• روبروئے دوست ہنگام سلامی آہی گیا
  • رخصت اے دیروحرم ، دل کا مقام آ ہی گیا
  • منتظر کچھ رند تھے جس کے وہ جام آ ہی گیا
  • باش اے گردوں ک وقت انتقام آہی گیا
  • ہر نفس خود بن کے میخانہ بجام آ ہی گیا
  • توبہ جس سے کانپتی تھی وہ مقام آ ہی گیا
  • اللہ اللہ یہ مری ترک طلب کی وسعتیں
  • رفتہ رفتہ سامے حسن تمام آ ہی گیا
  • اول اول ہر قدم پر تھیں ہزاروں منزلیں
  • آخر آخر اک مقام بے مقام آ ہی گیا
Advertisements