Advertisement

غزل

مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں
ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں
شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو کہ جہاں
جادۂ غیر از نگہہ دیدۂ تصویر نہیں
حسرت لذت آزار رہی جاتی ہے
جادۂ راہِ وفا جز دمِ شمشیر نہیں
رنج نو میدی جاوید! گوارا رہیو!
خوش ہوں گر نالہ زبونی کشِ تاثیر نہیں
سر کھجاتا ہے، جہاں زحمِ سر اچھا ہو جائے
لذّتِ سنگ بہ اندازۂ تقریر نہیں
جب کرم رخصتِ بے باکی و گستاخی دے
کوئی تفصیر بجز خجلتِ تقصیر نہیں
غالب! اپنا یہ عقیدہ ہے بقول ناسؔخ
آپ بے بہرہ اور جو معتقد میؔر نہیں

تشریح


پہلا شعر

مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں
ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں


پاؤں میں چکر ہونا،ہر وقت پھرتے رہنا ہوتا ہے۔شاعر کہتا ہے کہ مجھے کوئی تدبیر دشت نوردی سے روک نہیں سکتی۔اس غرض یہ جو میرے پاؤں میں زنجیر ڈالی گئی ہے اس کو زنجیر مت جانو بلکہ اسے میرے پاؤں میں چکر سمجھو۔

Advertisement

دوسرا شعر

شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو کہ جہاں
جادۂ غیر از نگہہ دیدۂ تصویر نہیں

میرے عشق کا جنون مجھے اس دشت میں دوڑاتا ہے جہاں راستہ بالکل ناپید ہے۔ اور اگر وہاں کوئی راستہ ہے تو وہ جادوئے خیریت ہے اور کچھ نہیں۔

Advertisement

تیسرا شعر

حسرت لذت آزار رہی جاتی ہے
جادۂ راہِ وفا جز دمِ شمشیر نہیں

شاعر کہتا ہے کہ عشق کے آزار اور تکلیف میں جو لذت ہے اس کا کوئی جواب نہیں ہے۔ جی چاہتا ہے کہ اس لذت سے خوب لطف اندوز ہوں۔ مگر چوں کہ راہِ وفا سراسر تلوار کی دھار ہے۔اس لئے پہلے ہی قدم پر موت واقع ہوجاتی ہے۔ لہٰذا افسوس ہے کہ لذت آزار کی حسرت دل ہی میں رہ جاتی۔

Advertisement

چوتھا شعر

رنج نو میدی جاوید! گوارا رہیو!
خوش ہوں گر نالہ زبونی کشِ تاثیر نہیں

شاعر کہتا ہے کہ خدا کرے مجھے دائمی مایوسی اور ناامیدی گوارار ہے۔اب میں اس حالت سے بہت خوش ہوں کیوں کہ کم ازکم اس حالت سے میرے نالے،تاثیر کے احسان کی ذلت اٹھانے سے تو محفوظ رہیں گے۔

پانچواں شعر

سر کھجاتا ہے، جہاں زحمِ سر اچھا ہو جائے
لذّتِ سنگ بہ اندازۂ تقریر نہیں

جس وقت میرا سر اچھا ہونے لگتا ہے تو میرے سر میں کھجلی ہوتی ہے۔میٹنگ گویا جی چاہتا ہے کہ لڑکے پھر مجھے پتھر ماریں اور زخم لگائیں اور پتھر کھانے میں کچھ ایسا لطف ہے جو بیان سے باہر ہے۔

Advertisement

ساتواں شعر

غالب! اپنا یہ عقیدہ ہے بقول ناسؔخ
آپ بے بہرہ اور جو معتقد میؔر نہیں

مقطع میں غالب نے میؔر کی پٹرول پمپس استاد کا اعتراف کیا ہے۔ناسخ اردو غزل کے ایک مشہور شاعر کا تخلص ہے۔ اب غالب کہتے ہیں کہ ہمارا یہ عقیدہ ہے، ایمان ہے کہ جو شخص میر تقی میر کو پیغمبر سخن نہیں مانتا اور شاعری میں ان کی پیروی نہیں کرتا وہ تو بے بہرہ اور بدنصیب ہے۔

Advertisement

Advertisement

Advertisement