Advertisement
پھر کوئی دلربا ہمراز ہوا چاہتا ہے
اک نئے عشق کا آغاز ہوا چاہتا ہے
ساری دنیا کو بنا لے گا دِوانہ اپنا
یہ قلم جو تِرا انداز ہوا چاہتا ہے
رمزِ ابرو جو کبھی اپنا بتاتا تھا ہمیں
آج وہ غمزۂِ غماز ہوا چاہتا ہے
سارا عالَم یہ تھرکتا رہے دھن پر جس کی
ذرہ ذرہ مِرا وہ ساز ہوا چاہتا ہے
کفر کا من ہے کہ ایمان پہ غالب آ جائے
یعنی کوا کوئی شہباز ہوا چاہتا ہے
اُس سے کہہ دو کہ نہیں ہوں مَیں کوئی شاہجہاں
جو مِرے واسطے ممتاز ہوا چاہتا ہے
پہلے پہلے تو یہ غم تھا مِری رسوائی عزیؔز
اب مِرا فخر، مِرا ناز ہوا چاہتا ہے
عزیؔز اختر
Advertisement