Advertisement

گاؤں نے بھہلا زیلا سونپیٹ -131302 بہایا
فون نمبر 9671504409

Advertisement

تیسویں اور چاليسوی میں ترقی پسند مصنف یونین کے مصنفین کے دور کے دوران فن کے لئے فن کے سوال پر بحث کی اور ادب کو مربع نظریات کی عکاسی کے طور پر سمجھا۔ انہوں نے تخلیقی ادب کی کل خودمختاری اور رسمی طور پر مختلف رجحانات کا تصور مسترد کر دیا۔ آزادی کے بعد ہندی اور اردو میں تخلیقی لکھنے والوں کی نئی نسل کو مغرب کے جدید ادب نے متاثر كيا ہے جس نے انسان کے تنہائی اور شناخت کو نقصان پہنچایا اور مشورہ دیا کہ ایک تخلیقی مصنف کسی بھی سیاسی جدوجہد کا حصہ نہیں ہو سکتا ہے جس نے تخلیقی کو متاثر بھیڑ کو کم کرنے کی کوشش کی ہے۔

Advertisement

تخلیقی لکھنے کی کل خود مختاری کے تصور اور مصنف کے وجود کی انفرادیت جدید مصنفین کے خیال کے مرکزی رجحانات تھے۔ اگرچہ ترقی پسند مصنف یونین کی آزادی کے بعد کلاس فورسز کے ارتباط میں گتاتمک تبدیلی کی وجہ 1953 کے بعد تحلیل ہو گياہے پھر بھی گجانن مادھو مكتبودھ اور یشپال جیسے ترقی پسند مصنفین کی ایک بڑی تعداد تھی جو جدید اور اوپچاركتاوادي رجحانات کے خلاف نظریاتی طور پر لڑ رہے تھے۔ ہندی ادب لیکن پچاس اور چھٹیوں کے دوران جدید ماہرین مؤثر تھے۔

Advertisement

ساٹھ کی دہائی كےكوتاورودہی تحریک اور غصہ نوجوان نسل کی مذمت ہندی ادب میں اسی جدید رجحان کی توسیع تھيي اگرچہ غصے کو جمود کی قوتوں کے لئے ہدایت کیا گیا تھا۔ ساٹھ کی دہائی کے دوران بھی کچھ جمہوری مصنف جیسے رگھوویر سہائے ہندی میں ادبی منظر نامے پر غلبہ حاصل کرنے والے عدمیت کے خیالات سے پربھا۔

سترہویں کے پہلے نصف کے دوران ہندی ادب میں ترقی پسند اور رجعت پسند نظریات کے درمیان خیالات کی ایک سخت جنگ دیکھی گئی۔ سماجی سطح پر یہ کانگریس؛ آئی کی قیادت میں آمرانہ حکومت کے خلاف بڑے تحریکوں کا دور تھاے جو بڑے سرمایہ داروں اور بڑے زمینداروں کے مفادات کی نمائندگی کرتا تھا۔ ہندی اور اردو ادب میں ادیب نے ایک بار پھر شوشے تشدد اور جبر کے خلاف آواز اٹھائی اور اس خیال کو برقرار رکھا کہ ادب محنت کش لوگوں کے ساتھ ہونا چاہئے۔ اس مدت کے دوران جمہوری تحریری کی ایک مضبوط لہر ابھرتی ہوئی ہے اور یہ بھی ہنگامی حالت کے دوران بھی دباؤ نہیں مل سکی. پرانی نسل کے تمام ترقی پسند مصنفین فعال ہوگئے اور ایک بار پھر تحریک میں حصہ لینے لگے۔

سترہویں کے بعد، جمہوریہ ادب غالب طاقت بن گیا اور یہ اسی آٹھوں کے دوران رہے۔ یہ نببی کی دہائی کے دوران ہندی اور اردو ادب میں شمال جوابات جدیدیت شكے نظریاتی کشیدگی کو ضم کرنے والے کچھ نئے رجحانات تھے۔ جمہوری مصنفین اتترادھنكتاواد سے پیدا ہوئے شونيوادي رجحانات کے خلاف ایک نظریاتی جدوجہد چھیڑنا هوگاے جس نے شوچاردھارا کا اتشے تاریخ کا بالآخر جمالیات کا بالآخر اور تمام وجوہات کی ختم اور روشن خیالی کی مدت کے تمام اقدار کا پرچار کیا۔ انسانی تاریخ کے بعد کے اوقات کے سائنسی خیالات اسی مدت کے دوران فرقہ وارانہ فاشسٹ نظریات کا عروج ہندی ادب میں اتترادھنكتاواد کی آڑ میں سنكيپن کے غیر معقول اپبھیدوں کے ابھر کر سامنے آئے کے ساتھ هاے جو مشرق حصوں کی سماجی شعور میں تبدیلی کی عکاسی کرتا ہے۔ لیکن 20 ویں صدی کے آخر میں جوابات جدیدیت کے بتدریج کشی دیکھا جا رہا هےے جو ہندوستان جیسے مربع تقسیم معاشرے میں ورگورودھ کو نظر انداز کرکے سماجی حقیقت کی وضاحت نہیں کر سکتا ہے۔ نئی صدی ایک بار پھر طبقاتی خیالات کی ایک شدید جنگ کا گواہ بنے گی جب تمام طبقات کے استحصال کی حیثیت نہیں ہوگی کہ وہ آنے والے تمام زمانے کے لئے جھوٹے شعور کے فروغ سے لوگوں کو بیوقوف بنا کر اپنی مصیبت کو حل کر سكےپھر بعد میں عوامی مصنف یونین قائم 1985 میں ہوئی اور مصنفین کے دو تنظیم سامنے آئے ایک ترقی پسند مصنف اور عوامی مصنف سگھ بنے۔

Advertisement
Advertisement

Advertisement

Advertisement