بطخ پر ایک مضمون

پوری دنیا میں جانوروں اور پرندوں کی بہت ساری اقسام پائی جاتی ہیں۔ بطخ بھی ان میں سے ایک آبی حیات ہے اور یہ زیادہ تر پانی میں ہی اپنی زندگی گزارتی ہیں۔ بطخ زیادہ تر میٹھے پانی کے تالاب اور سمندر میں پائی جاتی ہے۔ بطخ کی تقریباً 40 سے زیادہ قسمیں ہوتی ہیں۔ ان کی کچھ نسلیں انٹارٹیکا کے ٹھنڈے پانی میں بھی اپنی زندگی بسر کر سکتی ہیں۔ بطخ ہنس کی قسموں کی سب سے چھوٹی قسم ہے۔ بطخ کے پر ریسڈیوٹر ہوتے ہیں جس کی وجہ سے پورا دن پانی میں رہنے کے بعد بھی اس کے پر خراب نہیں ہوتے ہیں۔ بطخ کو آپ چڑیا گھر کے مصنوعی تالاب میں بھی دیکھ سکتے ہیں۔

بطخ کے پر چھوٹے اور نوکیلے ہوتے ہیں اور اس کی اوسط عمر 8 سے 10 سال ہوتی ہے۔ بطخ ایک سال میں 250 سے 300 انڈے دیتی ہے۔ مادہ بطخیں اپنے انڈوں پر بیٹھ جاتی ہیں تاکہ وہ انڈوں کو گرمی دے سکیں اور بطخ کے بچے 28 دن میں انڈوں سے باہر آجاتے ہیں۔ نر بطخ پروں کو پھیلاتے ہوئے افزائش نسل کے لئے مادہ بطخوں کو تیار کرتا ہے۔ بطخ سبزی خور جانور ہوتی ہیں ، پانی کے چھوٹے پودے ، چھوٹی مچھلیاں اور کیڑے وغیرہ ان کی خوراک ہوتی ہے۔ بطخ کے انڈے بہت بھاری اور مناسب عناصر سے بھرے ہوتے ہیں۔ بطخیں سمندر کے اندر کئی میل تک کا سفر طے کر سکتی ہیں۔

بطخ ظاہری شکل میں بہت خوبصورت ہوتی ہے اور مختلف رنگوں میں پائی جاتی ہے۔ اس کی چونچ چپٹی ہوتی ہے جو بہت خوبصورت لگتی ہے۔ اس کے پنجے جالی دار ہوتے ہیں ، جو انہیں تیرنے میں مدد کرتے ہے۔ جب بطخ بولتی ہے تو زلزلے کے جھٹکے کے جیسی ایک خاص آواز نکلتی ہے۔ یہ سیٹیوں کی آواز بھی نکالتی ہیں اور ان کی آوازیں آہستہ اور تیز ہوتی ہے۔

بطخ کی گردن لمبی ہوتی ہے لیکن ہنس کے مقابلے میں اس کی گردن چھوٹی ہوتی ہے۔ بطخ میں بھی تین محرم ہوتی ہیں۔ بطخوں کے گوشت اور انڈوں کی طلب کی وجہ سے لوگ بطخوں کو پالتے ہیں۔ بطخیں تازہ پانی میں رہنا پسند کرتی ہیں اور کچھ بطخیں درختوں پر آرام کرنا پسند کرتی ہیں ان کے منہ پر چھوٹے چھوٹے داغ ہوتے ہے۔ کچھ بطخیں اڑ سکتی ہیں اور کچھ بطخیں اڑ نہیں سکتی۔ ان کی ٹانگوں کی ایک خاصیت ہے کہ وہ برف والے پانی میں بھی سردی محسوس نہیں کرتیں۔ بطخوں کی نگاہ بہت اچھی ہوتی ہے اور وہ رنگوں کو بھی آسانی سے دیکھ سکتی ہیں۔ بطخ کھانے کی تلاش میں پانی میں گہری ڈوبکی لگا سکتی ہے۔ بطخ کے منہ کو بل بھی کہا جاتا ہے۔ بطخ بہت چھوٹا اور بہت ہی پیارا پرندہ ہے۔

Advertisements