Advertisement

حالاتِ زندگی

محمد منشا یاد ۱۹۳۷ میں فاروق آباد کے قریب ٹھٹھہ نوشتر میں پیدا ہوئے تھے۔ انہوں نے اپنی پرائمری تعلیم گاؤں گجیانہ اور میٹرک کی ڈگری حافظ آباد سے حاصل کی۔ منشا یاد نے رسول پور کالج سے انجینئرنگ میں ڈپلوما حاصل کیا۔ انہوں نے پنجاب یونیورسٹی سے ۱۹۶۵ میں بیچلر آف آرٹس کی ڈگری حاصل کی۔ اس کے بعد منشا یاد نے اسی یونیورسٹی سے ایم اے اردو اور پنجابی پاس کیا۔

Advertisement

انہوں نے نہایت ہی کم عمری میں افسانے میں اپنی دلچسپی پیدا کی۔ ان کی والدہ نوجوان منشا کو پنجابی لوک گیت ، کہانیاں اور مقبول کہانیاں سناتی تھیں جو کہانیوں کے بیان کرنے کی تقریباً عادی ہوگئی تھیں اور مہمانوں سے بھی اسے کوئی کہانی سنانے کو کہتی تھیں۔ اس طرح کی پرورش نے ایک انجینئر کو ایک مختصر کہانی کے مصنف کی حیثیت سے تبدیل کردیا جو برصغیر میں ایک اچھے معیار کے مصنف کے طور پر ابھرا۔ منشا کے مطابق ان کی پہلی کہانی بچوں کے رسالے میں شائع ہوئی تھی جب وہ ساتویں جماعت کا طالب علم تھا۔

Advertisement

محمد منشاء یاد ۱۹۵۸ میں پی ڈبلیو ڈی بحالی میں پاکستان حکومت کی خدمات میں شامل ہوئے۔ ۱۹۶۰ میں انہوں نے سب انجینئر کی حیثیت سے سی ڈی اے میں پوسٹ کیا۔ انہوں نے اسی عہدے میں متعدد عہدوں پر خدمات انجام دیں۔

Advertisement

محمد منشا یاد خوش قسمت تھے کہ اکیڈمی کے ذریعہ ان کی زندگی اور ادبی کارناموں پر ایک عمدہ کتاب رواں سال شائع ہوئی ہے۔ کتاب میں ، سب سے وسیع مضمون منشا کے پڑوسی ضلع گوجرانوالہ سے مختصر کہانی کے مصنف اسلم سراج الدین نے حصہ لیا ہے۔

محمد منشا یاد نے ادبی سرگرمیوں میں بھی دلچسپی لی۔ ۱۹۷۲ میں انہوں نے اسلام آباد میں حلقہ ارباب ذوق قائم کیا۔ دارالحکومت میں یہ پہلا ادبی حلقہ ہے۔ بعدازاں ، اس نے مختلف دیگر تنظیموں کی بنیاد رکھی جس میں لختم والوں کی انجمن ، رباٹا ، بزم کتاب اور فکشن فورم شامل ہیں۔

Advertisement

ادبی کام

منشا یاد نے چھوٹی عمر میں ہی شاعری اور کہانی لکھنے میں دلچسپی لی۔ انہوں نے مختلف قلمی ناموں کو اپنایا لیکن بعد میں قلم کے نام سے "یاد” کو منتخب کیا۔ ساٹھ کی دہائی کے آغاز میں اسلام آباد ایک ویران جگہ تھی لیکن جب اس کی بحالی شروع ہوئی تو منشا نے وہاں ادبی معاشرے کے قیام کی کوشش کی۔ وہ راولپنڈی میں منعقدہ ہفتہ وار اربابِ ذوق کی ہفتہ وار ملاقاتوں کے لئے آئے ہوئے تھے۔ وہ اسلام آباد میں ایک حلقہ چاہتے تھے اور انھوں نے ممتاز مفتی جیسے مصنفین کے تعاون سے اسے فروغ پذیر حلقہ بنا دیا ، بہت سے نامور مصنفین ، نقادوں اور ہم عصر افسانہ نگاروں نے برصغیر کے اعلیٰ اردو رسالوں اور نثروں میں ان کی تخلیقی تصانیف کا اندازہ کیا ہے۔ منشا کو بہترین خراج تحسین پیش کیا، مرحوم امریتا پریتم نے جنہوں نے نہ صرف ان کی کہانیاں اپنے وقار رسالہ "ناگمانی” میں شامل کیں بلکہ گورمکھی اسکرپٹ میں اس کا ترجمہ اور نقل بھی کیا۔

منشا یاد نے ایک اردو ناول "راہیں” لکھا جو پنجابی میں "ٹانواں ٹانواں تارا” کے نام سے جانا جاتا ہے۔ اس کہانی نے بہت شہرت حاصل کی۔ پی ٹی وی نے اس ناول کی بنیاد پر ایک سپر ہٹ ٹی وی سیریل بنایا۔ اس ڈرامے کے کچھ حصے دریائے راوی کے کنارے واقع ایک گاؤں موہلنوال کی شوٹنگ میں ہیں۔اس ڈرامے میں پاکستان میں سماجی اور شہری لوگوں کے مسائل پر توجہ دی گئی ہے۔ یہ ہماری روایات اور جاگیرداروں ، انصاف اور تعلیم کی بالادستی کے گرد گھومتا ہے۔

Advertisement

اگرچہ منشا نے پنجابی میں مختصر کہانیوں کے صرف ایک مجموعے میں تعاون کیا ہے لیکن ان کا ناول ‘ٹانواں ٹانواں تارا’ پنجابی افسانے کا سنگ میل ہے۔ میر تنہا یوسفی اور نذیر کہوٹ نے پنجابی میں موٹے ناول لکھے ہیں۔ منشا کا خیال ہے کہ پنجاب میں ابتدائی تعلیم بچوں کی مادری زبان میں دی جانی چاہئے۔

ان کی شادی ۱۹۶۰ میں لاہور میں اپنی کزن فرحت نسیم اختر سے ہوئی تھی۔ ان کی ایک بیٹی اور تین بیٹے تھے۔

Advertisement

تصنیفی نام

ایک نوجوان کی حیثیت سے انھیں شاعری سے گہری دلچسپی تھی اور اس نے کئی قلمی ناموں پر غور کرنے کے بعد "یاد” کا انتخاب کیا۔ ان کی کام کی ذمہ داریوں نے انہیں تحریر میں شامل رہنے کے لئے بہت کم وقت دیا اور اس نے آہستہ آہستہ اسے شاعری کے علاوہ چھوڑ دیا۔ پھر بھی اس نے امید کی کہ قلمی نام آخر تک شاعری میں واپس آجائے گا۔ جیسا کہ وہ کہتے ہیں : "پتا نہیں نظم کے بھٹے سے کب سے دھواں اٹھنا شروع ہوسکتا ہے”۔ یاد نے انگریزی کی متعدد کتابوں کا ترجمہ بھی کیا۔

تصانیف

  • آپ کی چند تصانیف کے نام مندرجہ ذیل ہیں :
  • بند مٹھی میں جگنو
  • خلا اندر خلا
  • وقت سمندر
  • وگدا پانی
  • ماس اور مِٹی
  • درخت آدمی
  • دور کی آواز
  • خواب سرائے

محمد منشا یاد کا ۱۵ اکتوبر ۲۰۱۱ کو اسلام آباد میں دل کا دورہ پڑنے سے انتقال ہوگیا تھا۔ منشایاد اب اس دنیا میں نہیں رہے لیکن ان کی یادیں ہمیشہ موجود رہیں گی۔ اردو اور پنجابی ادب کے فروغ کے لیے ان کی خدمات کو تاریخ ادب میں آب زر سے لکھا جائے گا۔ ان کی یاد اس قدر خوب ہے کہ اسے دل سے بھلانا بعید از قیاس ہے۔

Advertisement
Advertisement

Advertisement

Advertisement