Advertisement

غالب کو اردو کے بڑے شاعروں میں شمار کیا جاتا ہے۔فارسی شاعری میں بھی ان کا مرتبہ بلند ہے۔ ان کا طرز بیان سب سے جدا اور الگ ہے۔غالب اردو کے ہر دلعزیز شاعر ہیں۔ کچھ لوگ تو انہیں اردو کا عظیم ترین شاعر قرار دیتے ہیں۔غالب کی شاعرانہ عظمت کا بڑا ثبوت یہ بھی ہے کہ تیزی سے گزرتے ہوئے وقت نے انکے فن کو گردآلود کرنے کے بجائے اسے اور بھی نکھار دیا ہے۔ان کی شاعری کے کئی رنگ ہیں، شروع میں انہوں نے فارسی آمیز زبان استعمال کی لیکن بعد میں خالص اردو زبان استعمال کرنے لگے۔مزاج میں شوخی اور جدت تھی جس کی وجہ سے مشکل سے مشکل شعر کو خوبصورت بنایا۔وہ نہ کسی کے مقلد تھے اور نہ کسی کو سند کے طور پر تسلیم کرتے، یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اپنے لیے الگ اور نئی راہ نکالی اور منفرد حیثیت حاصل کی۔غالب کی شاعری ایک ایسا لازوال اور انمول کارنامہ ہے جس کی مثال دنیا ئے اردو میں ڈھونڈنے سے بھی نہیں ملے گی۔یہ لافانی کارنامہ ہمیشہ کے لئے اردو ادب کا سرمایہ بن کر ہمارے پاس رہے گا،جس سے صرف اسی دور کو ہی نہیں واسطہ بلکہ آنے والی نسلیں بھی اس سے فیض حاصل کرتی رہیں گی۔غالب ایک عظیم شاعر اور بڑے فنکار ہیں جن کی شاعری لطافت فکر خیال سے عبارت ہے۔ان کی شاعری کی نمایاں خصوصیات درج ذیل ہیں۔

 فکری پہلو

غالب سے پہلے اردو غزل کی دنیا بہت محدود تھی۔حسن کے معاملات اور عشق کی واردات کے سوا کچھ بھی نہ تھا۔غالب پہلے شاعر ہیں جنہوں نے سب سے پہلے زندگی کے حقیقی مسائل پر غور کیا اور انہیں اپنی شاعری کا موضوع بنایا۔غالب کی عظمت کا بڑا راز بھی یہی ہے کہ انہوں نے اردو غزل کو ذہن دیا، سوچنا سکھایا اور اسے غوروفکر کی عادت ڈالی۔آل احمد سرور لکھتے ہیں:

Advertisement

“غالب سے پہلے اردو شاعری دل والوں کی دنیا تھی غالب نے اسے ذہن دیا اور ایک ایسی زبان دی جو فکر کی گرمی کا ساتھ دے سکے۔غالب نہ ہوتے تو اقبال بھی نہ ہوتے۔ غالب ہمارے لئے ایک شاعر نہیں بلکہ ذہنی فضا ہیں”

Advertisement

 تصوف

غالب اگرچہ عملی صوفی نہیں تھے لیکن ان کی شاعری فلسفۂ وحدت الوجود سے لبریز ہے۔مگر ان کا یہ عقیدہ بھی ہر جگہ برقرار نہیں رہتا۔بعض مقامات پر وہ تشکیک کا شکار ہوجاتے ہیں پھر عالم حیرت میں اللہ تعالی سے طرح طرح کے سوال کرتے ہیں۔

Advertisement

جب کہ تجھ بن نہیں کوئی موجود
پھر   یہ   ہنگامہ  اے   خدا   کیا  ہے

سبزہ و گل کہاں سے آئے ہیں
ابر کیا  چیز   ہے ہوا   کیا   ہے

Advertisement

غالب کی سی بات پر مطمئن نہیں ہوتے وہ خدا کے بنائے ہوئے ذرّے ذرّے پر غور و فکر کرتے ہیں کو سوچتے ہیں کہ یہ کام یوں ہے، تو کیا یوں نہیں ہو سکتا؟ اگر یوں ہوتا تو کیا ہوتا؟

نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
ڈبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا

Advertisement

غالب کے یہاں فنا و بقا، فنا فی اللہ، حقیقت ہستی،انسان دوستی، ہمدردی اور دردمندی کا جذبہ ابھرتا ہے اور اس کی جڑھیں تصوف سے ہی پھوٹتی ہیں۔

 حسن و عشق

حسن و عشق کے متعلق جس قدر بلند پایا اشعار دیوان غالب میں ملتے ہیں اور حکمت عشق کی نسبت جو گہرائی ان کی نظر میں ہے اسکا اردو  کے کسی دوسرے شاعر کے یہاں ملنا محال ہے۔عام شعری روایت کے مطابق غالب بھی اپنی شاعری کا بیشتر مواد حسن و عشق سے ہی حاصل کرتے ہیں۔ہمیں غالب کی شاعری کے بیشتر حصہ پر جذبۂ عشق و محبت کی چھاپ نظر آتی ہے۔غالب حسن کی مختلف کیفیتوں اور عشق و محبت کی واردات کو اپنے محسوسات اور اپنی داخلیت کی مدد سے لازوال بنا دیتے ہیں۔وہ حسن سے متعلق سطحی بات نہیں کہتے،بلکہ انسان کی ذہنی اور جذباتی کیفیت،جسمانی تقاضوں اور اس کے فکر و شعور کے مختلف پہلوؤں کو بیان کرتے ہیں۔محبوب سے عجزونیاز، شوخی چھیڑچھاڑ، خوداری غرض یہ کہ تمام مضامین سمٹ آئے ہیں۔غالب نے ان تمام کیفیتوں کا اظہار جس طرح اپنے مخصوص لب و لہجے میں کیا ہے وہ غالب ہی کا حصہ ہے۔

Advertisement

کوئی میرے دل سے پوچھے تیرے تیر نیم کش کو
یہ خلش کہاں سے ہوتی جو جگر کے پار ہوتا

جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِ یار کا عالم
میں معتقد فتنہ محشر نہ ہوا تھا

Advertisement

ترے سرو قامت سے اک قد آدم
قیامت کے فتنے کو کم دیکھتے ہیں

جوۓ خون آنکھوں سے بہنے دو کہ ہے شام فراق
میں یہ سمجھوں گا کہ دو شمعیں فروزاں ہو گئیں

Advertisement

 طنز و ظرافت

طنز و ظرافت مرزا غالب کی فطرت ثانیہ بن چکی تھی۔یہی وجہ ہے کہ غالب اپنے کلام میں جام سفال سے لے کر تصوف تک ہر چیز پر بڑی سنجیدگی اور پاکیزگی کے ساتھ ظریفانہ وار کرتے ہیں اور ان کا کلام ذہنی انبساط کا ایک اعلی نمونہ بن جاتا ہے۔ اسی لیے حالی نے انھیں “حیوان ظریف” اور ممتازحسین نے “نشاط کا شاعر” قرار دیا ہے۔

کی میرے قتل کے بعد اس نے جفا سے توبہ
ہائے اس ذود پشیماں کا پشیماں ہونا

Advertisement

 تصور غم

 کلام غالب کے بیشتر حصے پر ہمیں غم کا سایہ لہراتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ان کی شاعری میں ہمیں غم کی ایک ایسی لہر ملتی ہے جس کے سوتے غم ذات، غم عشق اور غم دوراں سے پھوٹتے ہیں۔غالب اگر چہ بظاہر ہمیں ہنستے ہوئے نظر آتے ہیں لیکن اس ہنسی کی تہہ میں اشکوں کا ایک سمندر پوشیدہ ہے۔جس میں غم ہستی بھی ہے اور غم نستی بھی،غم فراق بھی ہے اور غم وصال بھی۔ان کے یہاں فکر معاش، عشق بتاں اور یاد رفتگاں صرف ایک شاعرانہ احساس ہی نہیں ہے بلکہ یہ غالب کی زندگی کی سب سے بڑی حقیقتیں ہیں جس کے اثرات ہمیں ان کی پوری شاعری پر محسوس ہوتے ہیں۔

 تہہ داری

غالب کے اکثر اشعار میں مضامین کی تہہ داری پائی جاتی ہے یعنی کہ شعر ایک بار پڑھو مطلب کچھ اور ہوگا اور دوسری بار پڑھو کچھ اور نکلے گا۔

Advertisement

کوئی ویرانی سی ویرانی ہے
دشت کو دیکھ کر گھر یاد آیا

اس طرح کلام غالب میں تہہ داری کے ساتھ ساتھ ایجازواختصار بھی پیدا ہوجاتا ہے اور یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ وہ سمندر کو کوزے میں بند کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

Advertisement

 مشکل پسندی اور جدت طرازی

غالب کی شاعری کا یہی مقام ہے جس پر اربابِ فن اعتراض کرتے رہے۔کلام غالب کی مشکل پسندی میں مشکل اور جدت الفاظ، پیچیدہ خیالات،جدت محاکات،تخیل کی بلندی، مضامین کی تہہ داری، تشبیہات و استعارات اور علامات و اشارات نے عام قارئین کے لئے مصیبت کے پہاڑ کھڑے کردیے۔دیوان غالب کا پہلا ہی شعر آج بھی دنیائے اردو کے لیے ایک معما اور ابہام بنا ہوا ہے جس کی نئی نئی پرتیں روزبروز کھولی جارہی ہیں۔

نقش فریادی ہے کس کی شوخی تحریر کا
کاغذی ہے پیرہن ہر پیکرِ تصویر کا

Advertisement

غالب اکثر اپنی مشکل پسندی پر فخر کیا کرتے تھے

آگہی دام شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
مدعا عنقا ہے اپنے عالم تقریر کا

Advertisement

 انداز بیان

غالب کی شاعری کی سب سے بڑی خصوصیت ان کا دلکش اور پر اثر انداز بیاں ہے۔ غالب کے اس انوکھے اور نرالے انداز بیاں میں سلاست، روانی، صفائی، سادگی، نازک خیالی،مشکل پسندی، معنی آفرینی، مضمون آفرینی اور جدت طرازی وغیرہ سب کچھ بدرجہ اتم موجود ہے۔اردو وہ اکثر اپنے طرز بیان پر بھی ناز کرتے تھے۔

ہیں اور بھی دنیا میں سخنور بہت اچھے
کہتے ہیں کہ غالب کا ہے انداز بیاں اور

Advertisement

غالب کی شاعری اردو کلاسکی شاعری کا وہ نقطہ عروج ہے جس کی آگے اس روایت میں مزید اضافہ کرنے کی گنجائش باقی نہ رہی اس بات کا علم خود غالب کو بھی تھا۔

منظر اک بلندی پر اور ہم بنا سکتے
عرش سے ادھر ہوتا کاش کے مکاں اپنا

Advertisement

آخر میں غالب کے کارناموں کا ذکر کرنا ضروری سمجھتے ہیں۔غالب کی کچھ کتابوں اور رسالوں کے نام درج ذیل ہیں۔


پرتوستان، دستنبو (1858)، قاطع برہان (1862)، درفش کادیانی،پنچ آہنگ، ثبد چین، گل رعنا، لطائف غیبی (1864)، دعاء صباح، عود ہندی (1868)، اردو معلی(1869)،مکاتیب غالب،رقعات غالب،خطوط غالب،نادرات غالب، نکات غالب، قادر نامہ، انشائیہ غالب۔دیوان غالب (غالب کے دیوان اردو میں 1802 اشعار ہیں۔ان کا یہ دیوان غالب کی زندگی میں 5 بار شائع ہوا)

Advertisement
  • غالب نے کل 11 مثنویاں لکھیں جن کے نام درج ذیل ہیں
  • باد مخالف، مثنوی ابر گوہر بار، مثنوی چراغ دیر، مثنوی درصفت انبہ، مثنوی دعائے صباح، مثنوی شان نبوت ولایت،
  • باد مخالف وغیرہ

غالب کے منتخب اردو دیوان میں کل چار قصیدے بھی ہیں جن میں ابتدائی 2 قصیدہ حضرت علی کی منقبت میں کوریا اور آخر کے دو قصیدہ بہادر شاہ ظفر کی مدح میں ہیں۔

Advertisement

Advertisement