Advertisement

ارطغرل غازی کون تھا؟

ارطغرل غازی کائی قبیلے میں1188ء میں پیدا ہوئے۔ ارطغرل غازی کے والد کا نام سلیمان شاہ تھا اور والدہ کا نام حائمہ خاتون تھا۔ ارطغرل غازی کے والد سلیمان شاہ کائی قبیلے کے عظیم سردار تھے۔ سلیمان شاہ کے چار بیٹے تھے۔ارطغرل غازی کو اپنے وقت کا ایک بنیادی بادشاہ سمجھا جاتا ہے اورانہوں نے سلطنت عثمانیہ کی بنیاد رکھی۔ سلطنت عثمانیہ کے قیام کے بعد، ان کی شادی سلجوق خاندان کی شہزادی حلیمہ سلطان سے ہوئی، یہی وجہ تھی کہ اس شہر پر بھی ارطغرل غازی نے اچھا اثر و رسوخ قائم کر لیا تھا۔

  • ارطغرل غازی کی سوانح حیات – Ertugrul Ghazi History in Urdu
  • ارطغرل غازی کی تاریخ اور جدوجہد

ارطغرل غازی کی پوری زندگی جدوجہد سے بھری ہوئی ہے۔ ان کی محنت کی وجہ سے ان کے چھوٹے بیٹے عثمان نے ان کی وفات کے بعد سلطنت عثمانیہ کی بنیاد رکھی۔ اس سلطنت کو بعد میں پوری دنیا میں سب سے مضبوط اور بنیادی سلطنتوں میں سے ایک کے طور پر منتخب کیا گیا۔

گیارہویں صدی سے تیرھویں صدی تک ارطغرل غازی کی زندگی بہت جدوجہد میں گزری اور انہوں نے ایسی کئی خوفناک جنگوں میں حصہ لیا، جن میں انہیں بہت نقصان اٹھانا پڑا، لیکن اس عرصے میں لڑی گئی تمام جنگیں ارطغرل غازی نے جیت کر اپنے نام کی۔

Advertisement

وہ ایسے بہت سے قبائل کو ایسی زمین فراہم کرنا چاہتے تھے، جہاں ان کے تمام لوگ آزادی سے اپنی زندگی گزار سکیں اور کسی کی غلامی میں نہ رہیں۔ اس کے لیے ارطغرل غازی نے بھی اپنی زندگی میں ایسی سرزمین کی تلاش میں بہت قربانیاں دیں۔ اس طرح کی جدوجہد سے بھری زندگی میں اس کے کچھ خاص رشتہ دار اور دوست ارطغرل غازی چھوڑ کر چلے گئے۔

کہا جاتا ہے کہ تمام رشتہ دار مصیبت میں آپ سے دور ہو جاتے ہیں، جیسا کہ ارطغرل غازی کے ساتھ ہوا۔ جس وقت ان کے قریبی لوگ انہیں چھوڑ کر جا رہے تھے اسی وقت بہت سے غیر لوگوں نے ان کا ساتھ دیا اور اس جنگ کو جیتنے کے لیے کئی طرح سے اپنا حصہ ڈالا۔ ان لوگوں کے خصوصی تعاون کی وجہ سے سلطنت عثمانیہ دنیا کی سب سے مضبوط اور بنیادی سلطنت کے طور پر قائم ہوئی تھی۔

جن لوگوں نے ارطغرل غازی کی حمایت کی ان میں خاص طور پرصوفیاء کے ساتھ ساتھ شیخ ابن عربی ؒ کا نام نمایاں ہے۔ شیخ ابن عربی ؒ کو پوری دنیا میں ارطغرل غازی کے خصوصی روحانی مددگار کے طور پر جانا جاتا ہے۔ شیخ ابن عربی ؒ نے ہر مشکل وقت میں ارطغرل غازی کی خصوصی مدد کی اور انھیں جنگ جیتنے کے لیے بہت سے نصیحتیں کیں۔

اس سب کے بعد 1299ء میں سلطنت عثمانیہ کا قیام عمل میں آیا۔ عثمانی سلطنت نے 600 سال سے زائد عرصے تک ترکی اور اس کے آس پاس کے یورپی علاقوں پر حکومت کی۔

1922ء میں پہلی جنگ عظیم کے دوران اس سلطنت کے ساتھ ایک خاص جنگ ہوئی اور پہلی جنگ عظیم کے اختتام پر سلطنت عثمانیہ کا خاتمہ ہوگیا۔ اس سب کے بعد ملک ترکی قائم ہوا۔ پچھلے 600 سالوں میں، اسے دنیا کی تاریخ میں سب سے مضبوط اور توسیع پسند سلطنتوں میں سے ایک کے طور پر دیکھا گیا ہے۔ سلطنت عثمانیہ کے دور میں اس کے علاوہ پوری دنیا میں اتنی بڑی سلطنت کوئی اور نہیں تھی، یہی وجہ ہے کہ سلطنت عثمانیہ کو اس وقت کی سپر پاور سلطنت کہا جاتا تھا۔

ارطغرل غازی کا مقبرہ

وفات کے بعد ارطغرل غازی کوسوجات (Söğüt) میں سپرد خاک کیا گیا۔ ان کی تدفین کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ان کے بیٹے عثمان نے سوجات (Söğüt) میں ان کے نام پر ایک مقبرہ اور مسجد تعمیر کروائی تھی، لیکن ایک وقت کے بعد اس مسجد اور مقبرے کو دوبارہ تعمیر کیا گیا تھا، اس لیے یہ بتانا مشکل ہے کہ اس مقبرے کی تعمیر سب سے پہلے کب ہوئی تھی۔

نتیجہ (Conclusion)

ہم آپ سب سے امید کرتے ہیں کہ آپ کو”ارطغرل غازی کی تاریخ اور تعارف” ضرور پسند آیا ہو گا، اگر آپ کو یہ سوانح حیات پسند آئی ہے تو ضرور شئیر کریں۔ اگر آپ کا اس مضمون کے حوالے سے کوئی سوال ہے تو آپ ہمیں ضرور بتائیں۔