تعارف

احمد ندیم قاسمی ایک ممتاز شاعر ، صحافی ، ادیب نقاد ، ڈرامہ نگار اور مختصر کہانی کے مصنف تھے۔ انہوں نے "فنون” نامی ایک اہم ادبی جریدہ بھی شائع کیا جو انھوں نے اپنی وفات تک پوری لگن کے ساتھ شائع کیا۔

پیدائش

احمد ندیم قاسمی ۲۰ نومبر ۱۹۱۶ کو سرگودھا کی تحصیل خوشاب کی کورنگی میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کا نام احمد شاہ رکھا گیا تھا۔ ان کا ایک بھائی پیر زادہ محمد بخش قاسمی اور ایک بہن تھی۔ ابتدائی تعلیم اپنے گاؤں سے حاصل کی۔ ۱۹۳۵ میں انہوں نے پنجاب یونیورسٹی سے ایم اے کی ڈگری حاصل کی۔ انہوں نے ۱۹۳۶ میں لاہور میں ریفارم کمشنر کے دفتر میں بطور مصنف کام کرنا شروع کیا۔ مختلف مقامات پر کام کرنے کے بعد ، انہوں نے ۱۹۴۱ میں دہلی میں منٹو سے ملاقات کی۔ اس وقت منٹو فلموں کے اسکرپٹ لکھ رہے تھے۔

ادبی زندگی

قاسمی صاحب نے ان فلموں کے لئے دھن لکھے لیکن بدقسمتی سے اب تک کوئی بھی فلم ریلیز نہیں ہوئی۔ تقسیم ہند کے بعد انہوں نے تین فلموں ‘آغوش’ ، ‘دو راستے’ اور ‘لوری’ کے لئے مکالمے لکھے۔ ۱۹۴۲ میں وہ دہلی سے لاہور واپس آئے اور امتیاز علی تاج کے رسالے ‘پھول’ اور ‘تہذیب نسواں’ کی ایڈیٹنگ میں شامل ہوئے جو دارالشاہت ، پنجاب ، لاہور سے شائع ہوئے تھے۔ پارٹشن آف انڈیا کے بعد انہوں نے پشاور میں ریڈیو پاکستان کے لئے اسکرپٹ رائٹر کی حیثیت سے کام کیا لیکن زیادہ دیر وہاں جاری نہیں رہا۔

۱۹۴۷ میں وہ نامور جریدے "سویرا” کے ادارتی بورڈ میں شامل ہوئے اور ترقی پسند مصنفین ایسوسی ایشن ، پاکستان کے سیکرٹری جنرل منتخب ہوئے۔ مخالف رویہ کی وجہ سے وہ گرفتار ہوئے اور سات ماہ تک قید رہے۔ ۱۹۶۳ میں قاسمی صاحب نے اپنا جریدہ "فنون” شروع کیا جس نے جلد ہی اپنی شہرت چاروں اور پھیلادی۔ ۱۹۷۴ سے ۲۰۰۶ تک انہوں نے مجلس ترقی ادیب ، لاہور کے ہدایت کار کے طور پر کام کیا۔
انہوں نے شاعری، افسانہ، تنقید، صحافت اور فن جیسے موضوعات پر ۵۰ کتابیں لکھیں ، اور آپ عصرِ حاضر کے اردو ادب میں ایک اہم شخصیت تھیں۔

ان کی شاعری کو ان کی انسانیت پسندی سے ممتاز کیا گیا ، اور ان کی اردو افسان (مختصر کہانی) کے کام کو محض منشی پریم چند کے خیال میں دیہی ثقافت کی تصویر کشی میں شامل کیا گیا ہے۔ وہ تقریباً نصف صدی تک ادبی رسالہ "فنون” کے ایڈیٹر اور ناشر بھی رہے۔

قاسمی صاحب نے کئی دہائیوں تک راوں داوں اور ڈیلی جنگ جیسے قومی اخباروں میں ہفتہ وار کالم لکھے۔ ان کی شاعری میں روایتی غزلیں اور جدید نظم دونوں شامل ہیں۔ احمد ندیم قاسمی بھی دوسروں کی رہنمائی اور ان کی تزئین کا عزم رکھتے تھے۔

افسانوی مجموعے

قاسمی صاحب کی مختصر کہانیوں کے مجموعوں میں چوپال ، بگولے ، ٹولو او غروب ، گرداب ، سیلاب ، آنچل ، آبلے ، آس پاس ، درو دیوار ، سنت ، بازار حیات ، برگ حنا ، گھر سے گھر تک ، نیلا پتھر ، کپاس کا پھول ، کوہ پیما ، اور پت جھڑ شامل ہیں۔

شعری مجموعے

ان کے شعری مجموعوں میں رم جھم ، جلال و جمال ، شعلہ گل ، دشت وفاء ، محیط ، دوام ، تہذیب و فن ، دھڑکنیں ، لوح خاک ، ارض و سماء اور انوار و جمال شامل ہیں۔ ان کی تنقیدی کتابیں ہیں ادب اور تعلیم کے رشتے، پس الفاظ ، اور معانی کی تلاش۔

دسمبر ۲۰۱۱ میں پروفیسر فتح محمد ملک اور نامور کالم نگار عطا الحق قاسمی نے بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی ، اسلام آباد میں احمد ندیم قاسمی کی زندگی اور کارناموں پر ایک سیمینار کا اہتمام کیا۔ ان کے ادبی کام کو اردو مصنفین ، شاعروں اور نقادوں نے سراہا اور ان کی تعریف کی تھی ، اگرچہ ان کے ادبی کام اور ان کی شخصیت پر بھی تنقید کی جاتی تھی۔

فتح محمد ملک احمد ندیم قاسمی کے ایک دیرینہ دوست ہیں۔ احمد ندیم قاسمی کی زندگی اور شخصیت کے بارے میں اپنی کتاب میں ، جس کو ‘ندیم شناسی’ کہا جاتا ہے ، میں یہ تاثر دیا گیا ہے کہ قاسمی کے خطوط سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ قاسمی کو فیض کے لئے دفن ناپسند تھا اور شاید وہ خود کو فیض سے بڑا شاعر سمجھتے ہیں۔ "خطوط سے یہ بھی انکشاف ہوا ہے کہ جب قاسمی کی ہم عصری بات آتی ہے تو قاسمی ایک ناروا نفسیاتی شخصیت اور پھولی ہوئی انا رکھتے تھے۔ انہوں نے جان بوجھ کر یا لاشعوری طور پر فیض کو سہارا دینے کی کوشش کی ، اگرچہ اس کا کوئی اثر نہیں ہوا۔”

پاکستان کے ادبی حلقوں کے کچھ لوگ یہ بھی خیال کرتے ہیں کہ احمد ندیم قاسمی ، وزیر آغا اور منیر نیازی کے مابین کچھ حسد اور دشمنی تھی۔ جب بھی ، ہم بیسویں صدی کے آخر میں اردو شاعری کے بارے میں بات کریں گے ، تب احمد ندیم قاسمی کا نام ضرور آئے گا۔ مگر حکومت پاکستان نے ان کو ۱۹۶۸ میں پرائیڈ آف پرفارمنس اور ۱۹۸۰ میں ستارہ امتیاز جیسے ایوارڈز ان کے ادبی کام کے لئے دیا۔

۱۰ جولائی ۲۰۰۶ میں قاسمی کا لاہور میں انتقال ہوگیا اور ان کو وہیں لاہور میں ہی دفن کیا گیا۔

Advertisements