Advertisement
  • نظم : نعت
  • شاعر : ماہرالقادری

تعارف ِنظم

نعت وہ صنف شاعری ہے جس میں حضرت محمدﷺ کی تعریف کی گئی ہو۔ یہ نعت ہماری درسی کتاب سے موخوز ہے جو ایک مشہور شاعر ماہرالقادری نے لکھی ہے۔

Advertisement

تعارفِ شاعر

ماہر القادری کی پیدائش 30 جولائی، 1907ء میں ہوئی۔وہ پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے نامور شاعر، صحافی، محقق اور نقاد تھے۔ 1926 میں علی گڑھ سے میٹرک کرنے کے بعد بجنور سے نکلنے والے مشہور اخبار ’مدینہ‘ سے وابستہ ہوگئے۔ ’مدینہ‘ کے علاوہ اور بھی کئی اخباروں اور رسالوں کی ادارت کی۔ ممبئی میں قیام کے دوران فلموں کے لئے نغمے بھی لکھے۔ تقسیم کے بعد پاکستان چلے گئے اور کراچی سے ماہنامہ ’فاران‘ جاری کیا جو بہت جلد اس وقت کے بہترین ادبی رسالوں میں شمار ہونے لگا۔

Advertisement

ماہر القادری کی بیس سے زیادہ کتابیں شائع ہوئیں۔ کچھ کتابوں کے نام یہ ہیں۔ آتش خاموش ، شیرازہ ، محسوسات ماہر ، نغمات ماہر ماہر ، جذبات ماہر ، کاروان حجاز ، زخم ومرہم ، یاد رفتگاں ، فردوس ، کردا ، طلسم حیات۔12 مئی 1978 کو جدہ میں ایک مشاعرے کے دوران حرکت قلب بند ہوجانے سے انتقال ہوا۔

نظم کی تشریح

سلام اس پر کہ جس نے بے کسوں کی دستگیری کی
سلام اس پر کہ جس نے بادشاہی میں فقیری کی

شاعر فرماتے ہیں کہ سلام اس پیارے رسولﷺ پر کہ جس نے بےکسوں یعنی محتاجوں کی ہمیشہ مدد کی۔ اور بادشاہی حاصل ہونے کے باوجود بھی اس نے فقیری اختیار کی۔

Advertisement
سلام اس پر کہ اسرار محبت جس نے سمجھائے
سلام اس پر کہ جس نے زخم کھا کر پھول برسائے

شاعر فرماتے ہے کہ رسولﷺ پر سلام جنہوں نے انسانوں کو محبت کرنے کا طریقہ سمجھایا اور جنہوں نے زخم اور تکلیف اٹھانے کے باوجود بھی پھول برسائے۔

Advertisement
سلام اس پر کہ جس نے بھوکے پیاسوں کو قبائیں دیں
سلام اس پر کہ جس نے گالیاں کھا کر دعائیں دیں

شاعر نبیِ آخرالزماں ﷺ کی تعریف میں فرماتے ہیں کہ ان پر ہزاروں اور لاکھوں سلام کہ جس نے بھوکے پیاسوں کو کھلایا اور جس نے گالیاں کھا کر بھی لوگوں کو دعائیں دیں۔

سلام اس پر کہ جس نے دشمنوں کو حیات جاوداں دے دی
سلام اس پر ابوسفیان کو بھی جس نے اماں دے دی

شاعر فرماتے ہیں کہ رحمت اللعالمینﷺ پر سلام جنہوں نے اپنے دشمنوں کو معاف کردیا اور جان لینے کے بجائے ان کو زندگی بخشی اور ابو سفیان جو پہلے اسلام اور محمدﷺ کے دشمن تھے، ان کو بھی معاف کیا۔

Advertisement
سلام اس پر کہ جس کے گھر میں چاندی تھی نہ سونا تھا
سلام اس پر کہ ٹوٹا بوریا جس کا بچھونا تھا

شاعر، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی سادہ زندگی کی طرف اشارہ کرتے ہوئے فرماتے ہیں کہ سلام ہو اس نبیﷺ پر کہ جن کے گھر میں نہ چاندی تھی نہ سونا تھا اور گھر میں جس کے ٹوٹا ہوا بچھونا تھا۔

سلام اس پر کہ جو ٹوٹے ہوئے حجرے میں رہتا تھا
سلام اس پر کہ جو ہر وقت سچی بات کہتا تھا

شاعر، نبیﷺ کی تعریف میں فرماتے ہیں کہ اس پر سلام ہو جو ایک سادہ اور ٹوٹے پھوٹے گھر میں رہتے تھے اور جو کبھی کسی سے کوئی جھوٹ نہیں بولتے تھے۔

Advertisement
سلام اس پر کہ جس کی سادگی درسِ بصیرت ہے
سلام اس پر کہ جس کی ذات فخر آدمیت ہے

شاعر فرماتے ہیں کہ اس پر سلام ہو کہ جس کی سادگی میں دانائی کا سبق ہے اور جس کی ذات اور وجود پر انسانیت کو فخر ہے.

سلام اس پر کہ جس نے جھولیاں بھردیں فقیروں کی
سلام اس پر کہ مشکیں کھول دیں جس نے اسیروں کی

شاعر فرماتے ہیں کہ نبی کریمﷺ پر سلام ہو جنہوں نے فقیروں کو کھلایا پلایا اور غلاموں کو آزاد کرایا۔

Advertisement
سلام اس پر جو سچائی کی خاطر دکھ اٹھاتا تھا
سلام اس پر جو بھوکا رہ کے اوروں کو کھلاتا تھا

شاعر اس شعر میں فرماتے ہیں کہ اس پر سلام ہو کہ جس نے سچائی کی خاطر تکلیف اور دکھ اٹھائے اور جو خود بھوکا رہ کر اوروں کو کھلاتا تھا۔

سلام اس ذاتِ اطہر پرجو والی تھے یتیموں کے
سلام اس روح انور پر جو حامی تھے غریبوں کے

شاعر اس شعر میں ذاتِ اطہر یعنی پاک ذاتﷺ پر سلام بیچتے ہوئے فرماتے ہیں کہ وہ یتیموں کے مالک تھے اور وہ روح انور جو غریبوں کے مددگار تھے۔

Advertisement
سلام اس پر کہ جس نے فضل کے موتی بکھیرے ہیں
سلام اس پر برُوں کو جس نے فرمایا کہ میرے ہیں

نظم کے آخری شعر میں شاعر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم پر سلام بھیجتے ہوئے فرماتے ہیں کہ وہ پاک ذات جس نے امت پر فضل و کرم کے موتی بکھیرے اور بُرے لوگوں کو بھی جس نے اپنا کہا۔

سوالات:

سوال: نعت کسے کہتے ہیں؟

ج: نعت اس نظم کو کہتے ہیں جس میں حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی تعریف کی جائے۔

Advertisement

سوال: حضور صلی اللہ علیہ وسلم کو فخر آدمیت کیوں کہا گیا ہے؟

ج: آپﷺ نے لوگوں کو دانائی کا سبق دیا، غریبوں کو کھلایا اور حاجت مندوں کی حاجت کو پورا کیا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سچائی کی خاطر دکھ اور تکلیف برداشت کی،اور سب سے بڑی چیز انسان کو جہالت کے اندھیرے سے نکالا اس لئے آپ صلی وسلم کو فخرِ آدمیت کہا گیا ہے۔

سوال: اس نظم میں حضورﷺ کی جو صفات بیان کی گئی ہیں ان میں سے کوئی پانچ اپنے الفاظ میں لکھیے۔

  • ج: اس نظم میں حضورِ اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی جو صفات بیان کی گئی ہے ان میں سے پانچ درجہ ذیل ہیں۔
  • آپﷺ نے خود بھوکا رہ کر غریبوں کو کھلایا۔ (دردمند)
  • آپﷺ نے ہمیشہ سچی بات کہی۔ (صادق)
  • آپﷺ نے غریبوں اور یتیموں کے لئے دل میں ہمیشہ ہمدردی رکھی۔ (ہمدرد)
  • آپﷺ نے جانی دشمن کو بھی معاف کیا۔ (صلہ رحمی)
  • آپﷺ نے ہمیشہ سادگی کی زندگی بسر کی۔ (سادگی)

خالی جگہوں کو ان لفظوں سے پر کیجیے جو نظم میں استعمال ہوئے ہیں۔

  • سلام اس پر کہ جو ٹوٹے ہوئے ’حجرے‘ میں رہتا تھا۔
  • سلام اس پر کہ جس نے ’فضل‘ کے موتی بکھیرے ہیں۔
  • سلام اس پر کہ جس نے دشمنوں کو ’حیات جاوداں‘ دے دی۔
  • سلام اس پر جو ’سچائی کی خاطر‘ دکھ اٹھاتا تھا۔
  • سلام اس پر کہ جس نے ’بے کسوں‘ کی دستگیری کی۔

Advertisement
Advertisement

Advertisement