Advertisement
ہم نے آنکھوں سے دیکھا نہیں ہے مگر
ان کی تصویر سینے میں موجود ہے
جس نے لا کر کلام الہی دیا
وہ محمد مدینے میں موجود ہے
پھول کھلتے ہیں پڑھ پڑھ کے صلے علٰی
چوم کر کہہ رہی ہے یہ باد صبا
ایسی خوشبو چمن کے گلوں میں کہاں
جو نبی کے پسینے میں موجود ہے
ہم نے مانا کہ جنت بہت ہے حسیں
چھوڑ کر ہم مدینہ نہ جائیں کہیں
یوں تو جنت میں سب ہے مدینہ نہیں
اور جنت مدینے میں موجود ے
چھوڑنا تیرا طیبہ گوارا نہیں
ساری دنیا میں ایسا نظارہ نہیں
ایسا منظر زمانے نے دیکھا نہیں
جیسا منظر مدینے میں موجود ہے

Advertisement

Advertisement