وہ صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ
آتش عشق پڑی عقل کے سامان میں آ
ناز دیتا نہیں گر رُخصتِ گُل گشتِ چمن
اے چمن زارِ حیا!دل کے گُلستان میں آ
یاد آتا ہے مجھے جب وہ گُل باغِ وفا
اشک کرتے ہیں مکاں گوشۂ دامان میں آ
موجِ بے تابی دل،اشک میں ہوئی جلوہ نما
جب بسی زُلفِ صنم،طبع پریشان میں آ
نالہ و آہ کی تفصیل نہ پوچھو مجھ سوں
دفتر درد بسا عاشق کے دامان میں آ
پنجۂ عشق نے بے تاب کیا جب سوں مجھے
چاک دل تب سوں بسا، چاک گربیان میں آ
حُسن تھا پردۂ تجرید میں سب سوں آزاد
طالب عشق ہوا، پردۂ انسان میں آ

تشریح

پہلا شعر

وہ صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ
آتش عشق پڑی عقل کے سامان میں آ

شاعر کہتا ہے کہ جب سے وہ محبوب میری ان حیران آنکھوں میں آکر سما گیا ہے تب سے عشق کی گرمی نے گویا عشق نے عقل کی جگہ لے لی ہے۔

دوسرا شعر

ناز دیتا نہیں گر رُخصتِ گُل گشتِ چمن
اے چمن زارِ حیا!دل کے گُلستان میں آ

محبوب کو حیا/شرم کا چمن قرار دیتے ہوئے شاعر کہتا ہے کہ اے محبوب اگر تجھے تیرا ناز،چمن کی سیر کرنے کی اجازت نہیں دیتا تو نہ سہی،تو میرے دل کے گُلستان میں چلا آ۔

تیسرا شعر

یاد آتا ہے مجھے جب وہ گُل باغِ وفا
اشک کرتے ہیں مکاں گوشۂ دامان میں آ

شاعر کہتا ہے کہ وہ وفا کے باغ کا پھول،گویا محبوب جب مجھے یاد آتا ہے تو آنکھوں کے آنسو آ کر دامن میں ٹھہر جاتا ہیں۔ یعنی آنکھوں سے آنسو جاری ہو جاتے ہیں۔

چوتھا شعر

موجِ بے تابی دل،اشک میں ہوئی جلوہ نما
جب بسی زُلفِ صنم،طبع پریشان میں آ

زُلف کو پریشان باندھتے ہیں۔ شاعر کہتا ہے کہ جب سے محبوب کی زُلفیں میری پریشان طبیعت میں آکر بس گئی ہیں تب سے دل کی بے قراری آنسوؤں کی صورت میں اپنا جلوہ دکھا رہی ہے یعنی تب سے آنسو بہہ رہے ہیں۔

ساتواں شعر

حُسن تھا پردۂ تجرید میں سب سوں آزاد
طالب عشق ہوا، پردۂ انسان میں آ

حسن تجرید کے پردے میں ہر خواہش سے آزاد تھا۔ اسے کسی طرح کی کوئی خواہش نہ تھی۔ گویا عریانیت کے پردے میں آزاد تھا۔ لیکن انسانی صورت میں آتے ہی اس میں عاشق کی طلب پیدا ہوگئی ہے۔

Advertisements