Advertisement
تو شمع رسالت ہے عالم تیرا پروانہ
تو ماہ نبوت ہے اے جلوہ جاناناں

تو ماہ نبوت ہے اے جلوہ جاناناں
جو ساقی کوثر کے چہرے سے نقاب اٹھے

ہر دل بنے میخانہ ہر آنکھ ہو پیمانہ
ہر دل بنے میخانہ ہر آنکھ ہو پیمانہ

سنگ در جاناں پرکرتا ہوں جبیں سائی
سجدہ نہ سمجھ نجدی سر دیتا ہوں نذرانہ

سجدہ نہ سمجھ نجدی سر دیتا ہوں نذرانہ
دل اپنا چمک اٹھے ایمان کی طلعت سے

کر آنکھیں بھی نورانی اے جلوہ جاناناں
کر آنکھیں بھی نورانی اے جلوہ جاناناں

گر پڑ کے یہاں پہنچا مر مر کے اسے پایا
چھوٹے نہ الہی اب سنگ در جاناں

چھوٹے نہ الہی اب سنگ در جاناں
سرکار کے جلووں سے روشن ہے دل نوری

تا حشر رہے روشن نوری کا یہ کاشانہ
صلی اللہ علی محمد- صلی اللہ علیہ وسلم​

Advertisement
Advertisement

Advertisement

Advertisement
Advertisement