Advertisement

مخدوم محی الدین کی نظم “حویلی” 19 اشعار پر مشتمل نظم ہے جس میں انھوں نے قدیم ہندوستان کی فرسودہ روایات اور افلاس کی منظر کشی کی ہے۔

Advertisement
ایک بوسیدہ حویلی یعنی فرسودہ سماج
لے رہی ہے نزع کے عالم میں مردوں سے خراج

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہ (ہندوستان) ایک پرانی حویلی ہے یہاں شاعر اس حویلی کو ایک پرانے (پرانی رسم و رواج کا پابند) سماج کی طرح لیتا ہے۔ یہ حویلی اپنی فرسودگی یعنی موت کے وقت بھی مردوں سے خراج لے رہی ہے۔ یعنی شاعر کے مطابق ہندوستان کی یہ روایات یہاں کے لوگوں سے خراج مانگتی ہیں۔

Advertisement
اک مسلسل گرد میں ڈوبے ہوئے سب بام و در
جس طرف دیکھو اندھیرا جس طرف دیکھو کھنڈر

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ وقت کی ایک مسلسل گرد میں اس حویلی کے تمام دروازے اور کھڑکیاں ڈوبے ہوئے ہیں۔ اس حویلی کے جس طرف بھی نظر دوڑائی جائے وہاں گرد اندھیرے اور کھنڈر کے سوا کچھ دکھائی نہیں دیتا ہے۔

مار و کژدم کے ٹھکانے جس کی دیواروں کے چاک
اف یہ رخنے کس قدر تاریک کتنے ہول ناک

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اس حویلی کی دیواریں اب سانپ اور بچھوؤں کا ٹھکانا بن چکی ہیں۔ اس کے راستے بہت زیادہ تاریک اور خوفناک ہیں۔

Advertisement
جن میں رہتے ہیں مہاجن جن میں بستے ہیں امیر
جن میں کاشی کے برہمن جن میں کعبے کے فقیر

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اس حویلی کے یہ راستے یا سانپ اور بچھوؤں کے وہ رخنے ہندوستان کے پسِ منظر میں اس سے مراد وہ جگہیں ہیں کہ جہاں یہاں کے مہاجن اور امیر لوگ مقیم ہیں۔ یہں پہ کاشی کے مقام کے برہمن بھی رہتے یں اور یہی جگہ کوبے کے فقیروں کا بھی ٹھکانہ ہے۔

رہزنوں کا قصر شوریٰ قاتلوں کی خواب گاہ
کھلکھلاتے ہیں جرائم جگمگاتے ہیں گناہ

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہاں رہزنوں یعنی لٹیروں کی مجلسیں بھی ہوتی ہیں اور یہی جگہ قاتلوں کی خواب گاہ بھی ہے۔یہاں پہ لوگوں کے جرائم ہنستے ہیں اور ان کے گناہ چمکتے دکھائی دیتے ہیں۔

Advertisement
جس جگہ کٹتا ہے سر انصاف کا ایمان کا
روز و شب نیلام ہوتا ہے جہاں انسان کا

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہ وہ جگہ ہے کہ جہاں پر انصاف اور ایمان کا سر کٹتا ہے۔ اس جگہ پہ دن اور رات میں انسان کی نیلامی اور ہوتی ہے اور وہ بکتا رہتا ہے۔

زیست کو درس اجل دیتی ہے جس کی بارگاہ
قہقہہ بن کر نکلتی ہے جہاں ہر ایک آہ

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہاں زندگی کو موت سبق دیتی ہے اور یہاں پہ موت کی بارگاہ میں ہر ایک آہ قہقہہ بن کر نکلتی اور گونجتی ہے۔

Advertisement
سیم و زر کا دیوتا جس جا کبھی سوتا نہیں
زندگی کا بھول کر جس جا گزر ہوتا نہیں

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہ حویلی جس سے مراد ہندوستان ہے یہ وہ جگہ ہے کہ جس جگہ پہ دولت اور پیسے کا دیوتا کبھی نہیں سوتا ہے اور جگہ پہ بھولے سے بھی زندگی کا گزر نہیں ہے یعنی اس جگہ کے لوگ مشینی زندگی گزار رہے ہیں۔

ہنس رہا ہے زندگی پر اس طرح ماضی کا حال
خندہ زن ہو جس طرح عصمت پہ قحبہ کا جمال

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہاں کا ماضی موجودہ زندگی کے حال پہ اس طرح سے ہنس رہا ہے کہ جیسے عزت و عصمت پہ شراب خانوں کا جمال ہنستا ہے۔

Advertisement
ایک جانب ہیں وہیں ان بے نواؤں کے گروہ
ہاں انہیں بے نان و بے پوشش گداؤں کے گروہ

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اس وطن میں ایک طرف بے نوا لوگوں کے گروہ رہتے ہیں تو وہیں پہ ایسے فقیروں کے گروہ بھی بستے ہیں کہ جو روٹی اور لباس تک کے لیے ترستے ہیں۔

جن کے دل کچلے ہوئے جن کی تمنا پائمال
جھانکتا ہے جن کی آنکھوں سے جہنم کا جلال

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ یہاں کے باسی وہ لوگ ہیں کہ جن کے دل کچلے جا چکے ہیں اور ان لوگوں کی تمناؤں کو پامال کر دیا گیا ہے۔یہاں کے لوگوں کی آنکھوں میں جہنم کا جمال رعب دکھائی دیتا ہے۔

Advertisement
اے خدائے دو جہاں اے وہ جو ہر اک دل میں ہے
دیکھ تیرے ہاتھ کا شہکار کس منزل میں ہے

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اے دونوں جہانوں کے خدا جو کہ ہر ایک کے دل میں بستا ہے۔ آج دیکھوں کے تمھارے ہاتھوں کا تخلیق کیا گیا شہکار یعنی انسان کس منزل پہ ہے۔

جانتا ہوں موت کا ہم ساز و ہم دم کون ہے
کون ہے پروردگار بزم ماتم کون ہے

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ مجھے معلوم ہے کہ موت کا ساتھی اور ہم ساز کون ہے۔ اس دنیا کا تخلیق کار یعنی پروردگار کون ہے اور یہاں کے ماتم کرنے والے لوگ کون ہیں۔

Advertisement
کوڑھ کے دھبے چھپا سکتا نہیں ملبوس دیں
بھوک کے شعلے بجھ سکتا نہیں روح الامیں

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ دین کے لبادے میں ملبوس کوئی بھی انسان کسی کے جسم پر موجود کوڑھ کے داغ دھبوں کو نہیں چھپا سکتا ہے اور نہ ہی کوئی روح الامین کسی کے بھوک کے شعلوں کو بجھا سکتا ہے۔

اے جواں سال جہاں جان جہان زندگی
ساربان زندگی روح روان زندگی!

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اے جوان سال یہ دنیا اور ساری زندگی کے خالق اور اس دنیا میں اونٹ اور اس کی زندگی کے رکھوالے اور زندگی کے روح رواں ۔

Advertisement
جس کے خون گرم سے بزم چراغاں زندگی
جس کے فردوسی تنفس سے گلستاں زندگی

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ جسم کے رواں دواں اور گرم خون سے ہی زندگی کی روشنیاں عبارت ہیں۔ اس دنیا کے جنت نما تصور سے ہی زندگی ایک باغ کی مانند محسوس ہوتی ہے۔

بجلیاں جس کی کنیزیں زلزلے جس کے صفیر
جس کا دل خیبر شکن جس کی نظر ارجن کا تیر

اس شعر میں شاعر کہتا ہے یہ وہ ملک ہے یا حویلی ہے کہ جس کے ہم آواز یہاں کی بجلیاں اور کنزیں ہیں۔ جن کا دل حضرت علی اکبر جیسا اور ان کی نظر ارجن کے تیر کی مانند تھی۔

Advertisement
ہاں وہ نغمہ چھیڑ جس سے مسکرائے زندگی
تو بجائے ساز الفت اور گائے زندگی

اس شعر میں شاعر کہتا ہے کہ اے حویلی وہ نغمہ چھیڑوں کہ جس سے زندگی مسکرانے لگ جائے۔ تم زندگی کا ساز یعنی نغمہ بجاؤ اور زندگی اس نغمے پہ گاتی رہے۔

آ انہیں کھنڈروں پہ آزادی کا پرچم کھول دیں
آ انہیں کھنڈروں پہ آزادی کا پرچم کھول دیں

اس شعر میں شاعر ایک صدا بلند کرتے ہوئے کہتا ہے کہ آؤ اور ہم ان تمام کھنڈرات پہ آزادی اور زندگی کا ایک نیا پرچم لہرائیں۔

Advertisement