Advertisement
دل مِرا بےقرار ہے
بس ترا انتظار ہے

دل پریشاں جگر خفا
اب کے ایسی بہار ہے

جاں کسی اور کی ہوں مگر
دل تجھی پر نثار ہے

پوچھ مت موسمِ خزاں
دھول مٹی غبار ہے

وہ تو اِندرؔ چلے گئے
کس کا اب انتظار ہے
Advertisement

Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement