Advertisement

تاریخ انسان کی یادداشت کا وہ بیش بہا خزانہ ہے جس پر چل کر انسان اپنے حال اور مستقبل کے بارے میں سوچ سکتا ہے۔ کسی انسان کی یادداشت کھو جائے تو وہ کسی قابل نہیں رہتا۔ بالکل اپنے ماضی سے کٹ کرگزشتہ باتوں کو بھلا کر انسان اپنی زندگی بسر نہیں کرسکتا۔ تاریخ صرف اور صرف انسانی ذہن کی یادوں کو محفوظ کر کے اور اس کی قوت حافظہ کا تحفظ کرتے ہوئے انسان کو ایک ایسا راستہ فراہم کرتی ہے جس پر چل کر وہ اپنی منزل پالیتا ہے۔

Advertisement

علم تاریخ کی اپنی تاریخ بہت پرانی ہے۔ جب سے انسان دنیا میں آیا تاریخ کا آغاز تو اس دن ہی سے ہو گیا تھا۔ تاریخ کی اہمیت اور مقصدیت کا اندازہ اس چیز سے بخوبی لگایا جاسکتا ہے کہ اللہ تعالی قرآن پاک میں خودرانبیاء علیہم السلام کے واقعے جو تاریخی نوعیت کے ہیں بیان کرتا ہے۔ جس سے انبیاء کے حالات اور ان کے دور کا علم ہوجاتا ہے تو اس سے صاف ظاہر ہے کہ علم تاریخ ایک ایسا علم ہے جس کا آغاز انسان کے ساتھ ہوا اور اللہ تعالی نے خود قرآن پاک میں تاریخی واقعات کو بیان کیا جس سے بنی نوع انسان کو نبیوں کی گزری ہوئی زندگی اور ان اقوام کا علم ہوا جو اس میں وارد ہوئیں۔

Advertisement

پس علم تاریخ ایک ایساعلم ہے جو اپنے اندر ایک مقصدیت اور معنی رکھتا ہے۔ تاریخ کے بغیر کوئی قوم کوئی نسل کوئی انسان مکمل نہیں ہے بلکہ تاریخ کے بغیر دنیا کا ہر علم نا کافی ہے۔ اب ہم تاریخ کے متعلق اس بات کا جائزہ لیتے ہیں کہ تاریخ کیا ہے اور اس کی تعریف اور مفہوم کی وضاحت ہو سکے۔

Advertisement

علم تاریخ ایک بہت پرانا علم ہے۔ بنیادی طور پر یہ عربی کا لفظ ہے اس کا اصل ماخذ لاطینی زبان کا ایک لفظ "ہسٹورما” ہے اور وہاں سے اس کو انگریزی میں لفظ ہسٹری میں تبد یل کر کے شامل کر لیا گیا۔ تاریخ کےلفظی معنی اطلاع اور تحقیق، معاملات کے ہیں۔ اصطلاح میں تاریخ اس وقت کے بتانے کا نام ہے جس سے زاویوں کے حالات وابستہ ہیں۔ انگریزی کے لفظ ہسٹری کے معنی بھی بالکل یہی ہیں یعنی ابتدائی تفتیش و تحقیق لیکن ابتدائی تحقیق و تفتیش کسی بھی علم میں ہوسکتی ہے۔ اس لیے ہم صرف علم تاریخ کے متعلق ہی بات کریں گے۔

تاریخ کے مفکرین کی آراء:

مختلف مفکرین کے خیالات تاریخ کے بارے میں مختلف ہیں۔ ہر ایک نے اپنے دماغ، حالات و واقعات اور ریسرچ کے مطابق علم تاریخ کی تعریف کی ہے۔ مثلاً:

Advertisement

( 1 ) کارلائل:
تاریخ مختلف سوانح عمریوں کا نچوڑ ہے۔

( 2 ) کالنگ وڈ:
تاریخ تحقیق و تفتیش کا نام ہے۔ تحقیق کیسی ہو اور کس قسم کی ہونی چاہیے اس بارے میں، میں کچھ نہیں کہ سکتا۔

Advertisement

( 3 ) برٹرینڈ رسل:
تاریخ زیادہ تر اس سوال کا جواب فراہم کرتی ہے کہ واقعات کس طرح رونما ہوئے۔

( 4 ) شمس الدین محمدن:
تاریخ ایک علم ہے اور واقعات کی تحقیق و تفتیش کا نام ہے۔

Advertisement

( 5 ) ایک مورخ کے مطابق
انسانی خطا پزیر شہادت و فہم کے مطابق قصہ ہائے پارینہ کا زیادہ محنت کے ساتھ بیان تاریخ کہلاتا ہے۔

( 6 ) پروفیسر ڈبلیو واش:
تاریخ کا اصل مقصد ہے لوگوں کو ان کے دور کے کردار سے دوسرے دور کے تقابلی جائزہ کی مدد سے واقف کروانا۔

Advertisement

تاریخ میں کئی نشیب وفراز آئے۔ کبھی اس کو قصہ کہا گیا اور کبھی سچ، پھر اس میں فلسفہ شامل ہو گیا اور آہستہ آہستہ تاریخ ایک علم بن گیا اور تمام علوم پر حاوی ہو گیا کیونکہ دنیا میں روپزیر ہونے والا کوئی بھی واقعہ ایسا نہیں جس کا تعلق تاریخ سے نہ ہو۔ تاریخی واقعات سے انسان گزرے ماضی کے واقعات کے مطالعے سے جرأت مند ہو جاتا ہے اور اس جرات مندی میں بیش بہا اضافہ ہوجاتا ہے۔

بر ٹرینڈرسل کہتا ہے: "تاریخ ایک دلچسپ مضمون ہے اوراس کا مطالعہ انسان کو جرات مندی کا جذبہ عطا کرتا ہے”

Advertisement

جس معاشرے کو اپنی تاریخ کا علم ہوگا وہی معاشرہ اپنے وجود کے بارے میں بھی آگاہ ہوگا۔ انسان جب اپنے آپ سے آگاہ ہوگا تو کچھ کرنے کے قابل ہوگا تو یہ آگاہی تاریخ فراہم کرتی ہے۔ یاداشت کے بغیر تو انسان مخبوط الحواس گردانا جاتا ہے۔ اس طرح اگر وہ تاریخ سے بے خبر ہوگا تو ظاہر ہے اپنے ماضی اپنے آپ سے بے بہرہ ہے تو کس طرح آئندہ کے بارے میں سوچے گا اور وہ بے بس ہو گا اور معاشرے کے رحم وکرم پر ہو گا وہ اس کے ساتھ جیسا چاہیں سلوک کریں۔ پروفیسر ڈبلیوواش کے مطابق دو ادوار کے موازنے سے جو بات نکلے وہ عام انسان کو سمجھانا ثقافت و تاریخ کہلاتی ہے۔

Advertisement

Advertisement

Advertisement