Advertisement

آبِ زم زم پر ایک مضمون

خانہ کعبہ سے 20 میٹر کی دوری پر آبِ زم زم کا کنواں پایا جاتا ہے۔ روے زمین پر اسے پانی کا سب سے پرانا چشمہ قرار دیا جاتا ہے۔ یہ پانی 5 ہزار سال سے بھی زیادہ پرانا ہے۔ "تاریخ الحیات” میں بیان کیا جاتا ہے کہ آبِ زم زم کا چشمہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کے بیٹے حضرت اسمٰعیل علیہ السلام کے ایڑیاں رگڑنے سے پھوٹا۔

Advertisement

جب حضرت ابراہیم اور حضرت اسمٰعیل علیہ السلام نے اللہ کے گھر یعنی مکہ کی بنیاد رکھی تو اس وقت یہ پانی کا چشمہ وہاں پر موجود تھا۔ زم زم کا چشمہ اس وقت پھوٹا جب حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اللہ کے حکم سے اپنی بیوی اور بیٹے کو مکہ مکرمہ کی چٹان والے میدان میں چھوڑنے کا حکم دیا۔ حضرت ابراہیم علیہ السلام کی بیوی حضرت ہاجرا کے پاس جب کھانے پینے کا سامان ختم ہوگیا تو پانی کی تلاش میں پہاڑیوں کے بیچ میں انہوں نے چکر لگانا شروع کر دیا۔

Advertisement

اس دوران جبرئیل علیہ السلام تشریف لائے اور اللہ کے حکم سے حضرت اسمٰعیل علیہ السلام کی ایڑیوں کے نیچے سے پانی کا ایک چشمہ جاری کر دیا۔ یہ دیکھ کر حضرت ہاجرا خوش ہوئیں اور اس چشمہ سے پانی لے کر اپنے بیٹے حضرت اسمٰعیل کو پلایا اور خود بھی اس پانی کو پی کر پیاس بجھائی۔

Advertisement

حدیث شریف میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ اللہ نے حضرت ابراہیم علیہ السلام اور ان کے بیٹے حضرت اسمٰعیل علیہ السلام پر ایسی رحمت نازل کی ہے کہ اگر ان کو اس چٹانی جگہ پر کچھ دیر اور چھوڑ دیا جاتا تو انکی ایڑیوں کے نیچے سے ایک بہت ہی بڑا چشمہ نکلتا اور وہاں پر ایک بہت بڑا دریا بہنے لگتا۔

حضرت ابراہیم اور حضرت اسمٰعیل علیہ السلام کی جب مکہ مکرمہ میں آمد ہوئی تو یہ برکتوں کی سرزمین بن گئی۔ جب حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اللہ کے سب سے پہلے گھر کی تعمیر کی تو اس کی اہمیت بہت زیادہ بڑھ گئی اور مکہ مکرمہ عرب کا تجارتی مرکز بن گیا۔

Advertisement

وقت کے ساتھ کچھ سال کے لیے زم زم کا پانی سوکھ گیا تھا۔ حضور کے دادا حضرت عبدالمطلب نے خواب دیکھا کہ اس کو کوئیں کو دوبارہ کھودا جائے اور جب اس کنویں کو دوبارہ کھودا گیا تو اس کوئیں سے پھر سے پانی نکلنے لگا اور آج تک پانی کا چشمہ جاری ہے۔

حج اور عمره کے لیے آنے والے لوگ ہر روز اس پانی سے استفادہ کرتے ہیں۔ زم زم کے کوئیں کو محفوظ رکھنے کے لیے اس کے اردگرد مضبوط امارت بنائی گئی ہے۔

Advertisement

زم زم پینے کے فائدے

  • زم زم پینے والا شخص جو خواہش دل میں لے کر زم زم پیتا ہے اللہ اس کی خواہش پوری کرتا ہے۔
  • زم زم پینے کے لیے ہی نہیں بلکہ کھانے کے کام بھی آتا ہے اور ہر بیماری سے شفا دیتا ہے۔ ایک شخص بہت زیادہ کمزور تھا۔ اسے ایک شخص نے کہا زم زم پیا کرو اور جب چند ہفتوں بعد وہ لوٹا تو بالکل تندرست ہوگیا۔ پوچھا کیا کھایا ہے وہ بولا زمزم پیا ہے۔
  • حضور صلی اللہ علیہ وسلم زمزم کو بیمار کو پلانے اور اس کے اوپر چھڑکنے کے لئے کہتے تھے جس سے بیمار کو شفاء مل جائے۔
  • زمزم پانی سے ہمارے جسم کے اندر کے حصے تندرست رہتے ہیں اور صحت میں اضافہ ہوتا ہے۔
  • زمزم میں کیلشیم اور وٹامن بہت ہی بھاری مقدار میں پایا جاتا ہے۔
  • زمزم پانی سے دماغ اور آنکھیں دونوں تروتازہ رہتے ہیں۔
Advertisement

Advertisement

Advertisement