بنائے جلوہ گاہ ناز ہے جبین نیاز
جو درد عشق نہ ہوتا تو دل کہاں ہوتا

تمام قوت غم صرف دل ہوئی ورنہ
زمیں زمیں ہی نہ ہوتی نہ آسماں ہوتا

سکون خاطر بلبل ہے اضطراب بہار
نہ موج بوئے گل اٹھتی نہ آشیاں ہوتا

تری جفا کے سوا بھی ہزار تھے انداز
کوئی تو اہل وفا کا مزاج داں ہوتا

مٹا دیا غم فرقت نے ورنہ میں فانیؔ
ہنوز ماتمی مرگ نا گہاں ہوتا