Advertisement

غزل

ہر کائنات سے یہ الگ کائنات ہے
حیرت سراے عشق میں دن ہے نہ رات ہے
اب اور آسماں ہے نہ دور حیات ہے
اے درد ہجر تو ہی بتا کتنی رات ہے
توڑا ہے لامکاں کی حدوں کو بھی عشق نے
زندانِ عقل!تیری تو کیا کائنات ہے
ہستی کو تیرے درد نے کچھ اور کر دیا
یہ فرق مرگ و زیست تو کہنے کی بات ہے
یہ موشگافیاں ہیں گراں طبع عشق پر
کس کو دماغِ کاوش ذات و صفات ہے
عنوان غفلتوں کے ہیں،فرصت ہو یا وصال
بس فرصتِ حیال فراقؔ ایک رات ہے

تشریح

ہر کائنات سے یہ الگ کائنات ہے
حیرت سراے عشق میں دن ہے نہ رات ہے

شاعر کہتا ہے کہ محبت کی دنیا باقی دنیا سے بالکل الگ ہے۔ یہ ایک حیرت سرا ہے اور عشق کی اس حیرت سرائے یعنی حیرت زدہ دنیا میں نہ کوئی وقت کا مسئلہ ہے اور نہ ہی کوئی دن اور رات کا تعین ہے۔گویا شب و روز برابر ہے۔

Advertisement
اب اور آسماں ہے نہ دور حیات ہے
اے درد ہجر تو ہی بتا کتنی رات ہے

کوئی بھی تکلیف ہو رات کو شدت اختیار کرتی ہے اور پھر ہجر کا درد تو اور بھی تکلیف دہ ہوتا ہے۔رات کاٹے نہیں کٹتی۔بہت لمبی ہوتی دکھائی دیتی ہے۔اب شاعر کہتا ہے کہ اس جدائی کی قدرت نے وہ کیفیت پیدا کر دی ہے کہ نہ آسمان کی گردش کا کچھ احساس ہو پا رہا ہے اور نہ کوئی زندگی کی علامت نظر آرہی ہے۔لہذا کتنی رات گزر چکی ہی اور کتنی باقی ہے،اندازہ نہیں ہو پا رہا ہے۔شاعر ہجر کے درد ہی سے پوچھ رہا ہے کہ تو ہی بتا دے کہ کس قدر رات بڑھ گئی ہے۔

Advertisement
توڑا ہے لامکاں کی حدوں کو بھی عشق نے
زندانِ عقل!تیری تو کیا کائنات ہے

شاعر کہتا ہے کہ عقل کے قیدی،اے اہل دانش و عقل تیری دنیا ہی کتنی ہے کہ کوئی جس کو نہ پا سکے۔ عشق نے تو ایک جست میں یہ دنیا چھوڑ دوسری دنیا کی حدوں کو لانگ دیا ہے۔پھر تیری دنیا کی کیا حیثیت ہے۔

Advertisement
ہستی کو تیرے درد نے کچھ اور کر دیا
یہ فرق مرگ و زیست تو کہنے کی بات ہے

شاعر کہتا ہے کہ اے محبوب تیرے درد محبت نے میری اس ہستی کو وہ رونق اور وہ چیز عطا کر دی ہے جس کو بیان نہیں کیا جا سکتا۔ ورنہ یہ زندگی موت تو ایک ہی سکے کے دو پہلو ہیں۔ان میں کوئی فرق ہی نہیں ہے۔ زندگی کا کوئی لطف نہیں ہے اور موت کا کوئی رنج نہیں ہے۔

عنوان غفلتوں کے ہیں،فرصت ہو یا وصال
بس فرصتِ حیال فراقؔ ایک رات ہے

شاعر کہتا ہے کہ ’’فرقت‘‘ بہ معنی جُدائی یا ’’وصل‘‘ بمعنی ملا دراصل بے خبری کے سبب سے دئیے گئے عنوانات ہیں۔ورنہ ایں فراق حقیقت یہ ہے کہ زندگی کی مہلت ہی بہت قلیل ہے۔محض ایک رات کی زندگی ہے تو پھر اس میں برکت کی کیا حیثیت اور وصل کی کیا بساط۔

Advertisement
Advertisement

Advertisement

Advertisement