Advertisement
  • کتاب “ابتدائی اردو” برائے پہلی جماعت
  • سبق نمبر25: نظم
  • شاعر کا نام:صوفی تبسم
  • سبق کا نام: حمد

صوفی تبسم کی حمد کی تشریح

جس نے بنائی دنیا
جس نے بسائی دنیا

یہ شعر صوفی تبسم کی نظم حمد سے لیا گیا ہے۔ اس شعر میں شاعر اس دنیا کو تخلیق کرنے والی پاک ذات کی تعریف کرتے ہوئے کہتا ہے کہ اللہ کی ذات پاک ہے جس نے یہ دنیا نہ صرف بنائی ہے بلکہ اس دنیا میں موجود ہر ایک شے بھی اسی پاک ذات کی بنائی گئی ہے اسی نے اس دنیا کو بسایا بھی ہے کہ اس میں انسان اور جاندار بسائے۔

گُلشن کھلائے جس ںے
دَریا بَہائے جِس نے

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اس دنیا کو بسانے والے اللہ تعالیٰ ہی کی پاک ذات ہے کہ اس نے محض اس دنیا کی تخلیق ہی نہیں کی بلکہ اللہ تعالیٰ ہی نے اس دنیا میں گلشن یعنی باغ کھلائے اور اس دنیا میں جو دریا بہہ رہے ہیں ان دریاؤں کو روانی دینے والی پاک ذات بھی اللہ کی ہے۔

Advertisement
جِس نے بَنائے سارے
یہ چاند اَور تارے

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اللہ کی ذات وہ ذات ہے جس نے اس دنیا میں موجود ہر ایک چیز کو تخلیق کیا۔ یہ آسمان پہ جو چاند اور تارے ہمیں دکھائی دیتے ہیں یہ بھی اللہ کی قدرت کے کرشمے ہیں۔

Advertisement
مُجھ کو بھی زِندگی دی
تُجھ کو بھی زِندگی دی

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اللہ تعالیٰ نے کائنات اور میں موجود ہر ایک شے کو تو تخلیق کیا ہے لیکن مجھے بھی زندگی دینے والی ذات اللہ تعالیٰ کی ہے۔ صرف مجھے ہی نہیں بلکہ تمھیں اور اس کائنات کے ہر ایک انسان اور جاندار شے اللہ نے زندگی بخشی ہے۔

Advertisement
سارے جَہاں کا مَولا
سارے جَہاں کا داتا

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اس ساری دنیا سارے جہان کا مولا اور مالک اللہ تعالیٰ ہے۔ وہی اس جہان کا داتا یعنی عطا کرنے والا بھی ہے۔

مشق: ان لفظوں کو لکھوائیے۔

بَنائی ، دُنیا ، دَریا ، زِندگی

Advertisement

نیچے دیے ہوئے لفظوں کے حروف الگ الگ لکھوائیے۔

داتا= د + ا + ت + ا
گلشن= گ + ل + ش + ن
تارے= ت + ا + ر + ے
جَہاں= ج + ہ + ا + ں

حروف کو ملا کر لفظ بنوائیے۔

م + و + ل + ا =مولا
س + ا + ر + ے =سارے
چ + ا + ن + د =چاند
ز + ن + د + گ + ی =زندگی

ان لفظوں کو پڑھوائیے۔

گُلشَن ، چاند ، تارے ، دَریا ، زِندگی ، مَولا۔

Advertisement

Advertisement