Advertisement

آج عابد بہت زیادہ بیمار تھا۔ زکام و بخار نے ناک و سر میں دم و درد کر رکھا تھا۔ موسمِ سرما کا دَور تھا، ماحول نہایت ہی سرد اور خاموش کن تھا، چاروں جانب سرد ہَوائیں رقصاں تھیں، اور رات کی گود میں کوچہ کوچہ چپہ چپہ سنسان تھا۔ معلوم ہوتا تھا کہ سبھی جانداروں کا صفایا ہو گیا ہے۔ یہ رات کا آخری پہر تھا اِس لئے کائنات کا ذرہ ذرہ عالمِ سرشاری میں سویا ہوا تھا مگر عابد کو چَین نہ تھا۔

عابد حقیقی عابد تھا، جب سے ہوش سنبھالا تھا آخرت کی فکر میں دل و جان سے لگ گیا تھا۔ اٹھارہ سال کا خوش رنگ و حسین اور کھاتے پیتے گھر کا لڑکا تھا مگر چار سال بیت گئے تھے کبھی رات کا قیام نہیں چھوڑا۔ ہر رات اپنے گھر کے قریب موجود “رمضانی مسجد” میں جا کر ایک متعین مدت تک اللّٰه کی عبادت کِیا کرتا تھا۔ یہی سبب تھا کہ شدید علالت کے باوجود اُس کا دل تہجد کی عبادت چھوڑنے پر راضی نہیں ہو رہا تھا۔

Advertisement

اِس سے پہلے بھی وہ شدید بیماری کی حالت میں کئی بار رات کا قیام کر چکا تھا، لیکن اِس مرتبہ طبیعت زیادہ ہی خراب تھی، بدن قابو میں نا آتا تھا، بندہ چار سال سے روز رات جاگ جاگ کر بہت کمزور ہو گیا تھا۔ عابد کے والدین ایک الگ کمرے میں عابد کی حالت سے بے خبر لیٹے ہوئے تھے، اُنھیں یہ تو معلوم تھا کہ وہ بیمار ہے، مگر شدید بیمار ہے، یہ نہیں جانتے تھے، عابد رضائی اوڑھ کر لیٹا تھا اور اُس نے والدین کو اپنی کیفیت کی شدت ظاہر نا ہونے دی تھی۔

عابد کے کمرے میں بتیاں بجھی ہوئی تھیں، مگر ماں باپ کے کمرے سے ذری روشنی آ رہی تھی۔ عابد نے رضائی سے سر نکال کر لیٹے لیٹے ہی دھیان سے سامنے دیوار پر لگی گھڑی کو دیکھا۔ سَوا بارہ بج رہے تھے۔ ایک آہ کے ساتھ وہ فوراً اُٹھ کھڑا ہوا، بدن کانپتا جاتا تھا مگر کسی طور خود کو قابو کرتے ہوئے والدین کو آواز دی “مسجد جا رہا ہوں”۔ ماں باپ اپنے لڑکے کے معمول سے خوب واقف اور علالت کی شدت سے بے خبر تھے تو اندر سے دونوں نے ایک آواز میں کہا “جاؤ بیٹا! اللّٰه تمہیں بہترین اجر دے! ہم بھی ابھی ذری دیر عبادت کریں گے”۔ والدین بڑے ہی مخلص و پارسا تھے، خود بھی بڑے عبادت گزار تھے، اِسی لئے تو عابد کا یہ رنگ تھا۔

Advertisement

عابد نے گرم لباس پہنے، ٹوپی لگائی، دروازے کے قریب پہنچ کر سلام کِیا اور در مفتوح کر کے باہر نکلا۔ جیوں ہی باہر قدم رکھا اِک نہایت سرد ہَوا کا جھونکا وجود کو ہلا دینے والی کپکپی اُسے عطا کر گیا۔ بدن کو جھنجھوڑ کر اُس نے چلنا شروع کِیا کہ تبھی ہلکی ہلکی بارش شروع ہو گئی، اُس نے ہمت بنائے رکھی اور رمضانی مسجد کی جانب چلتا رہا۔ بارش کی برفیلی بوندیں عابد کے تپتے وجود پر تیزاب کا سا کام کر رہی تھیں۔ گلیاں تاریک و سنسان تھیں، رمضانی مسجد دو گلیوں کے پار تھی۔ علالت بڑھتی جا رہی تھی، وہ کبھی اِتنی دشواری سے دو چار نہ ہوا تھا۔ بارہا گرنے کو ہوتا تھا مگر اُس کی زبان کہے جا رہی تھی “اِنَّ مَعَ الۡعُسۡرِ یُسۡرًا” (یقینن مشکل کے ساتھ آسانی ہے)۔ وہ مکانوں کی دیواروں کا سہارا لے لے کر گڈھوں والی، کیچڑ سے بھری اور ٹیڑھی میڑھی گلیوں کو پار کرتا گیا حتیٰ کہ مسجد پہنچ گیا۔

Advertisement

مسجد میں بہت ذرا سا اجالا تھا، وضو خانے میں جا کر اُس نے اپنے کپڑوں پر سے کیچڑ کے اثرات کو مٹایا اور برفیلے پانی سے کانپتے کانپتے وضو بنایا۔ عابد نے دیکھا کہ نیچے کی منزل پر ایک دو سن رسیدہ عبادت میں مشغول ہیں، وہ اوپر کی منزل پر چلا گیا جو خالی تھی۔ اب عابد اپنے رب کے سامنے کھڑا ہوا اور خلوصِ قلب و روح کے ساتھ عبادت میں لگ گیا۔ پورا وجود بری طرح تھرتھرا رہا تھا مگر وہ قابو کئے جا رہا تھا۔ وہ علم کا بھوکا تھا، دو دو رکعت نماز پڑھتا جاتا اور بیچ بیچ میں قرآن مجید کی تلاوت کرتا اور تفسیر پر بھی غور کئے جاتا۔ بدن قابو کے باہر ہوتا جاتا تھا، کپکپاہٹ رکنے کا نام نہ لیتی تھی، لگ رہا تھا کہ ناک سے خون آ جائے گا، سر گھومے جا رہا تھا مگر عبادت میں کسر نہ ہوتی تھی۔ یوں ہی دو گھنٹے گزر گئے۔

عابد نے پھر دو رکعت کی نیت باندھی، رکوع سے اُٹھتے وقت کمر میں وہ شدید درد ہوا کہ عابد اُس کا تحمل نہ کر سکا اور پیچھے کی جانب چٹائی پر گر گیا۔ موسم طوفانی ہونے لگا، ندائے صائقہ بلند ہونے لگی۔ ذری دیر درد کو سمجھایا اور پھر نماز کی نیت باندھی، پہلی ہی رکعت میں پھر تڑپ کر نیچے گر گیا۔ بدن درد کے مارے ٹوٹا جاتا تھا، اور عشقِ الٰہی کی تاب کم نہ ہوتی تھی۔ پھر تڑپتے وجود کو گھسیٹ کر اُٹھایا اور تیسری مرتبہ نماز کی نیت باندھی۔ جان قابو میں نہ تھی، کبھی دائیں گرنے کو ہوتا تو کبھی بائیں، ہاتھ پاؤں برف ہوتے جا رہے تھے، یوں معلوم ہوتا تھا کہ کوئی اپنے وجود میں ایک بڑا بم وسفوٹ روکنے کی پرزور کاوش کر رہا ہے۔ عابد نے ہار نہ مانی، اور اپنے رب کی عبادت میں کسر نہ ہونے دی۔ کسی طرح تڑپتے وجود نے نماز مکمل کر لی۔ جیوں ہی تھرکتی ہوئی گردن نے سلام پھیرا، ایک تڑاک!!! کی سی آواز آئی اور عابد کا وجود چٹائی پر لمبا لمبا بکھر گیا۔ سانس لینا محال ہونے لگا، بدن بے جان سا ہو گیا۔

Advertisement

یہ عابد کا معمول تھا کہ وہ روز اِس وقت تک خود سے ایک ایسا سوال کِیا کرتا تھا جس سے اُس کے ایمان کو خوب تقویت ملے، اور ہمیشہ اُس کے ہر سوال کا جواب آپ سے آپ اُس کے ذہن میں آ جایا کرتا تھا، مانو الہام ہوتا ہو۔ اب، اِس عالمِ تاریک میں، عابد کے ذہن میں اُس کا آج کا سوال آیا۔ اُس نے من ہی من خود سے پوچھا:
“کیا مَیں پاگل ہوں، جو اِس طوفانی و سرد موسم میں، بقیہ لوگوں کی طرح گرم بستر اور رنگین خیالوں میں مگن رہنے کے بجائے شدید علیل ہونے کے باوجود، بارش میں بھیگتا اور سرد ہَواؤں کو خود میں جذب کرتا ہوا یہاں مسجد میں نفلی عبادت کے لئے آیا ہوں؟”۔

عابد کے سینے میں اِس سوال کا اُٹھنا تھا کہ بارش تیز ہو گئی، شدید بھیانک طوفان برپا ہو گیا۔ مسجد کی ویرانی میں آفاتِ قدرت کی یہ آوازیں دوگنا شور مچاتی تھیں اور باہر سے مسلسل کچھ ٹوٹنے اور چُور ہونے کی آوازیں آنے لگیں۔ دلِ عابد سے آہ نکلی “جواب!”،،، “جواب!”،،، “جواب!!!!!!!”۔ یکدم ایک روحانی ندا عابد کے اُذن میں آنے لگی: عابد!

Advertisement
تجھے رحیم کے وجود پر یقین ہے
تجھے یقین ہے یہ عارضی زمین ہے
تُو جانتا ہے یہ کہ قبر میں اندھیرا ہے
ہزار زہر ناک جیووں کا بسیرا ہے
تجھے یقین ہے تُو پاس میرے آئے گا
تِرے ہر ایک کرم کا بدل تُو پائے گا
یہی سبب ہے تیرے زخمی دل کی آہ کا
ہمیں ہے علم تیری ایک ایک چاہ کا
جو سو رہے ہیں جانتے نہیں عذاب کو
ذلیل کر رہے ہیں نور کی کتاب کو
ہم ایک دن اُنھیں دکھائیں گے تباہیاں
وہ بھول جائیں گے کباب اور مٹھائیاں
زکوم کھائیں گے پئیں گے تلچھٹوں کا آب
کباب کھا رہے ہیں بَن بھی جائیں گے کباب
اُنہیں اُس امتحان کا ہے خوف جو ہے دُور
نہیں خبر کہ کب دبوچ لیں اُنھیں قبور
تجھے یقیں ہے میری دَین زندگانی ہے
تُو جانتا ہے جان کس جگہ لگانی ہے
ملال چھوڑ دے! تِری جزا عظیم ہے
اے عابدِ احد! تِرا خدا کریم ہے

یہ سننا تھا کہ عابد کے نیلے پڑ گئے دہن پہ شادمانی نمود ہوئی۔ موسم بالکل خاموش ہونے لگا تھا۔ عابد بے حرکت پڑا تھا، آنکھیں بند ہونے کو ہوتی تھیں۔ یکایک عابد کی زبان حرکت کرنے لگی، مانو کچھ کہنا چاہتی ہو۔ زبانِ عابد سے بے ساختہ نکلا:

لا اله الا اللّٰه
محمد الرسول اللّٰه

اِس کلمہ کے بعد مسجد بالکل خاموش ہو گئی، اِتنی خاموش کہ اگر وہاں کوئی سانس لے رہا ہوتا تو اُس کے سانس بھرنے کی بھی آواز صاف سنائی دیتی۔

Advertisement
تحریرعزیؔز اختر
Advertisement