رباعی کی تعریف

رباعی کا ایک نام دو بیتی بھی ہے .بیت کے معنی ہیں شعر .اس لئیے دو بیتی کے معنی ہوئے دو شعروں والی نظم .عربی میں ربع کے معنی چار کے ہیں .رباعی میں چار مصرعے ہوتے ہیں .اس لیے چار مصرعوں والی نظم کا نام رباعی ہو گیا۔ رباعی قطعے سے مختلف ہوتی ہے .قطعے میں شعروں کی تعداد دو سے زیادہ ہو سکتی ہے لیکن رباعی میں صرف دو شعر یا چار مصرعے ہی ہوتے ہیں .دوسری بات یہ کہ رباعی کے پہلے ۔دوسرے اور چوتھے مصرعے ہم قافیہ یا ہم قافیہ و ہم ردیف ہوتے ہیں .رباعی کی خاص شناخت یہ ہے کہ اس کہ لیے ایک خاص بحر مقرر ہے جب کہ قطعے کے لیے ایسی کوئی پابندی نہیں .

تفصیل

رباعی کے سلسلے میں چند اور باتیں بھی اہم ہیں اس میں جو مضمون بیان کیا جاۓ وہ اچھوتا ہو .جو خیال پیش کیا جاۓ وہ بلند ہو اور انداز بیان میں دلکشی پائی جاۓ .ضروری ہے کہ رباعی کا چوتھا یعنی آخری مصرع زیادہ پر زور ہو اور محسوس ہو کہ رباعی کا پورا مضمون اس میں سمٹ آیا ہے۔ اردو شاعری کی دوسری اصناف کی طرح رباعیاں بھی شروں ہی سے کہی جانے لگی تھیں .١٧٠٠ ء میں ایک دکنی شاعر میر عبدلقادر نے اردو کی پہلی رباعی کہی .شعراء دہلی نے بھی اس طرف توجہ کی .چنانچہ میرؔ ۔دردؔ ۔سوداؔ۔میر حسنؔ ۔مصحفیؔ۔جراتؔ ۔انشاءؔ۔مومنؔ ۔غالبؔ وغیرہ تقریباً تمام شعراء نے رباعیاں کہیں۔

انیسؔ و دبیرؔ نے اس طرف خاص توجہ دی .یہ دونوں مرثیہ نگار مجلس میں مرثیہ پیش کرنے سے قبل سامعین کو متوجہ کرنے کے لیے پہلے چند رباعیاں پیش کرتے تھے .اس سے رباعیسائی کی مقبولیت میں بہت اضافہ ہوا . ابھی تک روباعی میں بالعموم حسن و عشق کا مضمون ہوتا تھا اب اخلاق اور پند و نصیحت نے روباعی میں جگہ پائی .ان بزرگوں نے خصوصیت کے ساتھ اہل بیت کی مدح میں روباعیاں کہیں .سانحہ کربلا پر اظہارِ غم کیا پھر اخلاق و نصیحت کے مضامین پیش کیے ۔

رباعی کے فروغ میں خاص طور پر میر انیسؔ کی کوشش کو بڑا دخل ہے .ان کے مرثیوں کی طرح ان کے روبا عیاں بھی بہت بلند پایا کی ہیں .انیسؔ کے بعد انکی پیروی میں متعدد شعراء نے روباعیاں کہیں .پیارے صاحب رشید نے روبا عی کی طرف خاص طور پر دھیان دیا ۔ مغرب کے اثر سے شاعری میں مقصدیت پر زور دیا جانے لگا تو حالیؔ اور اکبرؔ نے روباعی کو اپنے پیغام کا ذریعہ بنایا اور اس سے درس اخلاق کا کام لیا .حالیؔ کی اخلاقی روبا عیاں بہت مقبول ہوئیں .اکبرؔ طنز نگار تھے اور طنز نگاری سے سماج کی اصلاح کرنا چاہتے تھے .

انھوں نے اصلاح کے نقطہ نظر سے طنزیہ روبا عیاں کہ کر اس صنف کو مزید وسعت دی .اسی دور میں جگت موہن لال رواںؔ انّا وی کی روباعیوں نے قدر شناسوں سے خراج تحسین وصول کیا .اقبال نے بھی روباعی کے ذریعے اپنے مخصوص پیغام کو قارئین تک پہنچایا ۔ دورِ حاضر کے شعراء اس حقیقت سے پوری طرح باخبر ہیں کہ روباعی ایک مفید اور دلکش صنفِ سخن ہے اور اختصار اس کی سب سے بڑی خوبی ہےچنا نچہ ہمارے عہد کے شعراء نے اس صنفِ سخن کو بھی وسیلہ اظہار بنایا ہے .ان میں یگانہ چنگیزی .جوش ملیحآبادی ۔امجد حیدرآبادی ۔آسیؔ سکندر پوری .شفیق جو نپوری اور فراق گورکھ پوری قابل ذکر ہیں .روباعی کی ایک مثال ملاحظہ ہو .

ہر صبح غموں میں شام کی ہے میں نے
خوں نا بہ کشی مدام کی ہے میں نے
یہ مہلتِ کم کہ جس کو کہتے ہیں عمر
مر مر کے غرض تمام کی ہے میں نے

[/et_pb_text][/et_pb_column][/et_pb_row][/et_pb_section]

Close