Advertisement
موت جس کے قریب آتی ہے
زندگی اُس سے روٹھ جاتی ہے

اک پری رات کے اڑھائی بجے
مجھ کو روز اپنے گھر بلاتی ہے

نیند کھلتی نہیں مِری جب تک
تتلی دروازہ کھٹکھٹاتی ہے
Advertisement

Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement