Advertisement

اکبر نے اپنی شاعری کا آغاز غزل گوئی سے کیا۔ شاعری میں اکبر کے استاد وحید الدین وحید اللہ بادی تھے۔ ان کا سلسلہ بشیر علی بشیر کڑوی سے ہوتے ہوئے آتش اور مصحفی تک پہنچتا ہے۔ اکبر کی ابتدائی دور کی شاعری میں وحید الہ آبادی کا رنگ صاف نظر آتا ہے۔

اکبر کی شاعری کا پہلا دور روایتی شاعری کا دور تھا جس میں عشقیہ مضامین کی کثرت نظر آتی ہے۔ اس دور میں بھی اکبر اپنے انداز اور اعتبار سے منفرد نظر آتے ہیں۔ غزل کی پہچان عشقیہ مضامین میں ضرور ہے لیکن اکبر کی شاعری میں حسن و عشق معاملات کا وہ ذکر نہیں ملتا ہے جو کلاسیکی شاعری میں نظر آتا ہے۔

Advertisement

مثال کے طور پر اکبر کا محبوب خیالی نہیں ہے بلکہ انسانی اور حقیقی ہے۔ اس کی جفا و وفا کا انداز بھی جداگانہ ہے۔ اس سلسلے کے چند اشعار ملاحظہ ہوں:

محبت کر کے ان سے پھنس گئے ہیں ہم تو آفت میں
نہ دل قابو میں آتا ہے نہ ان پر زور چلتا ہے
ادھر ہم سے بھی باتیں آپ کرتے ہیں لگاوٹ کی
ادھر غیروں سے بھی کچھ عہدوپیماں ہوتے جاتے ہیں

اس کے علاوہ اس دور میں ہمیں تصوف اور اخلاق سیاسی شعور سے متعلق اشعار بھی کثرت سے ملتے ہیں۔ مثال کے طور پر یہ شعر ملاحظہ ہوں:

Advertisement
ہم نے مخلوق میں ھلک کی تجلی پائی
دیکھ لی آئینہ میں آئینہ گر کی صورت
خدا کا گھر بنانا ہے تو لے نقشہ کسی دل کا
دیواروں کی کیا تجویز ہے واعظ یہ چھت کیسی
حباب آسا اٹھایا بحر ہستی میں جو سر اپنا
بنایا بس وہی موج فنا نے ہم سفر اپنا
ہم آہ بھی کرتے ہیں تو ہو جاتے ہیں بدنام
وہ قتل بھی کرتے ہیں تو چرچا نہیں ہوتا

لیکن رفتہ رفتہ اکبر کا ذہن پختہ ہوتا گیا اور وہ زمانے کے بدلتے ہوئے رنگ دیکھ رہے تھے۔ اس دور میں ادب اور سماج میں جو تبدیلیاں رونما ہوئیں اس کے اثرات اکبر پر بھی پڑے لہٰذا انہوں نے ان تبدیلیوں کو تسلیم کیا اور ساتھ ہی اپنی شاعری کا رخ بھی بدل دیا:

Advertisement
غزل ایسی پڑھو مملو جو ہو اعلیٰ مضامیں سے
کرو اب دوسرے کوچے میں اے اکبر گزر اپنا

اکبر کی شاعری کا دوسرا دور زریں دور کہا جاتا ہے۔ اس دور میں ملک کی سیاسی و سماجی حالات کے پیش نظر اکبر کی شاعری کا رنگ نکھر کر سامنے آیا۔ اس دور سے ہی اکبر کی شاعری میں ہمیں طنز و مزاح کا رنگ دیکھنے کو ملتا ہے جو شاعری کے آخری دور تک غالب نظر آتا ہے۔

1877ء میں اودھ پنچ کے اجرا نے اکبر کے اس جذبہ کو بروئے کار لانے کا کام کیا۔ اکبر کے عہد میں ہندوستانی تہذیب و معاشرہ بحرانی تنزلی کے دور سے گزر رہا تھا۔ غیر ملکی تہذیب وطن پر حاوی ہوتی جا رہی تھی لہٰذا انہوں نے اپنی شاعری کے ذریعے اس طلسم کو توڑنے کی کوشش کی۔

Advertisement

اس دور میں اکبر کی شاعری کے موضوعات کے بارے میں مغربی تہذیب کے نقائص کی نشاندہی اور اس کے مقلدوں کی تضحیک، غلط طرز فکر، مذہب سے بیگانگی، عقائد میں تبدیلی، آزادی نسواں، تحریک سے سید کی مخالفت اور مغربی تہذیب کی اندھی تقلید کے برے نتائج سے آگاہ کرنا۔

اس کے لئے سب سے بہترین ذریعہ طنزومزاح تھا۔ لہٰذا انہوں نے یہی رنگ اختیار کیا۔ طنز وہ مرکب جذبہ ہے جس میں محبت کا سوز، ناکام خواہشوں کی تلخی، مایوسی اور غم و غصہ، نفرت اور حقارت یا بے انصافی، بے اعتدالی یا بدنمائی کو دور کرنے کی خواہش یا آرزو ہو۔

Advertisement

مزاح کا سبب وہ احساس جو بے ترتیب یا بے ہنگم، بھونڈے اور غیر متوازن رویے، شخص یا منظر کو دیکھ کر محسوس ہو اور جس کے سبب مزاح نگار ہنستا ہے اور اپنے ساتھ اس خوشی میں دوسروں کو بھی شریک کرتا ہے۔

تبدیلی قدرت کا قانون ہے لیکن ایک وقت کے بعد فطری طور پر چیزوں میں تبدیلی کے آثار نمودار ہوتے ہیں۔ اکبر کا دور بھی تبدیلیوں کا دور تھا۔ اکبر تبدیلی اور ترقی کے مخالف نہیں تھے وہ اس بدلتی ہوئی تہذیب کے مخالف تھے جو اپنی اصل سے دور لے جاتی ہے اور مذہب سے لاتعلقی کا سبب بنتی ہے۔ مثال کے طور پر چند اشعار ملاحظہ ہوں:

Advertisement
مذہب چھوڑو، ملت چھوڑو، صورت بدلو عمر گنواؤ
صرف کلرکی کی امید اور اتنی مصیبت توبہ توبہ
شوق لیلائے سول سروس نے اس مجنون کو
اتنا دوڑایا لنگوٹی کر دیا پتلون کو

اکبر نے سر سید تحریک کو خاص طور پر اپنے طنز کا نشانہ بنایا۔ سرسید چونکہ جدت پسند تھے اور ملک و قوم کو مصلحتاً ترقی کی راہ پر گامزن کرنا چاہتے تھے۔ وہ چاہتے تھے کہ لوگ انگریزی تہذیب کو اختیار کریں اور مذہب کا قوم کی صف میں شامل ہوں۔

اکبر اس تبدیلی کے مخالف تھے۔ وہ تہذیب و مذہبی عقائد میں تحریف کے قائل نہ تھے۔ ان کو مشرقی تہذیب اور ہندوستانی روایت سے عشق تھا۔ سرسید کی فکر اور ان کے طرز تعلیم کے مخالف پر مبنی چند اشعار ملاحظہ ہوں:

Advertisement
نظر ان کی رہی کالج کے بس علمی فوائد پر
گرا کیں چپکے چپکے بجلیاں دینی عقائد پر

سید سے آج حضرت واعظ نے یہ کہا
چرچا ہے جا بہ جا تیرے حال تباہ کا

سمجھا ہے تو نے نیچر و تدبیر کو خدا
دل میں ذرا اثر نہ رہا لا الہ کا

میں تجھ سے ترک صوم و صلوۃ زکوۃ حج
کچھ ڈر نہیں جناب رسالت پناہ کا

شیطان نے دکھا کے جمال عروس دہر
بندہ بنا دیا تجھے حب جاہ کا

اس نے دیا جواب کہ مذہب ہو یا رواج
راحت میں جو مخل ہو وہ کانٹا ہے راہ کا

یورپ کا پیش آئے اگر آپ کو سفر
گزرے نظر سے حال رعایا و شاہ کا

دعوت کسی امیر کے گھر میں ہو آپ کی
کم سن مسوں سے ذکر ہو الفت کا چاہ کا

مغربی تہذیب کے غلبے حاکم وقت کی طرز معاشرت کی تقلید اور مذہب بننے کے ساتھ عورتوں کی تعلیم اور آزادی کا مسئلہ بھی اٹھا۔ اکبر اس کے شدید مخالف تھے۔ وہ اس تبدیلی کو قوم کے حق میں مضر خیال کرتے تھے۔ بے پردگی آج بھی ایک اہم مسئلہ ہے۔

اکبر نہیں چاہتے تھے ہمارے ملک کی عورتیں بے پردہ رہیں تعلیم حاصل کرنے کی دوڑ میں اپنی تہذیب کو طاق پر رکھ دے اور آزادی سے کلبوں اور پارٹیوں میں جائیں۔اس سلسلے میں مثال کے طور پر چند اشعار ملاحظہ ہوں:

Advertisement
پردہ اٹھ جانے سے اخلاقی ترقی قوم کی
جو سمجھتے ہیں یقیناً عقل سے فارغ ہیں ہو
سن چکا ہوں میں کہ کچھ بوڑھے بھی ہیں اس میں شریک
یہ اگر سچ ہے تو بے شک پیر نابالغ ہیں وہ
بے پردہ کل جو آئیں نظر چند بیبیاں
اکبر زمیں میں غیرت قومی سے گڑ گیا
پوچھا جو ان سے آپ کا پردہ وہ کیا ہوا
کہنے لگیں کہ عقل پہ مردوں کے پڑ گیا

اکبر کی شاعری فکر و فن کا اعلیٰ نمونہ ہے۔ اکبر کا تعلق چونکہ کلاسیکی شاعری سے تھا۔ جیسا کہ اکبر کی شاعری کا نسب مصحفی سے ملتا ہے۔ لہذا اکبر نے بھی اس شجرہ کی لاج رکھی اور اپنی شاعری میں فن کے اعلیٰ نمونے پیش کیے۔ چند مثالیں پیش ہیں:

تشبیہ

داغ ہائے سینہ گل ہیں آہ سرد اپنی نسیم
گلشن ہستی میں کیا اچھی ہوا کھاتا ہے دل

رعایت لفظی

رسائی زلف نے پائی قدم تک اب وہ کیوں آئیں
بہانہ خوب ہاتھ آیا کہ پابند سلاسل ہوں

روزمرہ محاورہ

تم نے بیمار محبت کو ابھی کیا دیکھا
جو یہ کہتے ہوئے جاتے ہو دیکھا دیکھا
بتوں کے پہلے بندے تھے مسوں کے اب ہوئے خادم
ہمیں ہر عہد میں مشکل رہا ہے باخدا ہونا
Hina Maheenwritten by

Advertisement
Advertisement

Advertisement