زبان اور بولی میں فرق

کسی زبان کی ذیلی شاخ کو بولی کہتے ہیں۔ایک بڑے لسانی گروہ میں یا کسی بڑے علاقے کی آبادی میں کچھ مقامی خصوصیات پیدا ہو جاتی ہیں۔اس اختلاف کی وجہ سے ایک زبان بولنے والے مختلف بولیوں میں تقسیم ہو جاتے ہیں۔

یہ اختلاف اس صورت میں کم ہوجاتے ہیں جب اس زبان کے بولنے والوں کو باہم میل جول کے زیادہ مواقع ملتے ہوں،لیکن اگر کسی علاقے کے رہنے والوں کو نقل و حرکت کے مواقع کم میسر آٸیں تو باہمی ربط کے مواقع بھی کم دستیاب ہوں گے اور اس طرح اس علاقے میں بولیوں کی تعداد زیادہ ہوگی۔

بولی عام طور پر ایک بے ڈھب سی زبان ہوتی ہے جو نسبتاً چھوٹے علاقے کی عوام میں راٸج ہوتی ہے۔اس کی نہ تو کوئی تنظیم ہوتی ہے اور نہ ہی ضابطے اور کوئی اصول مقرر ہوتے ہیں اس لٸے اس کی کوئی گرامر بھی مرتب نہیں ہو پاتی۔

بولی میں تبدیلی بڑی مشکل سے آتی ہے اور بہت دیر میں اس تبدیلی کا اثر ظاہر ہوتا ہے۔
بولی اورزبان کی ابتداء اور نشوونما سے متعلق اختلاف رائے پایا جاتا ہے۔رینال اور میکس ہولر کے مطابق:
"مختلف بولیاں جو متعدد ٹکڑیوں میں بٹی ہوٸی تھیں،ایک شکل میں مجتمع ہوگٸیں۔”
یعنی اس کا ارتقاٸی عمل انتشار سے اتحاد کی جانب ہے۔

اس کے برعکس ماہر لسانیات وہٹے کے مطابق:
"زبان پہلے وجود میں آئی اور رفتہ رفتہ بولیوں میں بٹ گٸی اس طرح اس کا ارتقاٸی عمل اتحاد سے انتشار کی جانب ہے۔

Written by

صابرہ بتول

Close