Advertisement

فیض کی بعض نظمیں سیاسی رنگ میں ہیں جو کہ زیادہ تر امن کے پیراے میں ہیں۔ اس کے سامنے 1947ء کے واقعات آئے ہیں۔ تنہائی اس کی طرف اشارہ کرتی ہے۔ یہ تمثیلی پیرائے میں فیض کی نظم ہے۔ یہ نظم تاریخی اور سیاسی اہمیت کی حامل ہے۔ جدیدیت اور حقیقت دونوں کی ترجمان ہے۔ حسن و عشق ،جام ومینا کی محفلیں اب ختم ہوگیں۔ آپ مجھے روشنی کی ضرورت نہیں۔ یہ تخیلات کی دنیا مٹا دو۔ یہاں کوئی نہیں آئے گا۔

Advertisement
Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement