Advertisement
حسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
چھری کے نیچے گلا ہے لیکن کسی سے کوئی گِلا نہیں ہے
حسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
عدو تھے جب سر پہ تیغ تولے حسین سجدے میں جا کے بولے
مدینے والوں گواہ رہنا نماز میری قضا نہیں ہے
حسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
حسین فرمائے ساتھیوں سے ادا کرو پر جلال سجدے
ہے تیغ و خنجر تبر کا سایہ کہاں ہمارا خدا نہیں ہے
حُسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
پکارے عباس اے سکینہ میں پانی لاؤں گا ائے سکینہ
کٹے ہیں بازو چھدا ہے سینہ ابھی مرا سر کٹا نہیں ہے
حسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
غریب امّت کی بیکسی پر حسین کا سر کٹا ہے لیکن
یزید جیسے شقی کے آگے حسین کا سر جھکا نہیں ہے
حُسین جیسا شہیدِ اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
یزید دنیا میں لاکھ آے اور ستم بن بن کے ظلم ڈھاۓ
چراغ توحید پھر بھی صادق جلا ہے لیکن سمجھا نہیں ہے
حسین جیسا شہید اعظم جہاں میں کوئی ہوا نہیں ہے
چھری کے نیچے گلا ہے لیکن کسی سے کوئی گِلا نہیں ہے
Advertisement

Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement