Advertisement

شاعر : مولوی محمد اسمٰعیل میرٹھی
ماخوذاز : کلیاتِ اسماعیل میرٹھی

Advertisement

تعارفِ نظم

اس نظم کے شاعر کا نام مولوی محمد اسمٰعیل میرٹھی ہے۔ یہ نظم کلیاتِ اسماعیل میرٹھی سے ماخوذ کی گئی ہے۔

Advertisement

تعارفِ شاعر

مولوی اسمعیل ہندوستان کے شہر میرٹھ میں پیدا ہوئے۔ اسمعیل میرٹھی کا شمار بچوں کے اہم شاعروں میں ہوتا ہے۔ آپ کی شاعری، بیان کی سادگی اور زبان کی پاکیزگی کا عمدہ نمونہ ہے۔ آپ کا سارا کلام ”کلیاتِ اسمٰعیل“ کے نام سے شائع ہوچکا ہے۔

Advertisement

تشریح

خدایا نہیں کوئی تیرے سوا
اگر تو نہ ہوتا تو ہوتا ہی کیا

اس شعر میں شاعر اللہ تعالیٰ کی واحدانیت کا اقرار کررہے ہیں۔ شاعر لکھتے ہیں کہ اگر اس دنیا میں اللہ تعالیٰ نہ ہوتا تو اس دنیا میں کچھ بھی نہ ہوتا۔ اللہ تعالیٰ کی ذات تب سے ہے جب کوئی بھی نہ تھا اور تب تک رہے گی جب کچھ بھی نہیں بچے گا۔

تصور تری ذات کا ہے محال
کسے یہ سکت اور کہاں یہ مجال

اس شعر میں شاعر لکھتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ کی ذات کا تصور کرنا بھی محال ہے۔ کسی بھی مخلوق کی یہ مجال نہیں ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ کی ذات کا تصور بھی کرسکے۔ اللہ تعالیٰ کی ذات بہت بڑی ہے۔ کسی بھی انسان کے بس میں نہیں ہے کہ وہ اللہ تعالیٰ کا تصور بھی کرسکے۔

Advertisement
بنائی ہے تو نے یہ کیا خوب چھت
کہ ہے سارے عالم کی جس میں کھپت

اس شعر میں شاعر آسمان کا ذکر کررہے ہیں اور وہ کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے کیا خوب چھت بنائی ہے جو زمین کی ہر شے کو ڈھانپے ہوئے ہے۔ یہ چھت بغیر کسی سہارے کے کھڑی ہے اور پوری مخلوق کو سایہ دیتی ہے۔ یہ آسمان اللہ تعالیٰ کی قدرت کا ایک چھوٹا سا نمونہ ہے۔

یہ تارے جو ہیں آتے جاتے ہوئے
چمکتے ہوئے جگمگاتے ہوئے

اس شعر میں شاعر آسمان پر چمکتے ستاروں کا ذکر کررہے ہیں۔ ان میں سے کچھ ستارے زمین سے بڑے بھی ہوتے ہیں اور رات کے اندھیرے میں وہ روشنی مہیا کرتے ہیں۔ شاعر کہتے ہیں کہ یہ آتے جاتے ستارے بھی اللہ تعالیٰ کی شان کا ایک ثبوت ہیں۔ جو بر وقت بغیر کسی ایندھن کے چمکتے رہتے ہیں۔

Advertisement
چراغ ایسے روشن جو بن تیل ہیں
یہ تیری ہی قدرت کے سب کھیل ہیں

اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ آسمان پر چمکتے ستارے بغیر کسی تیل کے ہر وقت روشن رہتے ہیں تو یہ سب اللہ کی قدرت کا ہی کھیل ہے۔ آسمان پر چمکتے اور روشنی مہیا کرتے یہ ستارے اللہ تعالیٰ کی ہی تخلیق ہیں جو اللہ تعالیٰ کی قدرت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔

یہ لعل و گہر ہیں جو بکھرے پڑے
زمین سے بھی ہیں ان میں اکثر بڑے

اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ ستارے ہیرے جواہرات کی طرح آسمان پر جگہ جگہ بکھرے ہوئے ہیں۔ ان میں سے اکثر تارے زمین سے بھی بڑے ہیں لیکن ہمیں بہت چھوٹے چھوٹے نظر آتے ہیں تو یہ اللہ تعالیٰ کی ہی قدرت ہے۔

Advertisement
یہ قائم ہیں تیری ہی تقدیر سے
بندھے ہیں بہم سخت زنجیر سے

اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ سورج ، چاند، تارے اور تمام سیارے آپس میں ایک کشش سے بندھے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے وہ ایک دوسرے سے دور رہ کر اپنے اپنے مدار میں چکر کاٹ رہے ہیں اور دنیا کا نظام صدیوں سے یوں ہی چلا آرہا ہے۔ یہ سب اللہ تعالیٰ کی ہی تقدیر ہے جس کی وجہ سے آج تک یہ سب کچھ قائم و دائم ہے۔

وہ زنجیر کیا ہے کششِ باہمی
نہ اس میں خلل ہو نہ بیشی کمی

اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ تمام تارے اور سیارے آپس میں ایک دوسرے کی کشش سے جڑے ہوئے ہیں اور اس کشش میں نہ کبھی کمی ہوئی ہے نہ ہی کچھ اور ہوا ہے۔

Advertisement
ہے ان سب کا آئین ایجاد ایک
ہنر ایک ہے اور استاد ایک

اس شعر میں شاعر کہتے ہیں کہ دنیا و آسمان میں موجود ہر چیز کا ایک ہی اصول ہے کیوں کہ یہ تمام چیزیں اللہ تعالیٰ نے بنائی ہیں۔ ایک ہی استاد کے ہاتھوں سے بنی ہوئی یہ تمام چیزیں مختلف ہیں اور اللہ کی قدرت کا نمونہ ہیں۔

اس نظم کے سوالوں کے جوابات کے لیے یہاں کلک کریں۔

سوال نمبر 2 : اس حمد کا مرکزی خیال بیان کیجیے۔

یہ نظم ہماری درسی کتاب سے لی گئی ہے۔ اس نظم کے شاعر کا نام مولوی محمد اسمٰعیل میرٹھی ہے۔ یہ نظم کلیاتِ اسماعیل میرٹھی سے ماخوذ کی گئی ہے۔

Advertisement

مرکزی خیال

اس حمد میں شاعر اللہ تعالیٰ کی بڑائی بیان کررہے ہیں۔ وہ اس نظم میں اللہ تعالیٰ کی واحدانیت اور ان کی قدرت کا ذکر کررہے ہیں۔ اسمعٰیل میرٹھی نے اس نظم میں اللہ تعالیٰ کی ذات کے ہمیشہ سے ہونے اور ہمیشہ تک رہنے کا اقرار کیا ہے۔ اس نظم میں شاعر اللہ تعالیٰ کی قدرتوں کا ذکر کرتے ہوئے ستاروں کی مثال بھی دیتے ہیں اور چاند کی مثال بھی دیتے ہیں۔ غرض کہ اس دنیا اور اس پوری کائنات کی ہر شے اللہ تعالیٰ کی قدرت کا ثبوت ہے اور شے کا خالق ہمارا رب ہے۔

سوال نمبر 3 : خالی جگہوں میں مناسب لفظ لکھیے۔

  • (الف) بندھے ہیں (بہم) سخت زنجیر سے۔
  • (ب) وہ (زنجیر) کیا ہے؟ کششِ باہمی۔

(ج) بنائی ہے تو نے یہ کیا (خوب) چھت۔

Advertisement
  • (د) یہ تیری ہی (قدرت) کے سب کھیل ہیں۔
  • (و) تصور تری (ذات) کا ہے محال۔

سوال نمبر 4 : جوابات دیجیے :

(الف) اس حمد میں کُل کتنے مصرعے اور کتنے شعر ہیں؟

جواب : اس حمد میں کُل اٹھارا مصرعے اور نو اشعار ہیں۔

(ب) کسی اور نظم کا ایک شعر لکھ کر مصرع اولیٰ اور مصرع ثانی کی نشان دہی کیجیے۔

خلق کے سرور ، شافع محشر ﷺ (مصرع اولیٰ)
مرسل داور ، خاص پیمبر ﷺ (مصرع ثانی)

Advertisement

سوال نمبر 5 : درج ذیل سوالات میں سے درست جواب پر (درست) کا نشان لگائیے :

(الف) ایک شعر میں مصرعے ہوتے ہیں :

Advertisement

۱) دو ✔
۲) چار
۳) چھ
۴) آٹھ

(ب) حمد کے چوتھے شعر میں بن تیل کے چراغوں سے مراد ہے :

Advertisement

۱) پھول
۲) ستارے ✔
۳) بلب
۴) ہیرے

Advertisement

(ج) اس دنیا کی ہر چیز قائم ہے :

Advertisement

۱) تدبیر سے
۲) تکبیر سے
۳) زنجیر سے
۴) تقدیر سے ✔

(د) اس نظم میں لفظ آئین کا مطلب ہے :

Advertisement

۱) طریقہ
۲) قانون
۳) ضابطہ
۴) اصول ✔

(ہ) کائنات میں سب کھیل ہیں :

Advertisement

۱) ہمت کے
۲) قدرت کے ✔
۳) عزت کے
۴) فرصت کے

Advertisement

Advertisement

Advertisement