Advertisement

‌ہریانہ کےتاریخی شہر پانیپت کےرہنےوالےتھےھالی اُردو کےشایر و سب سے پہلے آلوچک کےطور پر پرکھیات تھے’ہالی’ صاحب کا جنم 11 نومبر 1837 ئی . میں ہوا।انکےوالد کا نام ئیجد بکھش و والدہ کا نامامتا – اُل – رسول تھا। جنم کےکچھ وقت کےبعد ھی کہانی والدہ کا دہانت ھو گیا। ‘ہالی’ جب نو سال کےتھےتوانکےوالد کا دہانت ھو گیا।ان حالات میں ‘ہالی’ کی تعلیم کا سمچت انتظام نہیںھو سکا। خاندان میں تعلیم – حاصل لوگ تھے , اسلئے یہ اَربی و پھارسی کا علم حاصل کر سکی। ھالی کےمن میں تحقیق کےفی گہرا لگاو تھا। ھالی کےبڑےبھائیامداد حسین و اُنکی دونوںبڑی بہنونامتا – اُل – حسین و وجیہ – اُل – نساںنےھالی کی خواہش کےورودھ اُنکا شادیاسلام – اُل – نساںسےکر دیا। اپنی پاروارک صورتحالیوںکو وہ اپنے تحقیق کےشؤک کو جاری رکھنےکےاَنکول نہیںپا رہےتھے , تو 17 سال کی عمر میں گھر سےدلی کےلئے نکل پڑے , اگرچہ یہاںبھی وہ اپنے تحقیق کو ویوستھت ڈھنگ سےنہیںچلا سکی। اسکی بارےمیں ‘ہالی کی کہانی ھالی کی جبانی’ میں بڑےپشچاتاپ سےلکھا کہ ‘ڈیڑھ برس دلی میں رہتےہوئے مینےکالج کو کبھی آنکھ سےدکھا بھی نہین’। 1956 ئی . میں ھالی دلی سےواپس پانیپت لوٹ آئی। 1956 میں ھالی نےھسار جلادھیش کےدفتر میں نوکری کر لی। 1857 کےآزادی – سنگرام کےدوران دیگر جگہوںکی طرح ھسار میں بھیانگریزی – حکمرانی انتظام ختم ھو گئی تھی , اس باعث اُنہیںگھر آنا پڑا। 1963 میں نواب مہممد مستپھا کھاںشیپھتا کےبیٹےکو تعلیم دنےکےلئے ھالی جہانگیرابعد چلےگئی। 1869 ئی . میں نواب شیپھتا کی موت ھو گئی। اسکی بعد ھالی کو روجگار کےسلسلےمیں لاہور جانا پڑا। وہاںپنجاب گورنمیںٹ بک ڈپو پر کتابوںکی زبان ٹھیک کرنےکی نوکری کی। چار سال نوکری کرنےکےبعد ائےنگلو – اَریبک کالج , دلی میں پھارسی و اَربی زبان کےسب سے اہم اَدھیاپک کےطور پر کام کیا। 1885 ئی . میں ھالی نےاس عہدہ سےتیاگ خط دے دیا। پھرشتےسےبہتر ہےانسان بننا , مگر یہ پڑتی ہے محنت جیادا। یہی ہےابعدت یہی دین و ئیمان। کےکام آمدنی دنیا میںانساںکیانسان।। مؤلانا اَلتاپھ حسین ‘ہالی’ ھریانا کےتاریخی شہر پانیپت کےرہنےوالےتھی। پانیپت شہر کی کھیات دو اسباب سےرہی ہے। ایک تو یہ تین ایسے لڑائیوںکا میدان رہا ہے جس نے کی ہندوستان کی تکدیر بدلی। دوسرے , اسلئے کہ ساجھی سنسکرت کےظاہر مشہور سوپھی کلندر و شمال بھارت کےنوجاگرن کےاَگردوت مؤلانا اَلتاپھ حسین ‘ہالی’ کا تعلق اس شہر سےتھا। ھالی اُردو کےشایر و سب سے پہلے آلوچک کےطور پر پرکھیات ہیں। ھالی کو اُردو تک سیمت نہ کرکےھندستانی کا شاعر و آلوچک کہنا زیادہ زکر بالا ہے। ھالی نےعام لوگوںکی زبان یعنی ھندستانی زبان میں کوتااوںکی تخلیق کی। تم اگر چاہتےھو ملک کی کھیر। ن کسی ھم وطن کو سمجھو گیر।। اُن کی کوتااوںکی زبان سےمتاثر ھوکر مہاتما گاندھی نےکہا تھا کہ ‘اگر ھندستانی کا کوئی نمونا ہے تو وہ ھالی کی ‘مناجاتےبیوا’ شاعری کی زبان ہے।’ ہالی کےدور میں سماج میں بڑی تیزی سےتبدیلی ھو رہےتھی। 1857 کےآزادی – سنگرام نےبھارتی سماج پر کئی بڑےگہرےاثر ڈالےتھی। اَنگریج شاسکوںنےاپنی نیتیوںمیں بھاری تبدیلی کئی تھی। عام عوام بھی سماج میں تبدیلی کی ضرورت محسوس کر رہی تھی। سماج نئے خیالات کا خیرمقدم کرنےکو بیچین تھا। مہاتما جوتبا پھولے , سوامی دیانند سرسوتی , خدا چندر ودیاساگر , سر سیید احمد کھاںوغیرہ سماج سدھارکوںکےآندولن بھارتی سماج میں نئی جاگرت لا رہےتھی। سماج میں ھو رہےتبدیلی کےساتھ ادب میں بھی تبدیلی کی ضرورت محسوس کی جا رہی تھی। اس بات کو جن ادبکاروںنےپہچانا اور ادب میں تبدیلی کا آگاج کیا , ان میں ھالی کا نام اَگرنی پنکت میں رکھا جا سکتا ہے। جان جب تک نہ ھو وطن سےجدا , کوئی دشمن نہ ھو وطن سےجدا।। کؤم پر کوئی جد نہ دیکھ سکی। کؤم کا ھالےبد نہ دیکھ سکین।। میج کرسی اگر لگتےہیں آپ। کؤم سےپوچھئی تو پن ہے نہ پاپ।। سینا کوبی میں رہےجب تک کےدم میں دم رہا। ہم رہےاور کؤم کیاقبال کا ماتم رہا।। کؤم سےجان تک اَجیج نےھو। کؤم سےبڈھ کےکوئی چیز نہ ھو।। ملک – کؤم کی فکر ھی ھالی کی رچنااوںکی مولچنتا ہے।کؤم کی ئیکتا , بھائیچارا , برابری , آجادی و جنتنتر کو قائم کرنےوالےخیال و مولےہالی کی رچنااوںمیں موجود ہیں। یہی وہ مولےہیں جو آدھنک سماج کےبنیاد ھو سکتےہیں اور جنکو حاصل کرکےھی عام عوام سممانپورن جیون جی سکتی ہے। ہالی نےشایری کو ھسن -اشک و چاٹکارتا کےدلدل سےنکال کر سماج کی سچائی سےجوڑا। چاٹکار – ادب میں سماج کی واستوکتا کےلئے کوئی خصوصی جگہ نہیںتھی। رچناکار اپنی تصور سےھی ایک ایسی متھیا دنیا کا تعمیر کرتےتھےجسکا اصل میں سماج سےکوئی واستا نہیںتھا। اسکی مخالف ھالی نےاپنی رچنااوںکےمضمون اصل میں دنیا سےلئے اور اُنکےپرستتکرن کو کبھی سچائی سےدور نہیںھونےدیا। ھالی کی رچنااوںکےکردار ھاڑ – مانس کےجندا جاگتےکردار ہیں , جو جیون – صورتحالیوںکو بہتر بنانےکےجدوجہد میں کہیںجدوجہد کر رہےہیں تو کہیںپست ہیں। یہاںشاسکوںکےمککار دلال بھی ہیں , جو دھرم کا چولا پہنکر عوام کو پچھڑیپن کی طرف دھکیل رہےہیں , عوام میں پھوٹ کےبیج بوکر اُسکا بھائیچارا توڑ رہےہیں। ھالی نےادب میں نئے مضمون و اُنکی پرستت کا نیا راستہ کھوجا। اسکی لئے اُنکو تیکھےآکشیپوںکا بھی سامنا کرنا پڑا। ہر طرف درمیان میں دلال ہے , کچھ چھوٹ رہےہیں। دونوںھاتھوںسےگرج مندوںکو لوٹ رہےہیں। اَہلکاروںکا کچہری میجو دکھا بیوہار। سمجھیںدیوانےعدالت کو کےہے ایک باجار।। پیٹ پکڑےہوئے واںپھرتےہیں ھاجت والی। روا منہ کھلےہوئے بیٹھےہیں عدالت والی।। کیا پوچھتےھو کیونکر سب نکتاچیںہوئے چپ , سب کچھ کہا اُنہوں نے پر ہم نے دم نہ مارا। کوئی مرہم نہیںملتا جہاںمیں। مجھےکہتا ہے کچھ اپنے جبا میں।। ہالی کا عورتوں کےفی نجریا بہت خاص قسم کا تھا।وہ اُنکےمحنت , پیڑا , جدوجہد , دبھانت کو اپنی رچنااوںمیں مسئلہ آئی। ائے مااوں , بہنوں , بیٹیوںدنیا کےجننت تمسےہے। مدرکوںکی بستی ھو تمہی , کؤموںکیاججت تمسےہے।। یہ گوشت کا ایک لوتھڑا پروانا چڑہتا کس طرح , چھاتی سےلپٹائی نہ ھر دم رکھتی گر بچےکو مان। ہالی نےعورت کو بوجھ ماننےوالےپترستتاتمک سماج کو خوب لتاڑا اور اُنکےخیالات کو ماننےسیانکار کیا اور عورت کےاہم کو قبول کیا।انہوںنے کہا کہ یہ جہاں خوبصورت ہے تو عورت کےباعث ہے।ستری کےباعث ھی دنیا میں ئیمان بچا ہوا ہے। ھالی نےعورت کو جیون کا پریاےکہا ہے جو ھر صورتحال میں مرد کی سہیوگی ہے نا کہ اُس پر بوجھ। ہالی نےاپنے رچنااوںنےسماج کےپھیلاؤ میں عورتوں کی اہم زمہ داری ریکھانکت کرتےہوئے اُسکےمحنت کےاصل میں مولےکو پہچانا।ستری بچوںکا پالن پوشن کرکےاُسیانسان کہلانےلائق بناتی ہے। ھالی نےعورت کےمحنت کو گرما عطا کرتےہوئے کہا کہ یہ عورت کا ھنر ھی ہے کہ وہ مانس کےلوتھڑےکواتنا طاقتور بنا دتی ہے کہ وہ جہاں کےسب بحرانوںکا سامنا کرنےکےلئے تیار رہتا ہے। ماںکی گود سیڑہی کی طرح ہے جسکےخبر رساں سےشخصاتنی بلندی تک پہنچ سکےہیں। جہاںیہ بات سچ ہے کہ جہاں میں جتنےبڑا آدمی مرد ہوئے ہیں اُنکےبڑا آدمی بننےمیں عورت کی زمہ داری اہم رہی ہے وہیںیہ بات بھی سچ ہے کی سماج میں جس بھی عورت نےآگے بڑہنےکی بات سوچی ہے اُسےپہلےخاندان و رشتیداروںسےھی جدوجہد کرنا پڑا ہے। یہاںتک کہ جہاںوہ کام کرتی ہے اپنے ساتھیوں تک ایک عورت کو جدوجہد کرتےہوئے پایدان در پایدان آگے بڑہنا پڑتا ہے। ائےب لگنےلگےنججاری او ھدادی کو بیچتےپھرنےلگےجؤہرےآزادی کو نؤکری ٹھہری ہے لےدے کےاب اؤقات اَپنی پیشا سمجھےتھےجسے , ھو گئی وہ جات اَپنی اَب نہ دن اپنا رہا اور نہ رہی رات اَپنی جا پڑی گیر کےھاتھوںمیں ھر ایک بات اَپنی ہاتھ اپنے دلےآزاد سےھم دھو بیٹھی ئیک دؤلت بھی ھماری سو اُسےکھو بیٹھی ئس سےبڑھ کر نہیںجللت کی کوئی شان یہان کےھو ھم جنس کی ھم جنس کےکبجےمیںانان ئیک گللےمیں قوئی بھیڑ ھو اور کوئی شبان نسلےآدم میں کوئی ڈھور ھو کوئیانسان اَلتاپھ حسین کو ‘ہالی’ اسلئے کہا جاتا ہے کہ وہ یتھارتھوادی رچناکار تھےوہ رچنااوںمیں اپنے موجودہ کو اَبھویکت کرتےتھی। اُنہوں نے اپنے سماج کی سچائیوںکا پوری وشوسنییتا کےساتھ ذکر کیا। سمسامیک ذکر میں ھالی کی کھاسیت یہ ہے کہ وہ اپنے وقت میں گھٹت واقعات کےپیچھےکام کر رہی خیالدھارااوںکو بھی پہچان رہےتھی। مختلف سوالوں کےفی سماج میں مختلف قبیلوں کےروجھانوںکو نجدیکی سےدیکھ رہےتھے , اسلئے وہ اُنکو ئیمانداری اور وشوسنییتا سےظاہر کرنےمیں سکشم ھو سکی। اپنے لئے ‘ہالی’تکھللس چننا اُنکےسمسامیک ھونےو اپنے سماج سےگہرائی سےجڑنےکی خواہش کو تو درشاتا ھی ہے , ساتھ ھی اُنکےشخصتو کی ونمرتا و اُدارتا کو بھی درشاتا ہے। کوئی بھی ادبکار اَمر ھو جانا چاہتا ہے , تاریخ میں شاشوت ھونےکی لالسا بھارتی ادبکاروںمیں تو خصوصی طور پر رہی ہے। اسکی لئے ادبکار کیا – کیا پاپڑ نہیںبیلتے؟ اگر کوئی ادبکار اپنی رچنااوںکےبل پر ایسا کر سکنےمیں کامیاب نہ بھی ھو تو کم – سے- کم کوئی شاشوتتا کا آبھاس دنےوالا تکھللس لگاکر تو وہ مطمئن ھو ھی سکتا ہے। ھالی اَمر ھونےکےلئے اس طرح کی تکڑموںمیں نہیںپڑی। وہ اپنے وقت اور سماج سےگہرائی سےجڑی। اُنہوں نے اپنے وقت و سماج کےاَنترورودھوں- وسنگتیوںکو پہچانتےہوئے پرگتشیل و پرگتگامی شکتیوںکو پہچانا। اپنے لکھائی سےاُنہوں نے اس سچائی کو کایم کیا کہ ادب کےتاریخ میں اُسی رچناکار کا نام ہمیشہ – ہمیشہ کےلئے رہتا ہے جو اپنے وقت و سماج سےگہرےمیں جڑکر پرگتشیل شکتیوںکےساتھ ھوتا ہے। اپنے وقت و سماج سےدور ھٹکر صرف شاشوتتا کا راگ اَلاپنےوالےاپنے وقت میں ھی اَپراسنگک ھو جاتےہیں تو آنےوالےوکتوںمیں اُنکی کتنی پراسنگکتا ھو سکتی ہے?ئسکا اَنمان لگانا کسی بدھمان شخص کےلئے کٹھن کام نہیںہے। ‘ہالی’ نےاپنے جیون میں جیسا دکھا اُسکو اپنے خیالات کہ کسؤٹی پر کسکر اپنی رچنااوںکےخبر رساں سےسماج کےدرمیان مسئلہ آئی। ھالی جمین سےجڑےھائے پرگتشیل رچناکار تھی। ھالی صرف ایک نام نہیںبلکہ پوری ایک وراست ہے کسان کےجیون کو ھالی نےاپنی رچنااوںمیں جگہ دیا ہے।کسان کےجیون کو جس طرح اپنی رچنااوںمیں مسئلہ آئی ہیں وہ کسی دیگر ادبکار کی رچنااوںمیں ڈھونڈھنےپر بھی نہیںملتی। کسان کا پورا خاندان و کاروبار اُنکی کوتااوںمیں موجود ہے نہ اُسکےپالتو جانور چھوٹےہیں اور نہ ھی کھیتی میں کام آنےوالےاؤجار। موسم کی مار جھیلتا کسان بھی یہاںموجود ہے। ھالی نےکسان – مزدور , خاتون کےجیون کی سرلتا کےساتھ جیون سےجڑی ہوئی سمسیااوںکےمختلف پہلاوںکو اُجاگر کیا اور ان سے نپٹنےکی اپنی لیکھنی کےجرئی ایک نئی راہ دکھائی।جسےھالی جیسا پرگتشیل رچناکار ھی کر سکتا تھا।ہالی صاحب نےسماج کےھر پہلو پر اپنا رچناکرم کیا وہ سچےاور ئیماندار مصنف تھی। اُنکی کرنی اور کتھنی نےپھرک نہیںتھا। لکھے , جب تک جئی , سپھر نامی। چل دئی ھاتھ میں قلم تھامی।।

Advertisement

چیمکر خان منجی بھٹا ماجد
بھیو نے تحصیل گوہنہ ضلع سونپیٹ -131302 کو بھرایا
فون نمبر 9671504409

Advertisement
Advertisement

Advertisement
Advertisement