Advertisement
خار ہی خار ہے جدھر تک جائے نظر
دیکھ کے چلنا کے نہیں کوئی تیرا ہمسفر
تلاش کر منزل کہ بننا ہے مثال تجھے
ملے گا نہیں تجھے کوئی یہاں اپنا چارہ گر
تو نے اوروں کی خاطر خود کو چھوڑا
اے ناز کیا ملا تجھے اپنا دل توڑ کر
تیرے ہی دم سے تیری دنیا آباد ہے
انجان نہ بن تو یہ بات جان کر
Advertisement

Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement