Advertisement

ادب میں داخلیت سے مراد یہ ہے کہ شاعر اپنی قلبی واردات اپنے نجی جذبات و احساسات میں ہی اپنی تخلیقی زندگی گزارتا ہے۔ اگر وہ بیرون پر نظر ڈالتا ہے، تو ’’ذات‘‘ ہی کی عینک سے اسے دیکھتا ہے۔ یہ رویہ کافی حد تک وراثتی ہے، تاہم ماحول کی ابتری، حالات کی دگرگونی وغیرہ بھی انسان کو داخلیت کا شکار کر دیتے ہیں، جیسے میر کی شاعری، دبستان دہلی کی شاعری داخلیت کی حامل ہے، جب کہ دبستانِ لکھنؤ کی شاعری میں خارجیت کا عنصر غالب ہے۔

Advertisement

جس معجزۂ فن میں خونِ جگر کی نمو ہو، وہ داخلیت کی شاعری ہوتی ہے۔
’’داخلیت‘‘ علمِ نفسیات کی بھی اصطلاح ہے۔
نفسیات کی رُو سے شخصیات دوطرح کی ہوتی ہیں:
پہلی، دروں بیں (Introvert)
دوسری، بیروں بیں (Extrovert)

Advertisement

دورں بیں یا اندروں بیں لوگ اپنی داخلی ذات میں مگن رہتے ہیں۔ اندرونی جذبات اور داخلی احساسات کو اہی اہمیت دیتے ہیں۔ بیروں بین اس کے اُلٹ ہوتے ہیں۔
(پروفیسر انور جمال کی تصنیف ادبی اصطلاحات مطبوعہ نیشنل بُک فاؤنڈیشن، اشاعتِ چہارم، مارچ 2017ء،)

Advertisement
تحریرمحمد ذیشان اکرم
Advertisement

Advertisement

Advertisement