Advertisement

تعارف

برصغیر کے نامور صوفی شاعر حضرت خواجہ غلام فرید ۲۵ نومبر ۱۸۴۵ کو (بمطابق ۵ ربیع الثانی) چاچڑاں شریف ریاست بہاولپور میں خواجہ خدا بخش عرف محبوب الہٰی کے ہاں پیدا ہوئے۔ آپ کے آباؤ اجداد فاتحین سندھ کے ساتھ عرب سے سندھ میں داخل ہوئے تھے۔ آپ کے آباؤاجداد کے ایک مرید مٹھن خان کے نام سے کوٹ مٹھن کے نام سے ایک قصبہ آباد ہوا اور آپ کے اجداد نے پہلے وہاں سکونت اختیار کی پھر چاچڑاں شریف منتقل ہوگئے۔ آپ کی پیدائش بھی وہیں پر ہوئی۔

Advertisement

آپ بہت کم سن تھے جب آپ کے والد محترم اس جہاں فانی سے کوچ کر گئے۔ والد کے انتقال کے بعد آپ شاہی محل کی سرپرستی میں چار سال تک پرورش پاتے رہے اور آپ کی عمر بلوغت کے قریب ہی تھی جب آپ اپنے آبائی گاؤں واپس آگئے اور اپنے بڑے بھائی جو کہ اس وقت کی معتبر شخصیت تھے ، کی بیعت کر کے ان کی مریدی قبول کر لی جس کا تذکرہ آپ نے ان الفاظ میں کیا۔

Advertisement
فخر جہاں قبول کیتو سے
واقف کل اسرار تھیوسے

جب تک مرشد زندہ رہے آپ ان کی خدمت میں وقت گزارتے رہے اور جب ان کا انتقال ہوا تو خواجہ غلام فرید خود گدی نشین ہو گئے۔

Advertisement

شاعری

آپ نے اپنی روحانیت کو شاعری کے ذریعے بھی فروغ دیا۔ آپ نے سرائیکی زبان کو اپنے احساسات بیان کرنے کے لئے استعمال کیا۔ آپ کی شاعری تصوف کی روح سے نمایاں ہے۔ آپ کا کلام تصوف میں تربتر ہے۔

تصانیف

آپ کی تصانیف میں "دوھڑے” اور "کافیاں” قابلِ ذکر ہیں۔

Advertisement

آپ کے کلام پیشِ نظر ہیں :

کلام

رتوں والیاں، ربّ لائے نیں ساون،
کائی مینہہ میہر دے وسّ گئے۔
ٹر گئے یار دناں دے،
ن کوئی پتہ نشانی دسّ گئے۔
اونہا ویلے سانوں چیتے آون،
جدوں نال اساں دے ہسّ گئے۔
غلام فرید اوہ سجن ناہ نیں،
جہڑے چھوڑ ستی نوں نسّ گئے۔
(خواجہ غلام فرید)

Advertisement

کلام

میڈا عشق وی تُوں ۔۔۔۔۔ میڈا یار وی تُوں
میڈا دین وی تُوں ۔۔۔۔۔ ایمان وی تُوں
میڈا جسم وی تُوں ۔۔۔۔۔ میڈا روح وی تُوں
میڈا قلب وی تُوں ۔۔۔۔۔ جند جان وی تُوں
میڈا قبلہ ۔۔۔۔۔ کعبہ ۔۔۔۔۔ مسجد ۔۔۔۔۔ ممبر
مصحف تے قرآن وی تُوں
میڈے فرض فریضے ۔۔۔۔۔ حج ۔۔۔۔۔ زکاتاں
صوم صلات اذان وی تُوں
میڈی زاہد ۔۔۔۔۔ عبادت ۔۔۔۔۔ طاعت ۔۔۔۔۔ تقویٰ
علم وی تُوں ۔۔۔۔۔ عرفان وی تُوں
میڈا ذکر وی تُوں ۔۔۔۔۔ میڈا فکر وی تُوں
میڈا ذوق وی تُوں ۔۔۔۔۔ وجدان وی تُوں
میڈا سانول ۔۔۔۔۔ مٹھڑا ۔۔۔۔۔ شام سلوُنا
من موہن جانان وی تُوں
میڈا مرشد ۔۔۔۔۔ ہادی ۔۔۔۔۔ پیر طریقت
شیخ حقائق دان وی تُوں
میڈا آس ۔۔۔۔۔ اُمید تے کھٹیا وٹّیا
تکیہ مان تران وی تُوں
میڈا دھرم وی تُوں ۔۔۔۔۔ میڈا بھرم وی تُوں
میڈا شرم وی تُوں ۔۔۔۔۔ میڈا شان وی تُوں
میڈا دکھ سکھ ۔۔۔۔۔ روون ۔۔۔۔۔ کھلن وی تُوں
میڈا درد وی تُوں ۔۔۔۔۔ درمان وی تُوں
میڈا خوشیاں دا اسباب وی تُوں
میڈے سُولاں دا سامان وی تُوں
میڈا حسن تے بھاگ ۔۔۔۔۔ سہاگ وی تُوں
میڈا بخت تے نام نشان وی تُوں
میڈا دیکھن بھالن ۔۔۔۔۔ جاچن جُوچن
سمجھن جان سنجان وی تُوں
میڈے ٹھڈرے ساہ تے ۔۔۔۔۔ مونجھ منجھاری
ہنجواں دا طوفان وی تُوں
میڈے تلک تلولے ۔۔۔۔۔ سیندھاں مانگاں
ناز نہورے تان وی تُوں
مینڈی مہندی ۔۔۔۔۔ کجّل ۔۔۔۔۔ مُساگ وی تُوں
میڈی سرخی ۔۔۔۔۔ بیڑا ۔۔۔۔۔ پان وی تُوں
میڈی وحشت ۔۔۔۔۔ جوش ۔۔۔۔۔ جنون وی تُوں
میڈا گریہ آہ فغان وی تُوں
میڈا شعر عروض قوافی تُوں
میڈا بحر وی تُوں اوزان وی تُوں
میڈا اوّل آخر ۔۔۔۔۔ اندر باہر
ظاہر تے ۔۔۔۔۔ پنہان وی تُوں
میڈا فردا تے دیروز وی تُوں
الیوم وی تُوں الآن وی تُوں
میڈا بادل برکھا ۔۔۔۔۔ کھمنیاں ۔۔۔۔۔ گاجاں
بارش تے ۔۔۔۔۔ باران وی تُوں
میڈا مُلک ملہیر تے ۔۔۔۔۔ مارُو تھلڑا
روہی ۔۔۔۔۔ چولستان وی تُوں
جے یار فرید قبول کرے
سرکار وی تُوں ۔۔۔۔۔ سُلطان وی تُوں
نہ تاں کہتر ۔۔۔۔۔ کمتر ۔۔۔۔۔ احقر ۔۔۔۔۔ ادنیٰ
لاشئے ۔۔۔۔۔ لا امکان وی تُوں
(خواجہ غلام فرید)

Quiz On Khawaja Ghulam Farid

خواجہ غلام فرید 1
Advertisement

Advertisement

Advertisement