• دیار دل نہ رہا بزم دوستاں نہ رہی
  • اماں کی کوئی جگہ زیر آسماں نہ رہی
  • رواں ہیں آج بھی رگ رگ میں خون کی موجیں
  • مگر وہ ایک خلش وہ متاعِ جاں نہ رہی
  • لڑیں غموں کے اندھیروں سے کس کی خاطر ہم
  • کوئی کرن بھی تو اس دل میں ضوفشاں نہ رہی
  • میں اس کو دیکھ کے آنکھوں کا نور کھو بیٹھا
  • یہ زندگی مری آنکھوں سے کیوں نہاں نہ رہی
  • زباں ملی بھی تو کس وقت بے زبانوں کو
  • سنانے کے لیے جب کوئی داستاں نہ رہی

Advertisements