Advertisement
  • 1۔ ادب کیا ہے ؟
  • 2۔ ادب کیوں پڑھنا چاہیے ؟
  • 3۔ ادب پڑھنے کا طریقہ کیا ہے ؟

1۔ ادب کیا ہے ؟

وہ تحریر جس میں جذبہ اور تخیل شامل ہو ادب کہلاتا ہے۔ ادب فرد واحد کے احساسات ، جذبات ، خیالات اور مشاہدات کا مؤثر تحریری اظہار ہے۔

فرد واحد کیوں کہا ؟

فرد واحد اس لیے کہا کہ ادب فنون لطیفہ کی ایک شاخ ہے۔ اور فنون لطیفہ میں صرف ایک فرد ہی اپنے جذبات اور احساسات کا اظہار کرتا ہے۔

فنون لطیفہ سے کیا مراد ہے ؟

وہ فنون جو براہ راست انسان کو فائدہ نہ دے لیکن اس کے لیے خوشی اور مسرت کا باعث بنے ۔ جیسے مصوری ، سنگ تراشی ، موسیقی ، رقص اور شاعری ۔ فنون لطیفہ میں انسان اپنے جذبات اور احساسات کی عکاسی کرتا ہے ۔ فنون لطیفہ انتہائی ضروری ہوتے ہیں لیکن ہم اس کو غیر ضروری سمجھتے ہیں ۔ انسانی جذبات اور احساسات کو سمجھنے کے لیے فنون لطیفہ کا مطالعہ کرنا انتہائی ضروری ہے ۔

Advertisement

ادب کا شمار کن فنون میں ہوتا ہے ؟

ادب فنون لطیفہ کی ایک شاخ ہے ۔ فنون لطیفہ کا تعلق انسانی جذبات اور احساسات سے ہیں۔ ادب فنون لطیفہ کی واحد شاخ ہے جس میں جذبات اور احساسات کا اظہار تحریری شکل میں ہوتا ہے۔ جب کہ دیگر فنون لطیفہ کے لیے رنگ ، پتھر وغیرہ کی ضرورت ہوتی ہے۔

ادب ایک علم ہے ؟

ادب تفریح اور مسرت کا ذریعہ ہے ۔ ادب فرد کی ذاتی کہانی ہے ۔ یہ کہہ کر ادب کے قد کو کم نہیں کیا جاسکتا ۔ اور نہ ہی ادب کو محدود کیا جا سکتا ہے ۔ بلکہ ادب ایک علم ہے ۔ ادب کے اپنے سانچے اور اصناف ہیں ۔ ہر علم کی طرح ادب کے اپنے اصول و ضوابط ہوتے ہیں ۔ ادب ایک ایسا علم ہے جو کسی ایک علم سے تعلق نہیں رکھتا بلکہ بہت سے علوم سے تعلق رکھتا ہے ۔ یعنی ادب کے طالب علم کو بہت سی چیزوں کا علم ہونا ضروری ہے ۔ اکثر ادب کے طالب علم کو ادب پڑھتے ہوئے مذہب ، فلسفہ ، تصوف ، تاریخ اور نفسیات کا مطالعہ کرنا ضروری ہوتا ہے ۔ ادب کے حوالے سے ان تمام علوم کا مطالعہ کرنا ہوگا کہ ادب میں یہ علوم کیا ہے۔

2۔ ادب کیوں پڑھنا چاہیے ؟

ادب پڑھنا صرف ادب کے طالب علم کے لیے ضروری نہیں بلکہ ادب کا مطالعہ ہر انسان کے لیے ضروری ہے جو جذبہ اور احساس رکھتا ہو ۔ کیوں کہ ادب میں انسان کے جذبات اور احساسات کی عکاسی ہوتی ہے۔

زندگی کا مقصد کیا ہے ؟

اس زندگی کا مقصد غور و فکر کرنا ہے ۔ یعنی اپنے ارد گرد غور و فکر کر کے حقیقت معلوم کرنا ہے۔ کہ میں کیا ہوں ؟ یہ کائنات کیا ہے ؟ اللہ کیا ہے ؟ ان تمام چیزوں کی حقیقت معلوم کرنا زندگی کا مقصد ہے۔ جب کہ ادب احساسات اور جذبات کے ذریعے ان چیزوں کی حقیقت کو سمجھنے کی کوشش کرتا ہے۔

3۔ ادب کیسے پڑھا جائے ؟

ادب پڑھنے کے لیے سب سے پہلے ادب کو سمجھنا چاہیئے کہ ادب کیا ہے ؟ ادب پڑھنے کے لیے ضروری ہے کہ اپنے اندر ایک ادبی مزاج پیدا کیا جائے وہ مزاج جو ادب کو سمجھنے میں ہماری مدد کریں ۔ اپنے اندر ذوق سلیم کو پیدا کیا جائے ۔ ادب کے اصناف کو سمجھنا چاہیے ۔ ادب کو دو بڑے اصناف میں تقسیم کیا جاتا ہے ۔ ایک شعری اصناف ایک نثری اصناف ۔ شاعری منظوم ہوتی ہے جب کہ نثر منشور ہوتی ہے۔

ذوق سلیم سے کیا مراد ہے ؟

ذوق سلیم ایک ایسی کیفیت و صلاحیت کا نام ہے جو ادب کو پڑھنے اور سمجھنے میں مدد کرتا ہے ۔ جب ادب کا طالب علم کوئی ادبی فن پارہ پڑھنے کے بعد لطف محسوس کرتا ہے تو اس کا مطلب ہے کہ ذوق سلیم اس کے اندر موجود ہے ۔ اور اگر لطف محسوس نہیں کرتا تو اس کا مطلب ہے کہ ذوق سلیم موجود نہیں۔ ادب پڑھنے کے لیے ذوق سلیم انتہائی ضروری ہے ۔ زیادہ سے زیادہ مطالعہ کرنے سے ذوق سلیم کو بہتر کیا جا سکتا ہے۔

سر سہیل لیکچر شعبہ اردو یونیورسٹی آف پشاور