• یہ رکے رکے سے آنسو یہ دبی دبی سی آہیں
  • یوں ہی کب تلک خدایا غم زندگی نباہیں
  • کہیں ظلمتوں میں گھر کر رہے تلاش دشت رہبر
  • کہیں جگمگا اٹھی ہیں مرے نقش پا سے راہیں
  • ترے خانماں خرابوں کا چمن کوئی نہ صحرا
  • یہ جہاں بھی بیٹھ جائیں وہیں ان کی بارگاہیں
  • کبھی جادۂ طلب سے جو پھرا ہوں دل شکستہ
  • تیری آرزو نے ہنس کر وہیں ڈال دی ہیں باہیں
  • میرے عہد میں نہیں ہے یہ نشان سر بلندی
  • یہ رنگے ہوئے عمامے یہ جھکی جھکی کلاہیں