Advertisement

جمہوریت پر ایک مضمون

ایک جمہوری قوم ایسی قوم ہوتی ہے جہاں لوگ اپنی حکومت منتخب کرنے کے لیے اپنے حق کا استعمال کرتے ہیں۔ جمہوریت کو بعض اوقات “اکثریت کی حکمرانی” کہا جاتا ہے۔ دنیا بھر کے ممالک میں بہت سی جمہوری حکومتیں ہیں لیکن ہندوستان اپنی خصوصیات کی وجہ سے دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے نام سے جانا جاتا ہے۔

ہندوستان میں جمہوریت کی تاریخ

مغلوں سے لے کر موریوں تک ہندوستان پر بہت سے حکمرانوں کا راج تھا۔ لوگوں پر حکومت کرنے کا ان کا ہر ایک کا اپنا الگ انداز تھا۔ (1947) میں برطانوی نوآبادیاتی حکومت سے آزادی حاصل کرنے کے بعد ہندوستان ایک جمہوری ملک بن گیا۔ اس وقت ہندوستان کے لوگوں کو جنھوں نے انگریزوں کے ہاتھوں بہت سارے ظلم برداشت کیے تھے اور آزادی کے بعد پہلی بار ووٹ ڈالنے اور اپنی حکومت منتخب کرنے کا موقع ملا۔

Advertisement

ہندوستان کے جمہوری اصول

سوویرین (Sovereign) سے مراد وہ ہستی ہے جو کسی بھی غیرملکی طاقت کے کنٹرول سے آزاد ہو۔ ہندوستان کے لوگ اپنے وزرا کے انتخاب کے لئے عالمی طاقت کا استعمال کرتے ہیں۔

Advertisement

سوشلسٹ (Socialist)

سماج وادی کا مطلب ہندوستان کے تمام لوگوں کو ذات پات ، رنگ ، نسل ، صنف اور مذہب کو نظر انداز کرکے معاشرتی اور معاشی مساوات فراہم کرنا ہے۔

Advertisement

سیکولرازم (Secularism)

سیکولرزم کا مطلب ہے کسی کی پسند کے کسی بھی مذہب کی پیروی کرنے کی آزادی۔ ہمارے ملک میں کوئی سرکاری مذہب نہیں ہے۔

جمہوری (Democratic)

جمہوری کا مطلب یہ ہے کہ حکومتِ ہند اپنے لوگوں کے ذریعہ منتخب ہوتی ہے۔ تمام ہندوستانی لوگوں کو بلا تفریق ووٹ ڈالنے کا حق دیا گیا ہے تاکہ وہ اپنی پسند کی حکومت کا انتخاب کرسکیں۔

Advertisement

جمہوریہ

ملک کا سربراہ موروثی بادشاہ یا ملکہ نہیں ہوتا ہے۔ وہ لوک سبھا اور راجیہ سبھا کے ذریعہ منتخب ہوتا ہے جہاں نمائندوں کا انتخاب عوام خود کرتی ہے۔

ہندوستان میں جمہوریت کا ایکشن

18 سال سے زیادہ عمر کے ہندوستان کے ہر شخص کو ووٹ ڈالنے کا حق حاصل ہے۔ ہندوستان کا آئین کسی کی ذات ، رنگ ، مسلک ، جنس ، مذہب یا تعلیم کی بنیاد پر کسی سے امتیازی سلوک نہیں کرتا۔

Advertisement

بہت ساری پارٹیاں ہندوستان میں قومی سطح پر انتخابات لڑتی ہیں جن میں کچھ مرکزی جماعتیں ہیں۔ انڈین نیشنل کانگریس (کانگریس) ، بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) ، ہندوستان کی کمیونسٹ پارٹی (سی پی آئی) ، کمیونسٹ پارٹی آف انڈیا- مارکسسٹ (سی پی آئی-ایم) ، نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) ، آل انڈیا ترنمول کانگریس (ٹی ایم سی) اور بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی)۔ ان کے علاوہ متعدد علاقائی پارٹیاں بھی ہیں جو ریاستی انتخابات کے لئے انتخاب لڑتی ہیں۔ انتخابات وقتاً فوقتاً ہوتے ہیں اور لوگ اپنے نمائندوں کا انتخاب کرنے کے لئے اپنے حق کا استعمال کرتے ہیں۔ حکومت زیادہ سے زیادہ لوگوں کو اچھی حکمرانی کے انتخاب کے لیے ووٹ کے ذریعے اپنے حق رائے دہی کے حق کے استعمال کے لئے مستقل کوششیں کر رہی ہے۔

ہندوستان میں جمہوریت کا مقصد نہ صرف لوگوں کو ووٹ کا حق دینا ہے بلکہ زندگی کے ہر شعبے میں مساوات کو یقینی بنانا ہے۔

Advertisement

ہندوستان میں جمہوریت کے کام میں رکاوٹیں

اگرچہ انتخابات صحیح وقت پر ہو رہے ہیں اور ہندوستان میں جمہوریت کے تصور کو ایک منظم نقطۂ نظر سے پیروی کیا جاتا ہے لیکن ملک میں جمہوریت کے ہموار عمل میں بہت سی رکاوٹیں اب بھی موجود ہیں۔ اس میں ناخواندگی ، صنفی امتیاز ، غربت ، ثقافتی عدم مساوات ، سیاسی اثر و رسوخ ، ذات پات اور فرقہ واریت شامل ہیں۔ یہ تمام عوامل ہندوستان میں جمہوریت کو بری طرح متاثر کرتی ہیں۔

نتیجہ

ہندوستان کی جمہوریت کو پوری دنیا میں سراہا جارہا ہے ، لیکن اسے ابھی بہت طویل سفر طے کرنا ہے۔ ناخواندگی ، غربت ، صنفی امتیاز اور فرقہ واریت جیسے عوامل جو ہندوستان میں جمہوریت کے کام کو متاثر کرتے ہیں ان کو ختم کرنے کی ضرورت ہے تاکہ ملک کے لوگ صحیح معنوں میں جمہوریت سے لطف اندوز ہوسکیں۔

Advertisement
Advertisement