مضمون کی تعریف

کسی بھی عنوان پر معلومات یکجا کرکے اس کے ذیلی موضوعات پر روشنی ڈالتے ہوئے دلچسپ اور جامعہ مواد کو ترتیب، تسلسل اور روانی کے ساتھ پیش کرنا یا کسی موضوع پر ترتیب کے ساتھ اظہار خیال کرنا "مضمون” کہلاتا ہے۔ مضمون کو تین اجزاء میں تقسیم کیا جاتا ہے۔

  • ١ تمہید جس میں موضوع کا تعارف کروایا جاتا ہے
  • ٢ نفس مضمون جس میں موضوع کی تفصیلات بیان کی جاتی ہیں۔
  • ٣ خاتمہ

مضمون میں ادب، سائنس، مذہب، ٹیکنالوجی امراض، علاج، سیاست، سماج، معاشرت، غرض کہ ہر موضوع پر خیالات کا اظہار ہو سکتا ہے۔ مختلف موضوعات پر معلومات فراہم کر کے اکثر اسے ایک ہی نشست میں مطالعہ کے قابل بنایا جاسکتا ہے۔ اردو میں مضمون نگاری کی روایت انگریزی ادب کی دین ہے۔چنانچہ 1824ء میں جب دلی کالج قائم کرکے انگریزوں نے علوم و فنون کی ترقی پر توجہ دی تو اس کالج سے وابستہ ماسٹر رام چندر جی نے سب سے پہلے "مضمون نگاری” کی بنیاد رکھی جس کے نقش قدم پر چلتے ہوئے ماسٹر پیارےلال اور پھر شمس العلماء ذکاء اللہ نے مضمون نگاری کی روایت کو فروغ دیا۔سرسید احمد خان اور ان کے رفقاء نے مضمون نگاری کو فروغ دیا۔ موضوعات کے لحاظ سے مضامین کی کئی قسمیں ہیں جیسے علمی مضامین، ادبی مضامین، تاریخی مضامین، سیاسی مضامین، معاشی مضامین، معاشرتی مضامین، سائنسی مضامین، تنقیدی مضامین اور تحقیقی مضامین وغیرہ۔

Close