Advertisement

اپنے دل کی بات دوسروں تک پہنچانے کے لیے کچھ اور چیزوں کی بھی ضرورت ہوتی ہے۔ روزمرہ کی بول چال میں ہم چہرے کے تاثرات، لب و لہجے کے تغیرات، آواز کے زیر و بم اور بات کے دوران موزوں جگہوں پر وقفے دے کر اپنی بات کو زیادہ موثر بناتے ہیں لیکن تحریر میں ہمارا قاری ہمارے سامنے نہیں ہوتا ہے اس لیے ہمیں اپنی بات کو زیادہ سے زیادہ موثر بنانے کے لیے اور جو کچھ ہم کہنا چاہتے ہیں اسے اسی طرح دوسروں تک پہنچانے کے لیے تحریر کے دوران میں کچھ علامتوں اور اشاروں کو استعمال کیا جاتا ہے۔ اِن اشاروں اور علامتوں کو رموز اوقاف کہتے ہیں۔

رموز رمز کی جمع ہے جس کے معنی اشارہ کے ہیں اور اقاف وقف کی جمع ہے جس کا مطلب ہے ٹہرنا یا رکنا ہے۔ رموز اوقاف سے مراد ہے ٹہرنے کے اشارات یا علامات۔ یہ وہ اشارات اور علامتیں ہیں جو مطلب بہتر طور پر واضح کرنے کے لیے تحریرکے دوران استعمال کی جاتی ہیں۔ ان کی مدد سے پڑھنے والا عبارت کو روانی اور آسانی سے سمجھتا چلا جاتا ہے نیز پڑھنے کے دوران اسے ٹھہرنے اور سانس لینے کے لیے مناسب مواقع ملتے چلے جاتے ہیں۔ جس سے قاری کو مطالعہ کے دوران تھکن کا احساس نہیں ہوتا۔

Advertisement

علامات وقف​

علامت وقف کا مفہوم

وہ علامتیں جو عبارت کے درمیان میں بات کے مفہوم کو واضح کرنے کے لیے استعمال ہوتی ہیں، علامت وقف کہلاتی ہیں۔ چند مشہور علامت وقف درج ذیل ہیں:

Advertisement
  • ختمہ (۔)
  • سوالیہ (؟)
  • سکتہ (،)
  • تفصیلیہ (:_)
  • قوسین ()
  • واوین (” “)
  • ندائیہ یا فجائیہ (!)
  • علامت شعر (؎)
  • علامت مصرع (؏)
  • مخففات( ؒ، ؓ )

ختمہ (۔) کا مفہوم​

ختمہ علامت ایک پورے جملے کے خاتمے پر ایک چھوٹی سی لکیر کی صورت میں لگائی جاتی ہے جہاں کچھ دیر ٹہرنا ہوتا ہے۔ یہ عبارت ایک جملے کو دوسرے جملے سے جدا کرتی ہے۔ اسے وقف کامل، وقف تام اور انگریزی میں فل سٹاپ (.) بھی کہتے ہیں۔

Advertisement

ختمہ (۔) کی مثالیں

ختمہ (۔) کی مثالوں کے چند نمونے ملاحظہ کریں:

آج خوب بارش ہوئی ہے، اس لیے موسم بڑا خوشگوار ہو گیا ہے۔
آج عید کا دن ہے۔ ہر طرف چہل پہل ہے۔ ایسا لگتا ہے جیسے میلا لگا ہوا ہو۔
آج میری طبیعت خراب ہے آپ کل تشریف لائیں۔

سوالیہ(؟) کا مفہوم

اس علامت کو وقف کامل بھی کہتے ہے یہ علامت سوالیہ جملے کے آخر میں لگائی جاتی ہے۔ اس علامت کے استعمال سے ایک عام جملے اور سوالیہ جملے میں واضح فرق پیدا ہو جاتا ہے۔ جن جملوں میں کوئی سوال پوچھا جا رہا ہو ان جملوں میں یہ علامت استعمال ہوتی ہے۔ اِن جملوں کے آخر میں اگرسوالیہ نشان استعمال نہ کیا جائے تو ان جملوں کا مفہوم صحیح طور پر واضح نہیں ہوتا۔ اسے علامت استدلال بھی کہتے ہیں۔

Advertisement

سوالیہ (؟) جملوں کی مثالیں

کیا آپ کراچی جا رہے ہیں؟
کیا ہم میچ جیت چکے ہیں؟
آپ کو کون سا پھل پسند ہے؟
آپ لاہور سے کب واپس آئیں گے؟

سکتہ (،) کا مفہوم​

یہ چھوٹا سا اور مختصر وقفہ ہوتا ہے، جس میں ہلکا سا توقف کر کے آگے بڑھ جاتے ہیں۔ اس کو انگریزی میں کوما (،) کہتے ہیں۔ اس علامت کی وضاحت کے لیے اکثر استعمال کیا جاتا ہے۔ اس کے استعمال سے عبارت کی صحیح طور پر وضاحت ہوجاتی ہے۔

Advertisement

سکتہ (،) کی مثالیں

کراچی، لاہور، فیصل آباد، راولپنڈی، پشاور اور کوئٹہ پاکستان کے مشہور شہر ہیں۔
شاہی قلعہ، بادشاہی مسجد، مقبرہ جہانگیر، شالا مارباغ اور عجائب گھر لاہور کے تاریخی مقامات ہیں۔
اکرم، انور، اسلم اور احمد کل کراچی جائیں گے۔
اے ماؤ، بہنو، بیٹیو! قوموں کی عزت تم سے ہے۔

تفصیلیہ (:۔) کا مفہوم​

یہ علامت کسی چیز کی تفصیل یا وضاحت کے لیے استعمال ہوتی ہے۔

Advertisement

تفصیلیہ کی مثالیں

ورزش کے درج ذیل فائدے ہیں:۔
علامہ اقبال فرماتے ہیں:۔
ایک عمدہ غزل میں حسب ذیل خوبیاں ہونی چاہئیں:-
علم کے بے شمار فائدے ہیں مثلاً :۔

قوسین () کا مفہوم​

قوسین یا خطوط واحدانی میں عبارت کے ایسے حصے لکھے جاتے ہیں جو جملہ معترضہ کے طور پر آتے ہیں۔ جملہ معترضہ ایسے جملے کو کہتے ہیں جو عبارت میں آجائے لیکن اصل عبارت سے اس کا تعلق نہ ہوبلکہ حوالے کے طور پر اس کا ذکر آئے۔ عام طور پر یہ علامت مکالموں اور ڈراموں میں استعمال کی جاتی ہے۔

Advertisement

قوسین () کی مثالیں

چوہدری اسلم (جو میرے ہم جماعت تھے) آج کل ڈاکٹر ہیں۔
عوا م نے اسے (اگرچہ وہ نااہل تھا) اپنا نمائندہ چن لیا۔
اشرف علی (جو میرے بچپن کے دوست تھے) آج وہ مجھے اچانک بازار میں مل گئے۔

واوین (” “) کا مفہوم​

یہ علامت کسی تحریر کا اقتباس (ٹکڑا) پیش کرتے وقت یا کس کا قول پیش کرتے وقت اُس قول یا اقتباس کے شروع اور آخرمیں لگائی جاتی ہے۔

Advertisement

واوین (” “) کی مثالیں

رسول اکرم ﷺ کا ارشاد ہے: ”تم میں سے بہتر وہ ہے جوقرآن سیکھے اور دوسروں کو سکھائے۔“
میں نے اپنے ملازم کو آواز دی: ”انورخان!“ اُس نے جواب دیا ”جی میرے آقا!“
نبی کریم ﷺ کا ارشاد ہے: ”تم میں سے بہترین وہ ہے جس کے اخلاق اچھے ہوں۔“

ندائیہ یا فجائیہ (!) کا مفہوم​

یہ علامت کسی کو آواز دینے یا پکارنے کے وقت استعمال کی جاتی ہے یا اس علامت کو ایسے الفاظ یا جملوں کے آخر میں لگایا جاتا ہے جن میں کسی جذبے جیسے جوش، غم، نفرت، غصہ، تعجب، حیرانی، خوشی، افسوس، خوف، تنبیہ، تحسین اور تحقیر کا اظہار پایا جاتا ہو۔

Advertisement

ندائیہ یا فجائیہ (!) کی مثالیں

آہا! بس آگئی۔
ہائے! یہ کیا ہو گیا؟
خبردار! اب ایسی حرکت نہ کرنا۔
صدر ذی وقار! خواتین و حضرات۔
افسوس! میرا دوست حادثے میں ہلاک ہو گیا۔

علامت شعر (؎) کا مفہوم​

یہ علامت عبارت میں کسی شعر کا حوالہ دینے کہ موقع پر شعر کے شروع میں لگائی جاتی ہے۔

Advertisement

علامت شعر (؎) کی مثال

؎ آ تجھ کو بتاؤںتقدیر امم کیا ہے
شمشیر و سنان اول طاؤس و رباب آخر

Advertisement

علامت مصرع (؏) کا مفہوم​

یہ علامت عبارت میں کسی مصرعے کا حوالہ دینے کے لیے استعمال ہوتی ہے۔

علامت مصرع (؏) کی مثال

؏ کس شیر کی آمد ہے کہ رن کانپ رہا ہے۔

Advertisement

مخففات( ؒ، ؓ ) کا مفہوم​

جو مختصر علامت اصل فقرے کی جگہ استعمال کی جائے اسے مخففات کہتے ہیں۔

Advertisement

مخففات( ؒ، ؓ ) کی مثالیں

رضی اللہ عنہ کی جگہ ( ؓ ) مخفف استعمال ہوتا ہے۔
رحمتہ اللہ علیہ کی جگہ ( ؒ ) مخفف استعمال ہوتا ہے۔

Advertisement
تحریرمحمد ذیشان اکرم
Advertisement

Advertisement

Advertisement