• دام الفت سے چھوٹتی ہی نہیں
  • زندگی تجھ کو بھولتی ہی نہیں
  • کتنے طوفاں اٹھائے آنکھوں نے
  • ناؤ یادوں کی ڈوبتی ہی نہیں
  • تجھ سے ملنے کی تجھ کو پانے کی
  • کوئی تدبیر سوجھتی ہی نہیں
  • ایک منزل پہ رک گئی ہے حیات
  • یہ زمیں جیسے گھومتی ہی نہیں
  • لوگ سر پھوڑ کر بھی دیکھ چکے
  • غم کی دیوار ٹورتی ہی نہیں