Advertisement
دلِ حزیں سے رگِ چشمِ نم ہےمحوِ قتال
زبسکہ شوخ نگاہِ صنم ہے محوِ قتال
اگرچہ دشمنِ جاں ہے مگر فریبی نہیں
دلوں کی ذات سے غم دم بدم ہے محوِ قتال
جہانِ فانی ہے قائم ہی قتل و غارت پر
کہ آئے ایک نیا، ایک جَم ہے محوِ قتال
خلافِ شان تھا غم کی کہ ہوتا صف آراء
خوشی کی جنگ ہے جاری سو غم ہے محوِ قتال
مَیں چاہ لوں بھی تو دشمن سے لڑ نہیں سکتا
عزیؔز‌ اِس لئے میرا قلم ہے محوِ قتال
عزیؔز اختر